Teachers Poetry Urdu | Happy Teachers Day Quotes & Poetry

Poetry on Teachers in Urdu

میرے استاد

قید عمر رواں کی سلاخوں کو تھامے ہوئے 
جب کبھی جھانکتا ہوں میں ماضی کی کھڑکی سے اب

یاد آتی ہیں مجھ کو وہ پگڈنڈیاں 
جن پہ بھاگا تھا بچپن کھلے پاؤں

دھوپ سے کھلتی برگدی چھاؤں 
اور مہکتی چہکتی ہوئی دھول

میری انگلی پکڑ کر 
مجھے لے کے جاتی تھی اسکول

وہ ادارہ جہاں شرط تھی علم و فن کی تراش 
ایسا مندر جہاں ہو گئیں سب بری عادتیں پاش پاش

درس دیتے ہوئے کچھ خدا 
جن سے حاصل ہوا مجھ کو انسانیت کا سبق

جن کے سایہ میں آیا مجھے زندگی کا شعور 
جن کے لفظوں کا نور آج بھی ہے میری ظلمت روز و شب کا اجالا بحق

جن کی باتیں مصیبت میں رہ رہ کے آتی ہیں یاد میرے استاد

عباس قمر

————————-

Poetry On Teachers Day 

تمھاری باتوں کی بھینی خوشبو

تمھاری باتوں کی بھینی خوشبو 
ہماری سوچوں میں بس گئی ہے

تمھارے نقش قدم سے ہم نے 
ہزاروں اُجلے خیال پائے

تمھارا دستِ شفیق تھاما
تمھاری اُنگلی پکڑ کے خود کو

سنبھال پائے
تمھاری آنکھوں کی روشنی سے

ہمارے دِل بھی ہوئے منور
تمھارے لفظوں کے سچے موتی

ہمارے دامن میں بھر گئے ہیں
تمھارے دم سے یہ کھوٹے سکے

چمک گئے ہیں
تمھارے دم سے یہ بگڑے نقشے

سنور گئے ہیں
تمھارے دم سے

یقیں کی دولت ہمیں ملی ہے
تمھارے دم سے

ہمارے خوابوں میں جان آئی
تمھاری معصوم سی دعائیں

ہماری راہ کا ہیں نور اب تک
تمھیں خدا نے کمال بخشا

تمھاری محنت عظیم تر ہے
تمھارا رُتبہ خُدا ہی جانے

تمھی سے سیکھا سوال کرنا
تمھارے بچے یہ پوچھتے ہیں

کہاں سے لائیں ہمیں بتاؤ 
وہ خواب لمحے گلاب یادیں

کہاں سے لائیں ہمیں بتاؤ 
وہ پھول باتیں عذاب یادیں

عابی مکھنوی

————————-

Shayari on Teachers Day in Urdu

استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

کتنی محبتوں سے پہلا سبق پڑھایا

میں کچھ نہ جانتا تھا، سب کچھ مجھے سکھایا

اَن پڑھ تھا اور جاہل ، قابل مجھے بنایا
دنیا ئے علم و دانش کا راستہ دکھایا
اے دوستو ملیں تو بس ایک پیام کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

مجھ کو خبر نہیں تھی
آیاہوں میں کہاں سے
ماں باپ اس زمیں پر لائے تھے آسمان سے
پہنچا دیافلک تک استاد نے یہاں سے
واقف نہ تھا ذرا بھی، اتنے بڑے جہاں سے
مجھ کو دلایا کتنا اچھا مقام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

جینے کا فن سکھایا،مرنے کا
بانکپن بھی
عزت کے گر بتائے ، رسوائی کے چلن بھی
کانٹے بھی راہ میں ہیں ،پھولوں کی انجمن بھی
تم فخرِ قوم بننا اور نازشِ وطن بھی
ہے یاد مجھ کو ان کا ایک اک کلام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

جو عِلم کا عَلم ہے، استاد
کی عطا ہے
ہاتھوں میں جو قلم ہے، استاد کی عطا ہے
جو فکر تازہ دم ہے، استاد کی عطا ہے
جو کچھ کیا رقم ہے، استاد کی عطا ہے
اُن کی عطا سے چمکا، حاطبؔ کا نام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

احمد حاطب صدیقی 

————————-

Poetry For Teachers in Urdu

ہمارے استاد

کتنی محنت سے پڑھاتے ہیں
ہمارے استاد 
ہم کو ہر علم سکھاتے ہیں ہمارے استاد

توڑ دیتے ہیں جہالت کے
اندھیروں کا طلسم 
علم کی شمع جلاتے ہیں ہمارے استاد

منزل علم کے ہم لوگ مسافر
ہیں مگر 
راستہ ہم کو دکھاتے ہیں ہمارے استاد

زندگی نام ہے کانٹوں کے سفر
کا لیکن 
راہ میں پھول بچھاتے ہیں ہمارے استاد

دل میں ہر لمحہ ترقی کی دعا
کرتے ہیں 
ہم کو آگے ہی بڑھاتے ہیں ہمارے استاد

سب کو تہذیب و تمدن کا سبق
دیتے ہیں 
ہم کو انسان بناتے ہیں ہمارے استاد

ہم کو دیتے ہیں بہر لمحہ
پیام تعلیم 
اچھی باتیں ہی بتاتے ہیں ہمارے استاد

خود تو رہتے ہیں بہت تنگ و
پریشان مگر 
دولت علم لٹاتے ہیں ہمارے استاد

اہل بینش کو ہے طوفان حوادث
مکتب 
لطمۂ موج کم از سیلئ استاد نہیں

کیف احمد صدیقی

————————-

3 Comments

  1. cbd

Add Comment

x