Teacher’s Poetry – Teacher’s Day Shayari

Poems are one of the best ways to express your emotions. Topic Teacher’s Poetry of appreciation, gratitude, and admiration. On this teachers day, honor your teachers with the poems. Read, share and connect with the best poems for teachers from students. 

Teacher's Poetry
Best Teacher’s Poetry

Text Format | Shayari on Teacher’s Day

مدتوں تک جو پڑھایا کیا استاد مجھے
عشق میں بھول گیا کچھ نہ رہا یاد مجھے

کیا میں دیوانہ ہوں یارب کہ سر راہ گزر 
دور سے گھورنے لگتے ہیں پری زاد مجھے

اب ہے آواز کی وہ شان نہ بازو کی اڑان
اور صیاد کیے دیتا ہے آزاد مجھے

داد خواہی کے لیے اور تو ساماں نہ ملا
نالہ و آہ پہ رکھنی پڑی بنیاد مجھے

میرے شعروں پہ وہ شرمائے تو احباب ہنسے 

اے حفیظؔ آج غزل کی یہ ملی داد مجھے

 حفیظ جالندھری


Poetry on Teacher in Urdu
Poetry on Teacher’s in Urdu

Text Format | Poetry on Teacher’s in Urdu

سنگ‌ بے قیمت تراشا اور جوہر کر دیا 
شمع علم و آگہی سے دل منور کر دیا

فکر و فن تہذیب و حکمت دی شعور و آگہی 
گم‌ شدان راہ کو گویا کہ رہبر کر دیا

چشم فیض اور دست وہ پارس صفت جب چھو گئے 
مجھ کو مٹی سے اٹھایا اور فلک پر کر دیا

دے جزا اللہ تو اس باغبان علم کو 
جس نے غنچوں کو کھلایا اور گل تر کر دیا

خاکۂ تصویر تھا میں خالی از رنگ حیات 
یوں سجایا آپ نے مجھ کو کہ قیصرؔ کر دیا

قیصر حیات

————————-

Read More

Poetry on Teacher’s in Urdu

میرے استاد

قید عمر رواں کی سلاخوں کو تھامے ہوئے 
جب کبھی جھانکتا ہوں میں ماضی کی کھڑکی سے اب

یاد آتی ہیں مجھ کو وہ پگڈنڈیاں 
جن پہ بھاگا تھا بچپن کھلے پاؤں

دھوپ سے کھلتی برگدی چھاؤں 
اور مہکتی چہکتی ہوئی دھول

میری انگلی پکڑ کر 
مجھے لے کے جاتی تھی اسکول

وہ ادارہ جہاں شرط تھی علم و فن کی تراش 
ایسا مندر جہاں ہو گئیں سب بری عادتیں پاش پاش

درس دیتے ہوئے کچھ خدا 
جن سے حاصل ہوا مجھ کو انسانیت کا سبق

جن کے سایہ میں آیا مجھے زندگی کا شعور 
جن کے لفظوں کا نور آج بھی ہے میری ظلمت روز و شب کا اجالا بحق

جن کی باتیں مصیبت میں رہ رہ کے آتی ہیں یاد میرے استاد

عباس قمر

————————-

Poetry On Teacher’s Day in Urdu

تمھاری باتوں کی بھینی خوشبو

تمھاری باتوں کی بھینی خوشبو 
ہماری سوچوں میں بس گئی ہے

تمھارے نقش قدم سے ہم نے 
ہزاروں اُجلے خیال پائے

تمھارا دستِ شفیق تھاما
تمھاری اُنگلی پکڑ کے خود کو

سنبھال پائے
تمھاری آنکھوں کی روشنی سے

ہمارے دِل بھی ہوئے منور
تمھارے لفظوں کے سچے موتی

ہمارے دامن میں بھر گئے ہیں
تمھارے دم سے یہ کھوٹے سکے

چمک گئے ہیں
تمھارے دم سے یہ بگڑے نقشے

سنور گئے ہیں
تمھارے دم سے

یقیں کی دولت ہمیں ملی ہے
تمھارے دم سے

ہمارے خوابوں میں جان آئی
تمھاری معصوم سی دعائیں

ہماری راہ کا ہیں نور اب تک
تمھیں خدا نے کمال بخشا

تمھاری محنت عظیم تر ہے
تمھارا رُتبہ خُدا ہی جانے

تمھی سے سیکھا سوال کرنا
تمھارے بچے یہ پوچھتے ہیں

کہاں سے لائیں ہمیں بتاؤ 
وہ خواب لمحے گلاب یادیں

کہاں سے لائیں ہمیں بتاؤ 
وہ پھول باتیں عذاب یادیں

عابی مکھنوی

————————-

Shayari on Teacher’s Day in Urdu

استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

کتنی محبتوں سے پہلا سبق پڑھایا

میں کچھ نہ جانتا تھا، سب کچھ مجھے سکھایا

اَن پڑھ تھا اور جاہل ، قابل مجھے بنایا
دنیا ئے علم و دانش کا راستہ دکھایا
اے دوستو ملیں تو بس ایک پیام کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

