Faiz Ahmed Faiz Best Poetry in Urdu 2 Lines, Ghazals

Faiz Ahmed Faiz is one of the famous and great poets of Pakistan. He was born in Sialkot city of Punjab. His poetry is about love, sadness and revolution. He faced various political difficulties due to his revolutionary poetry. He has a great place in Urdu literature. He associated with the teaching profession. He died in Lahore on the 1984۔ Some of his best poetry has been selected. Enjoy reading

Faiz Ahmed Faiz 2 Lines Poetry

Faiz Ahmed Faiz Poetry in Urdu

Faiz Ahmed Faiz Poetry in Urdu

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہربان
بھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

Aaye toh yun ki jaise humesha the mehrban
Bhule toh yun ki goya kabhi ashna na the.

♥—♥—♥—♥—♥

ہم سہل طلب کون سے فرہاد تھے لیکن
اب شہر میں تیرے کوئی ہم سا بھی کہاں ہے

Hum sahal-talab kaun se farhad the lekin
Ab sheher mein tere koi hum sa bhi kahan hai.

♥—♥—♥—♥—♥

ان میں لہو جلا ہو ہمارا کہ جان و دل
محفل میں کچھ چراغ فروزاں ہوئے تو ہیں

In mein lahu jala ho humara ki jaan o dil
Mehfil mein kuch charaag farozan hue toh hain.

♥—♥—♥—♥—♥

Faiz Ahmed Faiz Poetry on Love

Faiz Ahmed Faiz Poetry on Love

دل سے تو ہر معاملہ کر کے چلے تھے صاف ہم
کہنے میں ان کے سامنے بات بدل بدل گئی

Dil se toh har moamla kar ke chale the saaf hum
Kehne mein un ke samne baat badal badal gayi.

♥—♥—♥—♥—♥

ایک طرز تغافل ہے سو وہ ان کو مبارک
ایک عرض تمنا ہے سو ہم کرتے رہیں گے

Ek tarz-e-taghaful hai so woh un ko mubarak
Ek arz-e-tamanna hai so hum karte rahenge.

♥—♥—♥—♥—♥

دل ناامید تو نہیں نا کام ہی تو ہے
لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

Dil na-ummeed toh nahi nakam hi toh hai
Lambi hai gham ki shaam magar shaam hi toh hai.

♥—♥—♥—♥—♥

Faiz Ahmed Faiz Poetry in Hindi Urdu

Faiz Ahmed Faiz Poetry in Hindi Urdu

ساری دنیا سے دور ہو جائے
جو ذرا تیرے پاس ہو بیٹھے

Saari duniya se door ho jaaye
Jo zara tere paas ho baithe.

♥—♥—♥—♥—♥

جل اٹھے بزم غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے

Jal uthe bazm-e-ghair ke dar-o-bam
Jab bhi hum khanuman-kharab aaye.

♥—♥—♥—♥—♥

ہم پرورش لوح و قلم کرتے رہیں گے
جو دل پہ گزرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

Hum parvarish-e-lauh-o-qalam karte rahenge
Jo dil pe guzarti hai raqam karte rahenge.

♥—♥—♥—♥—♥

ہر صدا پر لگے ہیں کان یہاں
دل سنبھالے رہو زباں کی طرح

Har sada par lage hain kaan yahan
Dil sambhale raho zaban ki tarah.

♥—♥—♥—♥—♥

Faiz Ahmed Faiz Sad Poetry

Faiz Ahmed Faiz Sad Poetry

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے
آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا

Aur kya dekhne ko baaqi hai
Aap se dil laga ke dekh liya.

♥—♥—♥—♥—♥

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے

Aaye kuch abr kuch sharab aaye
Is ke baad aaye jo azaab aaye.

♥—♥—♥—♥—♥

یہ داغ داغ اجالا یہ شب گزیدہ سحر
وہ انتظار تھا جس کا یہ وہ سحر تو نہیں

Ye daagh daagh ujala ye shab-gazida sahar
Woh intezaar tha jis ka ye woh sahar toh nahi.

♥—♥—♥—♥—♥

یہ آرزو بھی بڑی چیز ہے مگر ہم دم
وصال یار فقط آرزو کی بات نہیں

Ye aarzu bhi badi cheez hai magar humdam
Visal-e-yar faqat aarzu ki baat nahi.

♥—♥—♥—♥—♥

Woh aa rhy han woh aaty han

وہ آ رہے ہیں وہ آتے ہیں آ رہے ہوں گے
شب فراق یہ کہہ کر گزار دی ہم نے

Woh aa rahe hain woh aate hain aa rahe honge
Shab-e-firaq ye keh kar guzar di hum ne.

♥—♥—♥—♥—♥

شام فراق اب نہ پوچھ آئی اور آ کے ٹل گئی
دل تھا کہ پھر بہل گیا جاں تھی کہ پھر سنبھل گئی

Sham-e-firaq ab na puch aai aur aa ke tal gayi
Dil tha ki phir bahal gaya jaan thi ki phir sambhal gayi.

♥—♥—♥—♥—♥

کرو کج جبیں پہ سر کفن میرے قاتلوں کو گماں نہ ہو
کہ غرور عشق کا بانکپن پس مرگ ہم نے بھلا دیا

Karo kaj jabin pe sar-e-kafan mere qaatilon ko guman na ho
Ki ghurur-e-ishq ka bankpan pas-e-marg hum ne bhula diya.

♥—♥—♥—♥—♥

Kab thehry ga dard ae dil

کب ٹھہرے گا درد اے دل کب رات بسر ہوگی
سنتے تھے وہ آئیں گے سنتے تھے سحر ہوگی

Kab thahrega dard aye dil kab raat basar hogi
Sunte the woh ayenge sunte the sahar hogi.

♥—♥—♥—♥—♥

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے

Duniya ne teri yaad se begana kar diya
Tujh se bhi dil-fareb hain gham rozgar ke.

♥—♥—♥—♥—♥

گر بازی عشق کی بازی ہے جو چاہو لگا دو ڈر کیسا
گر جیت گئے تو کیا کہنا ہارے بھی تو بازی مات نہیں

Gar baazi ishq ki baazi hai jo chaho laga do dar kaisa
Gar jeet gaye toh kya kehna haare bhi toh baazi maat nahi.

♥—♥—♥—♥—♥

Juda thy ham to muyasar thi qurbatain kitni

جدا تھے ہم تو میسر تھیں قربتیں کتنی
بہم ہوئے تو پڑی ہیں جدائیاں کیا کیا

Juda the hum toh mayassar theen qurbatein kitni
Baham hue toh padi hain judaiyan kya kya.

♥—♥—♥—♥—♥

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

Donon jahan teri mohabbat mein haar ke
Woh ja raha hai koi shab-e-gham guzar ke.

♥—♥—♥—♥—♥

رقص مے تیز کرو ساز کی لے تیز کرو
سوئے مے خانہ سفیران حرم آتے ہیں

Raqs mai tez karo saaz ki lai tez karo
Su-e-mai-khana safiran-e-haram aate hain.

♥—♥—♥—♥—♥

ہم اہل قفس تنہا بھی نہیں ہر روز نسیم صبح وطن
یادوں سے معطر آتی ہے اشکوں سے منور جاتی ہے

Ham ahl-e-qafas tanha bhi nahi har roz nasim-e-subh-e-vatan
Yadon se moattar aati hai ashkon se munavvar jaati hai.

♥—♥—♥—♥—♥

Faiz revolutionary poetry

Faiz revolutionary poetry

فیض تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے

Faiz thi raah sar-ba-sar manzil
Ham jahan pahunche kamyab aaye.

♥—♥—♥—♥—♥

جواں مردی اسی رفعت پہ پہنچی
جہاں سے بزدلی نے جست کی تھی

Javan-mardi usi rifat pe pahunchi
Jahan se buzdili ne jast ki thi.

♥—♥—♥—♥—♥

انہیں کے فیض سے بازار عقل روشن ہے
جو گاہ گاہ جنوں اختیار کرتے رہے

Unhin ke faiz se bazar-e-aql raushan hai
Jo gaah gaah junun ikhtiyar karte rahe.

♥—♥—♥—♥—♥

شیخ صاحب سے رسم و راہ نہ کی
شکر ہے زندگی تباہ نہ کی

Shaikh sahab se rasm-o-rah na ki
Shukr hai zindagi tabah na ki.

♥—♥—♥—♥—♥

Aur bhi dukh hain zamane mein muhabat ke siwa

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

Aur bhi dukh hain zamane mein mohabbat ke siva
Rahatein aur bhi hain vasl ki rahat ke siva.

♥—♥—♥—♥—♥

جو نفس تھا خار گلو بنا جو اٹھے تھے ہاتھ لہو ہوئے
وہ نشاط آہ سحر گئی وہ وقار دست دعا گیا

Jo nafas tha khar-e-gulu bana jo uthe the haath lahu hue
Woh nashat-e-ah-e-sahr gayi woh vaqar-e-dast-e-dua gaya.

♥—♥—♥—♥—♥

چنگ و نے رنگ پہ تھے اپنے لہو کے دم سے
دل نے لے بدلی تو مدھم ہوا ہر ساز کا رنگ

Chang o nai rang pe the apne lahu ke dam se
Dil ne lai badli toh maddham hua har saaz ka rang.

♥—♥—♥—♥—♥

بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے
تم اچھے مسیحا ہو شفا کیوں نہیں دیتے

Be-dam hue bimar dava kyun nahi dete
Tum acche masiha ho shifa kyun nahi dete.

♥—♥—♥—♥—♥

رات یوں دل میں تیری کھوئی ہوئی یاد آئی
جیسے ویرانے میں چپکے سے بہار آ جائے

Raat yun dil mein teri khoi hui yaad aayi
Jaise virane mein chupke se bahar aa jaaye.

♥—♥—♥—♥—♥

نہ جانے کس لیے امیدوار بیٹھا ہوں
ایک ایسی راہ پہ جو تیری رہ گزر بھی نہیں

Na jaane kis liye ummeed-var baitha hoon
Ek aisi raah pe jo teri rahguzar bhi nahi.

♥—♥—♥—♥—♥

پھر نظر میں پھول مہکے دل میں پھر شمعیں جلیں
پھر تصور نے لیا اس بزم میں جانے کا نام

Phir nazar mein phool mahke dil mein phir shumein jalin
Phir tasavvur ne liya us bazm mein jaane ka naam.

♥—♥—♥—♥—♥

تم آئے ہو نہ شب انتظار گزری ہے
تلاش میں ہے سحر بار بار گزری ہے

Tum aaye ho na shab-e-intezaar guzri hai
Talaash mein hai sahar baar baar guzri hai.

♥—♥—♥—♥—♥

مے خانہ سلامت ہے تو ہم سرخیٔ مے سے
تزئین در و بام حرم کرتے رہیں گے

Mai-khana salamat hai toh hum surkhi-e-mai se
Tazin-e-dar-o-bam-e-haram karte rahenge.

♥—♥—♥—♥—♥

ہاں نکتہ ورو لاؤ لب و دل کی گواہی
ہاں نغمہ گرو ساز صدا کیوں نہیں دیتے

Haan nukta-varo laao lab-o-dil ki gawaahi
Haan naghmagaro saz-e-sada kyun nahi dete.

♥—♥—♥—♥—♥

سب قتل ہو کے تیرے مقابل سے آئے ہیں
ہم لوگ سرخ رو ہیں کہ منزل سے آئے ہیں

Sab qatl ho ke tere muqabil se aaye hain
Ham log surkh-ru hain ki manzil se aaye hain.

♥—♥—♥—♥—♥

Faiz Ahmed Faiz Best Ghazals

Aap Ki Yaad Aati Rahi Raat Bhar

”آپ کی یاد آتی رہی رات بھر”
چاندنی دل دکھاتی رہی رات بھر

گاہ جلتی ہوئی گاہ بجھتی ہوئی
شمع غم جھلملاتی رہی رات بھر

کوئی خوشبو بدلتی رہی پیرہن
کوئی تصویر گاتی رہی رات بھر

پھر صبا سایۂ شاخ گل کے تلے
کوئی قصہ سناتی رہی رات بھر

جو نہ آیا اسے کوئی زنجیر در
ہر صدا پر بلاتی رہی رات بھر

ایک امید سے دل بہلتا رہا
اک تمنا ستاتی رہی رات بھر

♥—♥—♥—♥—♥

Dono Jahan Teri Muhabat Mein Haar Ke

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

ویراں ہے مے کدہ خم و ساغر اداس ہیں
تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے

اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن
دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے

بھولے سے مسکرا تو دیے تھے وہ آج فیضؔ
مت پوچھ ولولے دل ناکردہ کار کے

♥—♥—♥—♥—♥

Kab Thery Ga Dard Ae Dil Kab Raat Raat Basar Ho Gai

کب ٹھہرے گا درد اے دل کب رات بسر ہوگی
سنتے تھے وہ آئیں گے سنتے تھے سحر ہوگی

کب جان لہو ہوگی کب اشک گہر ہوگا
کس دن تری شنوائی اے دیدۂ تر ہوگی

کب مہکے گی فصل گل کب بہکے گا مے خانہ
کب صبح سخن ہوگی کب شام نظر ہوگی

واعظ ہے نہ زاہد ہے ناصح ہے نہ قاتل ہے
اب شہر میں یاروں کی کس طرح بسر ہوگی

کب تک ابھی رہ دیکھیں اے قامت جانانہ
کب حشر معین ہے تجھ کو تو خبر ہوگی

Sham Faraq Ab Na Puch Aai Aur Aa Ke Tal Gai

شام فراق اب نہ پوچھ آئی اور آ کے ٹل گئی
دل تھا کہ پھر بہل گیا جاں تھی کہ پھر سنبھل گئی

بزم خیال میں ترے حسن کی شمع جل گئی
درد کا چاند بجھ گیا ہجر کی رات ڈھل گئی

جب تجھے یاد کر لیا صبح مہک مہک اٹھی
جب ترا غم جگا لیا رات مچل مچل گئی

دل سے تو ہر معاملہ کر کے چلے تھے صاف ہم
کہنے میں ان کے سامنے بات بدل بدل گئی

آخر شب کے ہم سفر فیضؔ نہ جانے کیا ہوئے
رہ گئی کس جگہ صبا صبح کدھر نکل گئی

♥—♥—♥—♥—♥

Raaz-e-Ulfat Chupa Ke Dekh Lia

راز الفت چھپا کے دیکھ لیا
دل بہت کچھ جلا کے دیکھ لیا

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے
آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا

وہ مرے ہو کے بھی مرے نہ ہوئے
ان کو اپنا بنا کے دیکھ لیا

آج ان کی نظر میں کچھ ہم نے
سب کی نظریں بچا کے دیکھ لیا

فیضؔ تکمیل غم بھی ہو نہ سکی
عشق کو آزما کے دیکھ لیا

♥—♥—♥—♥—♥

Nahi Nigah Mein Manzil Tu Justajo Hi Sahi

نہیں نگاہ میں منزل تو جستجو ہی سہی
نہیں وصال میسر تو آرزو ہی سہی

نہ تن میں خون فراہم نہ اشک آنکھوں میں
نماز شوق تو واجب ہے بے وضو ہی سہی

کسی طرح تو جمے بزم مے کدے والو
نہیں جو بادہ و ساغر تو ہاؤ ہو ہی سہی

گر انتظار کٹھن ہے تو جب تلک اے دل
کسی کے وعدۂ فردا کی گفتگو ہی سہی

دیار غیر میں محرم اگر نہیں کوئی
تو فیضؔ ذکر وطن اپنے روبرو ہی سہی

♥—♥—♥—♥—♥

Ab Tum Aay Ho Na Shab-e-Intezar Guzri Hai

تم آئے ہو نہ شب انتظار گزری ہے
تلاش میں ہے سحر بار بار گزری ہے

جنوں میں جتنی بھی گزری بکار گزری ہے
اگرچہ دل پہ خرابی ہزار گزری ہے

ہوئی ہے حضرت ناصح سے گفتگو جس شب
وہ شب ضرور سر کوئے یار گزری ہے

وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا
وہ بات ان کو بہت نا گوار گزری ہے

نہ گل کھلے ہیں نہ ان سے ملے نہ مے پی ہے
عجیب رنگ میں اب کے بہار گزری ہے

چمن پہ غارت گلچیں سے جانے کیا گزری
قفس سے آج صبا بے قرار گزری ہے

♥—♥—♥—♥—♥

Ham Per Tumhari Chah Ka Ilzam Hi Tu Hai

ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے
دشنام تو نہیں ہے یہ اکرام ہی تو ہے

کرتے ہیں جس پہ طعن کوئی جرم تو نہیں
شوق فضول و الفت ناکام ہی تو ہے

دل مدعی کے حرف ملامت سے شاد ہے
اے جان جاں یہ حرف ترا نام ہی تو ہے

دل ناامید تو نہیں ناکام ہی تو ہے
لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

دست فلک میں گردش تقدیر تو نہیں
دست فلک میں گردش ایام ہی تو ہے

آخر تو ایک روز کرے گی نظر وفا
وہ یار خوش خصال سر بام ہی تو ہے

بھیگی ہے رات فیضؔ غزل ابتدا کرو
وقت سرود درد کا ہنگام ہی تو ہے

♥—♥—♥—♥—♥

Gulon Mein Rang Bhary Bad-e-Nubahar Chaly

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے

کبھی تو صبح ترے کنج لب سے ہو آغاز
کبھی تو شب سر کاکل سے مشکبار چلے

بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی
تمہارے نام پہ آئیں گے غم گسار چلے

جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شب ہجراں
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے

حضور یار ہوئی دفتر جنوں کی طلب
گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے

مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

♥—♥—♥—♥—♥

Aay Kuch Abr Kuch Sharab Aay

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے

بام مینا سے ماہتاب اترے
دست ساقی میں آفتاب آئے

ہر رگ خوں میں پھر چراغاں ہو
سامنے پھر وہ بے نقاب آئے

عمر کے ہر ورق پہ دل کی نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے

کر رہا تھا غم جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے

نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے

جل اٹھے بزم غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے

اس طرح اپنی خامشی گونجی
گویا ہر سمت سے جواب آئے

فیضؔ تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے

♥—♥—♥—♥—♥

Read More: Zafar Iqbal Best Poetry

Add Comment