Allama Iqbal Poetry in Urdu, English with Beautiful Images

Read Beautiful Allama Iqbal Poetry in Urdu with Pics, The Topics which covered: Allama Iqbal Poetry for Students, Poetry of Iqbal for Youth in English that’s more famous in Pakistan and all around the World.

Allama Iqbla Poetry For Students

with English Translation

allama iqbal poetry pics

Allama Iqbal Poetry Pics

Iqbal! Yahan Naam Na Le Ilm-e-Khudi Ka
Mozoon Nahin Maktab Ke Liye Aese Maqalat

About the self here have no talk, O bard,
Because with schools such sermons donʹt accord.

allama iqbal students poetry

Allama Iqbla Poetry For Students

Jis Ilm Ki Taseer Se Zan Hoti Hai Na-Zan
Kehte Hain Ussi Ilm Ko Arbab-e-Nazar Mout

The lore that makes a woman lose her rank
Is naught but death in eyes of wise and frank.

—————————–

ترے علم و محبّت کی نہیں ہے انتہا کوئی
نہیں ہے تجھ سے بڑھ کر سازِ فطرت میں نَوا کوئی

Tere Ilm-O-Mohabbat Ki Nahin Hai Intaha Koi
Nahin Hai Tujh Se Barh Kar Saaz-E-Fitrat Mein Nawa Koi

There is no limit to your knowledge and love;
In the instrument of nature there is no sweeter song than you.

—————————–

اور یہ اہلِ کلیسا کا نظامِ تعلیم
ایک سازش ہے فقط دین و مُروّت کے خلاف

Aur Ye Ahle-e-Kalisa Ka Nizam-e-Taleem
Aik Sazish Hai Faqt Deen-o-Murawat Ke Khilaf

The teaching that the English have devised
Gainst faith and ties has great intrigue contrived.

—————————–

اُس جُنوں سے تجھے تعلیم نے بیگانہ کِیا
جو یہ کہتا تھا خرد سے کہ بہانے نہ تراش

Uss Junoon Se Tujhe Taleem Ne Begana Kiya
Jo Ye Kehta Tha Khird Se Ke Bahane Na Tarash.

Learning estranged you from such exaltation
As would not let man’s mind desert its station.

—————————–

Allama Iqbal Poetry for Youth

allama iqbal youth poetry

Allama Iqbal Poetry for Youth

نہ تو زمیں کے لیے ہے نہ آسماں کے لیے
جہاں ہے تیرے لیے ، تو نہیں جہاں کے لیے

Na tu zameen ke ley hai na aasman ke ley,
Jahan hai tere ley tu nahi jahan ke ley.

—————————–

livelihood poetry

Livelihood Poetry of Allama Iqbal

اے طائر لاہوتی! اس رزق سے موت اچھی
جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی

Ae tahir lahoti! Us rizaq se maut achi,
Jis rizaq se aati ho perwaz main kutahi.

—————————–

students poetry urdu

Allama Iqbal Poetry in Urdu

نہیں ہے ناامید اقبال اپنی کشت ویراں سے
ذرا نم ہو تو یہ مٹی بہت زرخیز ہے ساقی

Nahi hai na umeed Iqbal apni kashte veran se,
Zara nam ho tu ye mati bari zarkhez hai saqi.

—————————–

youth poetry

Youth Poetry of Allama Iqbal

یوں تو سید بھی ہو، مرزا بھی ہو، افغان بھی ہو
تم سبھی کچھ ہو، بتاؤ مسلمان بھی ہو

Youn tu Syed bhi ho, merza bhi ho, afghan bhi ho,
Tum sabhi kuch ho, btao musliman bhi ho.

—————————–

ibadat shayair urdu

Sajda Poetry of Allama Iqbal

یہ ایک سجدہ جسے تو گراں سمجھتا ہے
ہزار سجدے سے دیتا ہے آدمی کو نجات

Ye aik sajida jise tu giran samjhta ha,
Hazar sajdon se deta hai aadmi ko nijat.

—————————–

silent poetry urdu

Silent Tongue Poetry of Iqbal

یہ دستور زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری

Ye dastoor zuban bandi ha kesa teri mehfal main,
Yahan tu bat kerne ko tarsti ha zuban meri.

—————————–

Poetry for Labors

Poetry for Labors of Iqbal

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی
اس کھیت کے ہر خوشۂ گندم کو جلا دو

Jis khet se dehkan ko muyasar nahi rozi,
Us khet ke her gusha-e-gandam ko jala do.

—————————–

خدا تجھے کسی طوفاں سے آشنا کر دے 
کہ تیرے بحر کی موجوں میں اضطراب نہیں

Khuda tujhe kisi tufan se aashna ker de,
Kh tere beher ki mujon mian izterab nahi.

تجھے کتاب سے ممکن نہیں فراغ کہ تو 
کتاب خواں ہے مگر صاحب کتاب نہیں

Tujhe kitab se mumkin nahi farag kh tu,
Kitab khawan ha magar Sahib-e-Kitab nahi.

—————————–

 

بندہ و صاحب و محتاج و غني ایک ہوئے
تیری سرکار میں پہنچے تو سبھی ایک ہوئے

Banda-o-muhtaj sabhi aik hoe,
Teri sarkar main ponchy to sabhi aik hoe.

—————————–

 

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے
پر نہیں’ طاقت پرواز مگر رکھتی ہے

Dil se jo bat nikalti ha asar rakhti ha,
Per nahi, Taqt-e-perwaz magar rakhti ha.

قدسی الاصل ہے’ رفعت پہ نظر رکھتی ہے
خاک سے اٹھتی ہے ، گردوں پہ گزر رکھتی ہے

Qudsi alhasil hai, rifat pe nazar rakhti hai,
Kahak se uthti hai, gardon pe guzar rakhti hai.

—————————–

کوئی قابل ہو تو ہم شان کئی دیتے ہیں
ڈھونڈنے والوں کو دنیا بھی نئی دیتے ہیں

Koi qabil ho tu hum sahan kain dete hain,
Dhundhne walon ko duniya bhi nai dete hai.

—————————–

قوم مذہب سے ہے’ مذہب جو نہیں’ تم بھی نہیں
جذب باہم جو نہیں’ محفل انجم بھی نہیں

Qaum mazhab se hai, mazhab jo nahi tu kuch bhi nahi,
Jazba baham jo nahi, mehfil anjom bhi nahi.

—————————–

فرقہ بندی ہے کہیں اور کہیں ذاتیں ہیں
کیا زمانے میں پنپنے کی یہي باتیں ہیں

Firqa bandi hain kahin aur kahin zatain hain,
Kia zamane main panpane ke yehi batain hain.

—————————–

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن ، اپنا تو بن

Apne man men dub ker pa ja surage zindagi,
Tu agar mera nahi banta na ban, apna tu ban.

—————————–

ہزاروں سال نرگس اپنی بینوری پہ روتی ہے
بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دید اور پیدا

Hazaron saal nargas apni benoori pe ruti hai,
Bari mushki se hota hai chaman main deda-e-war peda.

—————————–

خردمندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے
کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں ، میری انتہا کیا ہے

Khirad mandon se kia puchon kh meri ibtida kia ha,
Kh main is fikar main rehta hon, meri inteha kia ha.

—————————–

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے ، بتا تیری رضا کیا ہے

Khudi ko ker buland itna kh her taqdeer se pehly,
Khuda bande se khud puchy, bata teri raza kia hai.

—————————–

ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں
ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں

Sitaron se aage jahan aur bhi hain,
Abhi ishaq ke imtehan aur bhi hain.

تہی ، زندگی سے نہیں یہ فضائیں
یہاں سینکڑوں کارواں اور بھی ہیں

Tehi zindagi se nahi ye fizain,
Yahan sekron karwan aur bhi hain.

تو شاہیں ہے ، پرواز ہے کام تیرا
ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں

Tu shaheen hai, perwaz hai kam tera,
Tere samne aasman aur bhi hain.

—————————–

فطرت نے نہ بخشا مجھے اندیشہ چالاک
رکھتی ہے مگر طاقت پرواز مری خاک

Fitrat ne na bakhsha mujhe andesha-e-chalak,
Rakhti ha magar takat-e-parwaz meri khak.

—————————–

ترے شیشے میں مئے باقی نہیں ہے
بتا کیا تو مرا ساقی نہیں ہے

Tere sheshe main meh baki nahi hai,
Bata kia tu mera saki nahi ha.

سمندر سے ملے پیاسے کو شبنم
بخیلی ہے یہ رزاقی نہیں ہے

Samander se mile piyase ko shabnam,
Bakile ha ye razaqi nahi ha.

—————————–

سوداگری نہیں ، یہ عبادت خدا کی ہے
اے بے خبر! جزا کی تمنا بھی چھوڑ دے

Soda giri nahi, ye ibadat khuda ki hai,
Ae be khabar! Jaza ki taman bhi chur de.

—————————–

 دنیا کی محفلوں سے اکتا گیا ہوں یا رب
کیا لطف انجمن کا جب دل ہی بجھ گیا ہو

Dunian ki mehflon se ukta gia hon ya rab,
Kia lutf-e-anjoman se dil hi bhujh gia ho.

—————————–

تمنا درد دل کی ہو تو کر خدمت فقیروں کی
نہیں ملتا یہ گوہر بادشاہوں کے خزینوں میں

Tamana dard-e-dil ki ko tu ker khidmat faqeeron ki,
Nahi milta ye guhar badshhon ke khazeeno mian.

—————————–

Add Comment