Ahmad Nadeem Qasmi Famous Nazm, Ghazal, 2 Lines Poetry

Ahmad Nadeem Qasmi belonged to Awan family, he worked a lot for journalism, literature and poetry and wrote more than 50 books. He had a place of his own in Urdu literature. His national poem ‘Khuda kare meri arz-e-pak par utre, Woh fasal-e-gul jise andesha-e-zawal na ho’ became very famous which is widely read and listened to.

Ghzal

Ahmad Nadeem Qasmi ٖ Famous Poetry

Wo Koi Aur Na Tha, Chand Khusk Patay Thay

وہ کوئی اور نہ تھا چند خشک پتے تھے
شجر سے ٹوٹ کے جو فصل گل پہ روئے تھے

ابھی ابھی تمہیں سوچا تو کچھ نہ یاد آیا
ابھی ابھی تو ہم اک دوسرے سے بچھڑے تھے

تمہارے بعد چمن پر جب اک نظر ڈالی
کلی کلی میں خزاں کے چراغ جلتے تھے

تمام عمر وفا کے گناہ گار رہے
یہ اور بات کہ ہم آدمی تو اچھے تھے

شب خموش کو تنہائی نے زباں دے دی
پہاڑ گونجتے تھے دشت سنسناتے تھے

وہ ایک بار مرے جن کو تھا حیات سے پیار
جو زندگی سے گریزاں تھے روز مرتے تھے

نئے خیال اب آتے ہیں ڈھل کے آہن میں
ہمارے دل میں کبھی کھیت لہلہاتے تھے

یہ ارتقا کا چلن ہے کہ ہر زمانے میں
پرانے لوگ نئے آدمی سے ڈرتے تھے

ندیمؔ جو بھی ملاقات تھی ادھوری تھی
کہ ایک چہرے کے پیچھے ہزار چہرے تھے

Wo Koi Aur Na Tha, Chand Khusk Patay Thay
Shjar Se Toot Ke Jo Fasal-e Gul Pe Roye Thay

Abi Abi Tumhain Socha Tu Kuch Na Yaad Aya
Abi Abi Tu Ham Aik Dosre Se Bichre Thay

Tumhare Baad Chaman Par Jab Ik Nazar Dali
Kali Kali Mai Khazan Ke Chiragh Jalte Thay

Tmam Umar Wafa Ke Gunahgar Rahe
Ye Aur Baat Ke Ham Aadmi Tu Ache Thay

Shab-e Khamosh Ko Tanhai Ne Zuban De Di
Phar Gonjte Thay Dashat Sansnate Thay

Wo Aik Bar Mary Jin Ko Tha Hayat Se Pyar
Jo Zindagi Se Graizan Thay Roz Marte Thay

Naye Khayal Ab Aate Hai Dhal Ke Zahan Mein
Hmare Dil Mai Kabi Khait Lehlhate Thay

Ye Irtiqa Ka Chalan Hai K Har Zmane Mein
Purane Log Naye Admi Se Darte Thay

Nadeem Jo Bi Mulaqat Thi Adhori Thi
K Aik Chehray Ke Peche Hzar Chehray Thay

============

Jab Tera Hukm Mila Tark-e Mohabat Kar Di

جب ترا حکم ملا ترک محبت کر دی
دل مگر اس پہ وہ دھڑکا کہ قیامت کر دی

تجھ سے کس طرح میں اظہار تمنا کرتا
لفظ سوجھا تو معانی نے بغاوت کر دی

میں تو سمجھا تھا کہ لوٹ آتے ہیں جانے والے
تو نے جا کر تو جدائی مری قسمت کر دی

تجھ کو پوجا ہے کہ اصنام پرستی کی ہے
میں نے وحدت کے مفاہیم کی کثرت کر دی

مجھ کو دشمن کے ارادوں پہ بھی پیار آتا ہے
تری الفت نے محبت مری عادت کر دی

پوچھ بیٹھا ہوں میں تجھ سے ترے کوچے کا پتہ
تیرے حالات نے کیسی تری صورت کر دی

کیا ترا جسم ترے حسن کی حدت میں جلا
راکھ کس نے تری سونے کی سی رنگت کر دی

Jab Tera Hukm Mila Tark-e Mohabat Kar Di
Dil Mgar Is Pe Wo Dharka Ke Qyamat Kar Di

Tuj Se Mai Kis Tarah Azhar-e Tmna Karta
Lafz Soje To Maani Ne Bghwat Kar Di

Mai Tu Samjha Tha Ke Lot Aate Hai Jane Wale
Tu Ne ja Kar Tu Judai Meri Qismat Kar Di

Muj Ko Dushman Ke Iradon Pe Bi Pyar Ata Hai
Teri Ulfat Ne Mohabat Meri Aadat Kar Di

Poch Betha Hon Mai Tuj Se Tere Koche Ka Pta
Teri Halat Ne Kesi Teri Soorat Kar Di

============

Zarre Zarre Mai Tera Aks Nazar Aata Hai

ذرے ذرے میں تیرا عکس نظر آتا ہے
رستہ دیکھتے رہنا بھی اب آساں نہ رہا

راتیں روتی ہیں کے وہ چاند نہ ابھرا اب تک
دن بلکتے ہیں کے وہ مہر درخشاں نہ رہا

پردہ ارض و سما کا یہ تکلف کیسا
ان حجابوں میں تو جلوہ تیرا پنہاں نہ رہا

تجھ سے اک آس لگائی تھی پر اے جان ندیم
یہ دیا بھی میرے سینے میں فروزاں نہ رہا

Zarre Zarre Mai Tera Aks Nazar Aata Hai
Rasta Dekhte Rehna Bi Ab Asan Na Rha

Ratain Roti Hain K Wo Chand Na Ubra Ab Tak
Din Bilakte Hain K Wo Mehr Drakhsan Na Rha

Pard-e Arz-o Sama Ka Ye Tkluf Kesa
In Hijabon Mai Tu Jalwa Tera Pinha Na Raha

Tuj Se Ik Aas Lgai Thi Par Ae Jan-e Nadeem
Ye Dia Bi Mere Sene Mai Frozan Na Rha

============

Kaun Kahta Hai Kh Maut Aai To Mar Jaunga

کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مر جاؤں گا
میں تو دریا ہوں سمندر میں اتر جاؤں گا

تیرا در چھوڑ کے میں اور کدھر جاؤں گا
گھر میں گھر جاؤں گا صحرا میں بکھر جاؤں گا

تیرے پہلو سے جو اٹھوں گا تو مشکل یہ ہے
صرف اک شخص کو پاؤں گا جدھر جاؤں گا

اب ترے شہر میں آؤں گا مسافر کی طرح
سایۂ ابر کی مانند گزر جاؤں گا

تیرا پیمان وفا راہ کی دیوار بنا
ورنہ سوچا تھا کہ جب چاہوں گا مر جاؤں گا

چارہ سازوں سے الگ ہے مرا معیار کہ میں
زخم کھاؤں گا تو کچھ اور سنور جاؤں گا

اب تو خورشید کو گزرے ہوئے صدیاں گزریں
اب اسے ڈھونڈنے میں تا بہ سحر جاؤں گا

زندگی شمع کی مانند جلاتا ہوں ندیمؔ
بجھ تو جاؤں گا مگر صبح تو کر جاؤں گا

Kaun kahta hai kh maut aai to mar jaunga
Main to dariya hun samundar mein utar jaunga

Tera dar chhoD ke main aur kidhar jaunga
Ghar mein ghir jaunga sahra mein bikhar jaunga

Tere pahlu se jo uTThunga to mushkil ye hai
Sirf ek shaKHs ko paunga jidhar jaunga

Ab tere shahr mein aaunga musafir ki tarah
Saya-e-abr ki manind guzar jaunga

Tera paiman-e-wafa rah ki diwar bana
Warna socha tha ki jab chahunga mar jaunga

Chaarasazon se alag hai mera mear ki main
ZaKHm khaunga to kuchh aur sanwar jaunga

Ab to KHurshid ko guzre hue sadiyan guzrin
Ab use DhunDne main ta-ba-sahar jaunga

Zindagi shama ki manind jalata hun ‘nadim’
Bujh to jaunga magar subh to kar jaunga

==========

Ret Se But Na Bana Ai Mere Achchhe Fankar

ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار
ایک لمحے کو ٹھہر میں تجھے پتھر لا دوں

میں ترے سامنے انبار لگا دوں لیکن
کون سے رنگ کا پتھر ترے کام آئے گا

سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا
یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیلا پتھر

جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے
کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی

جس پہ حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے
اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیب سفید

اس کے مرمر میں سیہ خون جھلک جاتا ہے
ایک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر

ہاتھ میں تیشۂ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے
جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں

جتنی اقدار ہیں اس دور کی سب پتھر ہیں
سبزہ و گل بھی ہوا اور فضا بھی پتھر

میرا الہام ترا ذہن رسا بھی پتھر
اس زمانے میں تو ہر فن کا نشاں پتھر ہے

ہاتھ پتھر ہیں ترے میری زباں پتھر ہے
ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار

Ret se but na bana ai mere achchhe fankar
Ek lamhe ko Thahar main tujhe patthar la dun

Main tere samne ambar laga dun lekin
Kaun se rang ka patthar tere kaam aaega

Surkh patthar jise dil kahti hai be-dil duniya
Ya wo pathrai hui aankh ka nila patthar

Jis mein sadiyon ke tahayyur ke paDe hon Dore
Kya tujhe ruh ke patthar ki zarurat hogi

Jis pe haq baat bhi patthar ki tarah girti hai
Ek wo patthar hai jo kahlata hai tahzib-e-safed

Us ke marmar mein siyah KHun jhalak jata hai
Ek insaf ka patthar bhi to hota hai magar

Hath mein tesha-e-zar ho to wo hath aata hai
Jitne meyar hain is daur ke sab patthar hain

Jitni aqdar hain is daur ki sab patthar hain
Sabza o gul bhi hawa aur faza bhi patthar

Mera ilham tera zehn-e-rasa bhi patthar
Is zamane mein to har fan ka nishan patthar hai

Hath patthar hain tere meri zaban patthar hai
Ret se but na bana ai mere achchhe fankar

==========

Tujhe Kho Kar Bhi Tujhe Paun Jahan Tak Dekhun

تجھے کھو کر بھی تجھے پاؤں جہاں تک دیکھوں
حسن یزداں سے تجھے حسن بتاں تک دیکھوں

تو نے یوں دیکھا ہے جیسے کبھی دیکھا ہی نہ تھا
میں تو دل میں ترے قدموں کے نشاں تک دیکھوں

صرف اس شوق میں پوچھی ہیں ہزاروں باتیں
میں ترا حسن ترے حسن بیاں تک دیکھوں

میرے ویرانۂ جاں میں تری یادوں کے طفیل
پھول کھلتے نظر آتے ہیں جہاں تک دیکھوں

وقت نے ذہن میں دھندلا دیئے تیرے خد و خال
یوں تو میں ٹوٹتے تاروں کا دھواں تک دیکھوں

دل گیا تھا تو یہ آنکھیں بھی کوئی لے جاتا
میں فقط ایک ہی تصویر کہاں تک دیکھوں

اک حقیقت سہی فردوس میں حوروں کا وجود
حسن انساں سے نمٹ لوں تو وہاں تک دیکھوں

Tujhe kho kar bhi tujhe paun jahan tak dekhun
Husn-e-yazdan se tujhe husn-e-butan tak dekhun

Tu ne yun dekha hai jaise kabhi dekha hi na tha
Main to dil mein tere qadmon ke nishan tak dekhun

Sirf is shauq mein puchhi hain hazaron baaten
Main tera husn tere husn-e-bayan tak dekhun

Mere virana-e-jaan mein teri yaadon ke tufail
Phul khilte nazar aate hain jahan tak dekhun

Waqt ne zehn mein dhundla diye tere KHad-o-KHal
Yun to main TuTte taron ka dhuan tak dekhun

Dil gaya tha to ye aankhen bhi koi le jata
Main faqat ek hi taswir kahan tak dekhun

Ek haqiqat sahi firdaus mein huron ka wajud
Husn-e-insan se nimaT lun to wahan tak dekhun

==========

Ab To Shahron Se Khabar Aati Hai Diwanon Ki

اب تو شہروں سے خبر آتی ہے دیوانوں کی
کوئی پہچان ہی باقی نہیں ویرانوں کی

اپنی پوشاک سے ہشیار کہ خدام قدیم
دھجیاں مانگتے ہیں اپنے گریبانوں کی

صنعتیں پھیلتی جاتی ہیں مگر اس کے ساتھ
سرحدیں ٹوٹتی جاتی ہیں گلستانوں کی

دل میں وہ زخم کھلے ہیں کہ چمن کیا شے ہے
گھر میں بارات سی اتری ہوئی گل دانوں کی

ان کو کیا فکر کہ میں پار لگا یا ڈوبا
بحث کرتے رہے ساحل پہ جو طوفانوں کی

تیری رحمت تو مسلم ہے مگر یہ تو بتا
کون بجلی کو خبر دیتا ہے کاشانوں کی

مقبرے بنتے ہیں زندوں کے مکانوں سے بلند
کس قدر اوج پہ تکریم ہے انسانوں کی

ایک اک یاد کے ہاتھوں پہ چراغوں بھرے طشت
کعبۂ دل کی فضا ہے کہ صنم خانوں کی

Ab to shahron se KHabar aati hai diwanon ki
Koi pahchan hi baqi nahin viranon ki

Apni poshak se hushyar ki KHuddam-e-qadim
Dhajjiyan mangte hain apne garebanon ki

Sanaten phailti jati hain magar is ke sath
Sarhaden TuTti jati hain gulistanon ki

Dil mein wo zaKHm khile hain ki chaman kya shai hai
Ghar mein baraat si utri hui gul-danon ki

Un ko kya fikr ki main par laga ya Duba
Bahs karte rahe sahil pe jo tufanon ki

Teri rahmat to musallam hai magar ye to bata
Kaun bijli ko KHabar deta hai kashanon ki

Maqbare bante hain zindon ke makanon se buland
Kis qadar auj pe takrim hai insanon ki

Ek ek yaad ke hathon pe charaghon bhare tasht
Kaba-e-dil ki faza hai ki sanam-KHanon ki

==========

Nazam

Khuda Kare Meri Arz-e-Pak Par Utre

خدا کرے میری ارض پاک پر اترے
وہ فصلِ گل جسے اندیشہء زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کِھلا رہے برسوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اُگے وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

گھنی گھٹائیں یہاں ایسی بارشیں برسائیں
کہ پتھروں کو بھی روئیدگی محال نہ ہو

خدا کرے نہ کبھی خم سرِ وقارِ وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو

ہر ایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوجِ کمال
کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کے لیے
حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

Khuda kare meri arz-e-pak par utre
Woh fasal-e-gul jise andesha-e-zawal na ho

Yahan jo phool khilay wo khila rahe sahayon
Yahan khazan ko guzarne ki bi majal na ho

Ghani ghtayen yahan aesi barishain barsayain
Ke pathron se bi roedgi mahal na ho

Khuda kare ka na kham ho sar-e waqar-e-watan
Aur is ke husn ko tashwesh-e maho sal na ho

Aik fard ho tahzeeb-0-fan ka ooj kamal
Koi malwal na ho koi khasta hal na ho

Khuda kare ke mere aik bi ham watan ke liye
Hayat jurm na ho zindagi wabal na ho…

============

Tujhe Izhaar-e-Mohabbat Se Agar Nafrat Hai

تجھے اظہار محبت سے اگر نفرت ہے
تو نے ہونٹوں کو لرزنے سے تو روکا ہوتا

بے نیازی سے مگر کانپتی آواز کے ساتھ
تو نے گھبرا کے مرا نام نہ پوچھا ہوتا

تیرے بس میں تھی اگر مشعل جذبات کی لو
تیرے رخسار میں گلزار نہ بھڑکا ہوتا

یوں تو مجھ سے ہوئیں صرف آب و ہوا کی باتیں
اپنے ٹوٹے ہوئے فقروں کو تو پرکھا ہوتا

یوں ہی بے وجہ ٹھٹکنے کی ضرورت کیا تھی
دم رخصت میں اگر یاد نہ آیا ہوتا

تیرا غماز بنا خود ترا انداز خرام
دل نہ سنبھلا تھا تو قدموں کو سنبھالا ہوتا

اپنے بدلے مری تصویر نظر آ جاتی
تو نے اس وقت اگر آئنہ دیکھا ہوتا

حوصلہ تجھ کو نہ تھا مجھ سے جدا ہونے کا
ورنہ کاجل تری آنکھوں میں نہ پھیلا ہوتا

Tujhe izhaar-e-mohabbat se agar nafrat hai
Tu ne honTon ko larazne se to roka hota

Be-niyazi se magar kanpti aawaz ke sath
Tu ne ghabra ke mera nam na puchha hota

Tere bas mein thi agar mashal-e-jazbaat ki lau
Tere ruKHsar mein gulzar na bhaDka hota

Yun to mujh se huin sirf aab-o-hawa ki baaten
Apne TuTe hue fiqron ko to parkha hota

Yunhi be-wajh ThiTakne ki zarurat kya thi
Dam-e-ruKHsat main agar yaad na aaya hota

Tera ghammaz bana KHud tera andaz-e-KHiram
Dil na sambhla tha to qadmon ko sambhaala hota

Apne badle meri taswir nazar aa jati
Tu ne us waqt agar aaina dekha hota

Hausla tujh ko na tha mujh se juda hone ka
Warna kajal teri aankhon mein na phaila hota

==========

Ret Se But Na Bana Ai Mere Achchhe Fankar

ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار
ایک لمحے کو ٹھہر میں تجھے پتھر لا دوں

میں ترے سامنے انبار لگا دوں لیکن
کون سے رنگ کا پتھر ترے کام آئے گا

سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا
یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیلا پتھر

جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے
کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی

جس پہ حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے
اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیب سفید

اس کے مرمر میں سیہ خون جھلک جاتا ہے
ایک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر

ہاتھ میں تیشۂ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے
جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں

جتنی اقدار ہیں اس دور کی سب پتھر ہیں
سبزہ و گل بھی ہوا اور فضا بھی پتھر

میرا الہام ترا ذہن رسا بھی پتھر
اس زمانے میں تو ہر فن کا نشاں پتھر ہے

ہاتھ پتھر ہیں ترے میری زباں پتھر ہے
ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار

Ret se but na bana ai mere achchhe fankar
Ek lamhe ko Thahar main tujhe patthar la dun

Main tere samne ambar laga dun lekin
Kaun se rang ka patthar tere kaam aaega

SurKH patthar jise dil kahti hai be-dil duniya
Ya wo pathrai hui aankh ka nila patthar

Jis mein sadiyon ke tahayyur ke paDe hon Dore
Kya tujhe ruh ke patthar ki zarurat hogi

Jis pe haq baat bhi patthar ki tarah girti hai
Ek wo patthar hai jo kahlata hai tahzib-e-safed

Us ke marmar mein siyah KHun jhalak jata hai
Ek insaf ka patthar bhi to hota hai magar

Hath mein tesha-e-zar ho to wo hath aata hai
Jitne meyar hain is daur ke sab patthar hain

Jitni aqdar hain is daur ki sab patthar hain
Sabza o gul bhi hawa aur faza bhi patthar

Mera ilham tera zehn-e-rasa bhi patthar
Is zamane mein to har fan ka nishan patthar hai

Hath patthar hain tere meri zaban patthar hai
Ret se but na bana ai mere achchhe fankar

==========

2 Lines Selective Poetry

ایک حقیقت سہی فردوس میں حوروں کا وجود
حسنِ انساں سے نمٹ لوں تو وہاں تک دیکھوں

Ik haqeqat sahi firdos main horon ka wajod
Husn-e insaan se nimat lon to wahan tak dekhun

============

اک عمر سے فریب سفر کھا رہے ہیں ہم
معلوم ہی نہیں کدھر جا رہے ہیں ہم

Ik Umer Se Fareb-e Safar Kha Rahay Hain Ham
Ma’aloom Hi Nahi Kidhr Ja Rahe Hain Ham

============

آخر دعا کریں بھی تو کس مدعا كے ساتھ
کیسے زمیں كے بات کہیں آسمان سے ہم

Aakhir Dua Krein Bhi Tu Kis Mudaa Ke Sath
Kese Zamin Ke Baat Kahin Aasman Se Ham

============

فقط اِس شوق میں پوچھی ہے ہزاروں باتیں
میں ترا حسن تیرے حسنِ بیاں تک دیکھوں

Faqat Is Shoq Mein Pochi Hai Hazaron Baatain
Mein Tera Husn Tere Husn-e Bayan Tak Dekhon

============

عجب تضاد میں کاٹا ہے زندگی کا سفر
لبوں پہ پیاس تھی بادل تھے سر پہ چھائے ہوئے

Ajab Tzad Mein Kata Hai Zindagi Ka Safar
Labon Pe Pyas Thi Badal Thay Sir Pe Chaye Hoye

============

Read More: Faiz Ahmad Faiz Poetry

Add Comment