مجھ کو خبر نہیں تھی
آیاہوں میں کہاں سے
ماں باپ اس زمیں پر لائے تھے آسمان سے
پہنچا دیافلک تک استاد نے یہاں سے
واقف نہ تھا ذرا بھی، اتنے بڑے جہاں سے
مجھ کو دلایا کتنا اچھا مقام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

جینے کا فن سکھایا،مرنے کا
بانکپن بھی
عزت کے گر بتائے ، رسوائی کے چلن بھی
کانٹے بھی راہ میں ہیں ،پھولوں کی انجمن بھی
تم فخرِ قوم بننا اور نازشِ وطن بھی
ہے یاد مجھ کو ان کا ایک اک کلام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

جو عِلم کا عَلم ہے، استاد
کی عطا ہے
ہاتھوں میں جو قلم ہے، استاد کی عطا ہے
جو فکر تازہ دم ہے، استاد کی عطا ہے
جو کچھ کیا رقم ہے، استاد کی عطا ہے
اُن کی عطا سے چمکا، حاطبؔ کا نام، کہنا
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

احمد حاطب صدیقی 

————————-

Poetry of Teacher’s in Urdu

ہمارے استاد

کتنی محنت سے پڑھاتے ہیں
ہمارے استاد 
ہم کو ہر علم سکھاتے ہیں ہمارے استاد

توڑ دیتے ہیں جہالت کے
اندھیروں کا طلسم 
علم کی شمع جلاتے ہیں ہمارے استاد

منزل علم کے ہم لوگ مسافر
ہیں مگر 
راستہ ہم کو دکھاتے ہیں ہمارے استاد

زندگی نام ہے کانٹوں کے سفر
کا لیکن 
راہ میں پھول بچھاتے ہیں ہمارے استاد

دل میں ہر لمحہ ترقی کی دعا
کرتے ہیں 
ہم کو آگے ہی بڑھاتے ہیں ہمارے استاد

سب کو تہذیب و تمدن کا سبق
دیتے ہیں 
ہم کو انسان بناتے ہیں ہمارے استاد

ہم کو دیتے ہیں بہر لمحہ
پیام تعلیم 
اچھی باتیں ہی بتاتے ہیں ہمارے استاد

خود تو رہتے ہیں بہت تنگ و
پریشان مگر 
دولت علم لٹاتے ہیں ہمارے استاد

اہل بینش کو ہے طوفان حوادث
مکتب 
لطمۂ موج کم از سیلئ استاد نہیں

کیف احمد صدیقی

————————-

2 Line Shayari on Teacher’s Day

 

اہل بینش کو ہے طوفان حوادث مکتب 
لطمۂ موج کم از سیلئ استاد نہیں

مرزا غالب

————————-

یہ فن عشق ہے آوے اسے طینت میں جس کی ہو 
تو زاہد پیر نابالغ ہے بے تہہ تجھ کو کیا آوے

میر تقی میر

————————-

محروم ہوں میں خدمت استاد سے منیرؔ 
کلکتہ مجھ کو گور سے بھی تنگ ہو گیا

منیرؔ شکوہ آبادی

————————-

ہم پہ لازم ہے کہ ہم لوگ کریں ان کا ادب 
کس محبت سے بڑھاتے ہیں ہمارے استاد

کیف احمد صدیقی

————————-

اب مجھے مانیں نہ مانیں اے حفیظؔ 
مانتے ہیں سب مرے استاد کو

حفیظ جالندھری

————————-

ماں باپ اور استاد سب ہیں خدا کی رحمت 
ہے روک ٹوک ان کی حق میں تمہارے نعمت

الطاف حسین حالی

————————-

وہی شاگرد پھر ہو جاتے ہیں استاد اے جوہرؔ 
جو اپنے جان و دل سے خدمت استاد کرتے ہیں

لالہ مادھو رام جوہر

————————-

شاگرد ہیں ہم میرؔ سے استاد کے راسخؔ 
استادوں کا استاد ہے استاد ہمارا

راسخ عظیم آبادی

————————-

استاد کے احسان کا کر شکر منیرؔ آج 
کی اہل سخن نے تری تعریف بڑی بات

منیرؔ شکوہ آبادی

————————-

کس طرح امانتؔ نہ رہوں غم سے میں دلگیر 
آنکھوں میں پھرا کرتی ہے استاد کی صورت

امانت لکھنوی

————————-

 

5 Replies to “Teacher’s Poetry – Teacher’s Day Shayari

  1. It’s perfect time to make some plans for the future and it
    is time to be happy. I have read this post and if I
    could I want to suggest you some interesting things
    or advice. Maybe you could write next articles referring to
    this article. I wish to read even more things about it!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *