Top Zafar Iqbal Poetry in Urdu 2 Lines, Ghazals

Zafar Iqbal is considered poet of new tone and concepts. He was born on September 27, 1933 in Bahawalnagar, Punjab (Pakistan). He was poet, journalist and columnist at a time. He was awarded two times by President of Pakistan, Pride of Performance and Hilal-i-Imtiaz. He is the father of famous media person Aftab Iqbal. He wrote many poems on Love as well as life. He also wrote sad poetry for modern generation. A beautiful collection of poetry of Zafar Iqbal in Urdu is presented to you.

Zafar Iqbal 2 Lines Poetry in Urdu

Zafar Iqbal Poetry Urdu

Zafar Iqbal Poetry in Urdu

خیرات کا مجھے کوئی لالچ نہیں ظفر
میں اس گلی میں صرف صدا کرنے آیا ھوں

Khairaat ka mujhy koi lalach nahi zafar
Main is gali me sirf sada karny aaya hun

♥—♥—♥—♥—♥

شبِ حیات میں اس مہرباں کا مہماں تھا
جو شہر چھوڑ گیا شہر میں بٌلا کے مٌجھے

Shab e hayat main us mehraban ka mehman tha
Jo sheher chorr giya sheher main bulla kay mujhy

♥—♥—♥—♥—♥

ہنسی خوشی یوں دِن کاٹنا ہے فرقت کے
اداس پھرنا نہیں، مبتلا نہیں رہنا

Hansi khushi youn din katna hai furqat kay
Udas phirna nahi, mubtala nahi rehna

♥—♥—♥—♥—♥

2 lines Zafar Iqbal Poetry

2 lines Zafar Iqbal Poetry

میں چوم لیتا ہوں اس راستے کی خاک ظفرؔ
جہاں سے کوئی بہت بے خبر گٌزرتا ہے

Main choom leta hoon us rastay ki khak zafar
Jahn say koi buhat bay khaber guzarta hai

♥—♥—♥—♥—♥

مُسکراتے ھوئے ملتا ھوں کسی سے جو ظفر
صاف پہچان لیا جاتا ھوں رُویا ھوا میں

Muskuraty huy milta hun kesi se jo zafar
Saaf pahchan liya jata hon roya hua main

♥—♥—♥—♥—♥

آگ جنگل میں لگی ھے دُور دریاؤں کے پار
اور کوئی شہر میں پھرتا ھے گھبرایا ھوا

Aag jangal me lagi hay door dariyaon k paar
Aur koi shahr me phirta hay ghabraya hua

♥—♥—♥—♥—♥

Love Poetry Zafar Iqbal

Love Poetry Zafar Iqbal

بدن کا سارا لہو کھنچ کے آگیا رُخ پر
وہ ایک بوسہ ہمیں دے کے سرخرو ھے بہت

Badan ka saara lahu kheench k aa gaya rukh par
Wo ek bosa hamain de k surkhru hay bahot

♥—♥—♥—♥—♥

کیسے کریں بندگی ظفر واں
بندوں کی جہاں خدائیاں ھیں

Kaise karen bandagi zafar waan
Bandon ki jahan khudaiyan hain

♥—♥—♥—♥—♥

آخر ظفر ھوا ھوں منظر سے خود ہی غائب
اسلوبِ خاص اپنا میں عام کرتے کرتے

Aakhir zafar hua hun manzar se khud hi ghaib
Usluub e khas apna main aam karty karty

♥—♥—♥—♥—♥

Best Poetry of Zafar Iqbal

Best Poetry of Zafar Iqbal

یہ دِل بٌرا سہی سرِبازار تو نہ کہہ
آخر تو اس مکان میں کچھ دِن رہا بھی ہے

Ye dil bura sahi sar-e-bazar tu na keh
Aakhir tu iss makan main kuch din raha bhi hai

♥—♥—♥—♥—♥

یہ بھی ممکن ھے کہ اس کار گہہِ دل میں ظفر
کام کوئی کرے اور نام کسی کا لگ جائے

Ye bhi mumkin hay kh is kaar gah e dil me zafar
Kaam koi kary aur naam kesi ka lag jaaye

♥—♥—♥—♥—♥

موت کے ساتھ ھوئی ھے میری شادی سو ظفر
عمر کے آخری لمحات میں دُولہا ھوا میں

Maut k saath hui hay meri shadi so zafar
Umr k aakhri lamhat me dulha hua main

♥—♥—♥—♥—♥

Raha agarch khafa tha tu shehr mn

رہا اگرچہ خفا، تھا تو شہر میں موجود
بہت اداس میں اس بدگماں کے بعد ہوا

Raha agarcha khafa, tha tu sheher main maujood
Buhat udas main us badguman kay baad hua

♥—♥—♥—♥—♥

وہاں مقام تو رونے کا تھا مگر اے دوست
تیرے فراق میں ھم کو ہنسی بہت آئی

Wahan maqam to rony ka tha magr aay dost
Tery firaq me hamko hansi bahot aai

♥—♥—♥—♥—♥

مجھ سے چھڑوائے میرے سارے اصول اس نے ظفر
کتنا چالاک تھا مارا مجھے تنہا کرکے

Mujhse chudvae mary saary usuul usne zafar
Kitna chalak tha maara mujhy tanha kr k

♥—♥—♥—♥—♥

جھوٹ بولا ھے تو قائم بھی رھو اس پر ظفر
آدمی کو صاحبِ کِردار ھونا چاہیئے

Jhoot bola hay to qaaem bhi raho usper zafar
Aadmi ko sahab e kirdaar hona chahiye

♥—♥—♥—♥—♥

پوری آواز سے اِک روز پکاروں تجھکو
اور پھر میری زباں پر تیرا تالا لگ جائے

Poori awaaz se ek rooz pukarun tujhko
Aur phir meri zaban par tera taala lag jaaye

♥—♥—♥—♥—♥

Chehry se jhahar pichly saal ki kadortain

چہرے سے جھاڑ پچھلے برس کی کدورتیں
دیوار سے پُرانہ کلینڈر اتار دے

Chehre se jhaad pichle baras ki kuduraten
Dewaar se purana calendar utar dy

♥—♥—♥—♥—♥

اِک لہر ھے کہ مجھ میں اُچھلنے کو ھے ظفر
اِک لفظ ھے کہ مجھ سے ادا ھونے والا ھے

Ek lahar hay k mujhme uchalne ko hay zafar
Ek lafz hay k mujhse ada hony waala hay

♥—♥—♥—♥—♥

اَب کے اس بزم میں کچھ اپنا پتہ بھی دینا
پاؤں پر پاؤں جو رکھنا تو دبا بھی دینا

Ab k is bazam me kuch apna pata bhi dena
Paanv par paanv jo rakhna to daba bhi dena

♥—♥—♥—♥—♥

خوشی ملی تو یہ عالم تھا بدحواسی کا
کہ دھیان ہی نہ رہا غم کی بے لباسی کا

Khushi mili to ye aalam tha bad hawasi ka
Ki dhyaan hi na rha gham ki be libasi ka

♥—♥—♥—♥—♥

رُوک رکھنا تھا ابھی اور یہ آواز کا رَس
بیچ لینا تھا یہ سودا ذرا مہنگا کرکے

Rook rakhna tha abhi aur ye awaaz ka ras
Beech lena tha ye sauda zara mahnga kr k

♥—♥—♥—♥—♥

Ankh ky ik ishary se kia gul us ne

آنکھ کے اک اشارے سے کیا گُل اس نے
جل رہا تھا جو دیا اتنی ھوا ھوتے ھوئے

Aankh k ek ishare se kiya gul usne
Jal rha tha jo diya itni hawa hoty hue

♥—♥—♥—♥—♥

ھم پہ دنیا ھوئی سوار ظفر
اور ھم ھیں سوار دنیا پر

Ham pe duniya hui sawar zafar
Aur ham hain sawar duniya par

♥—♥—♥—♥—♥

آثار کوئی چاند چمکنے کے بہت ہیں
اسباب ابھی دِل کے دھڑکنے کے بہت ہیں

Aasar koi chand chamaknay kay buhat hain
Asbab abhi dil kay dharraknay kay buhat hain

♥—♥—♥—♥—♥

ہمارا عشق رواں ھے رُکاوٹوں میں ظفرؔ
یہ خواب ھے کسی دیوار سے نہیں رُکتا

Hamara ishq rawaan hay rukavaton me zafar
Ye khwaab hay kesi dewaar se nahi rukta

♥—♥—♥—♥—♥

رات خالی ہی رہے گی میرے چاروں جانب
اور یہ کمرہ تیرے خواب سے بھر جاۓ گا

Raat khali hi rahy gi mery charon janab
Aur ye kamra tery khwab say bhar jaye ga

♥—♥—♥—♥—♥

خامشی اچھی نہیں انکار ہونا چاہیے
یہ تماشا اب سر بازار ہونا چاہیے

Khamashi achi nahi inkar hona chahiye
Ye tamasha ab sar e bazar hona chahiye

♥—♥—♥—♥—♥

زندگی تٌو کبھی نہیں آئی
موت آئی ذرا ذرا کر کے

Zindagi tau kabhi nahi aai
Maut aai zara kar kay

♥—♥—♥—♥—♥

کہاں چلی گئیں کرکے یہ توڑ پھوڑ ظفرؔ
وہ بجلیاں میرے اعصاب سے گزرتے ھوئے

Kahan chali gaiin kr k ye tod phod zafar
Wo bijliyan mery aasab se guzarty hue

♥—♥—♥—♥—♥

بازارِ بوسہ تیز سے ھے تیز تر ظفر
اُمید تو نہیں کہ یہ مہنگائی ختم ھو

Bazar e bosa teez se hay teez tar zafar
Umeed to nahi ki ye mahngai khatm ho

♥—♥—♥—♥—♥

میں بھی کچھ دِیر سے بیٹھا ھوں نشانے پہ ظفرؔ
اور وہ کھینچا ھوا — تیر بھی چل جانا ھے

Main bhi kuch dar se baitha hun nishane pe zafar
Aur wo khencha hua teer bhi chal jana hay

♥—♥—♥—♥—♥

ظفر زمیں زاد تھے زمیں سے ہی کام رکھا
جو آسمانی تھے آسمانوں میں رہ گئے ھیں

Zafar zameen zaad thy zameen se hi kaam rakha
Jo aasmani thy aasmanon me rah gaye hain

♥—♥—♥—♥—♥

پرانی آواز سے اِک روز پگاروں تجھ کو
اور پھر میری زباں پر تیرا تالا لگ جائے

Puri awaz se ik roz pukaron tuj ko
Aur phir meri zuban par tera tala lag jaye

♥—♥—♥—♥—♥

میں زیادہ ہوں بہت اِس کے لیے اب تک بھی
اور میرے لیے وہ سارے کا سارا کم ہے

Mein zayada hun bohat is ke liye ab tak bhi
Aur mere liye wo sare ka sara kam hai

♥—♥—♥—♥—♥

Zafar Iqbal Best Ghazals

Yahan Kisi Ko Bhi Kuch Hasb-e-Arzo Na Mila

Sad Poetry Zafar Iqbal

Sad Poetry Zafar Iqbal

یہاں کسی کو بھی کچھ حسب آرزو نہ ملا
کسی کو ہم نہ ملے اور ہم کو تو نہ ملا

غزال اشک سر صبح دوب مژگاں پر
کب آنکھ اپنی کھلی اور لہو لہو نہ ملا

چمکتے چاند بھی تھے شہر شب کے ایواں میں
نگار غم سا مگر کوئی شمع رو نہ ملا

انہی کی رمز چلی ہے گلی گلی میں یہاں
جنہیں ادھر سے کبھی اذن گفتگو نہ ملا

پھر آج مے کدۂ دل سے لوٹ آئے ہیں
پھر آج ہم کو ٹھکانے کا ہم سبو نہ ملا

♥—♥—♥—♥—♥

Khud Ko Terteeb Dia Aakhir-e-Kar Az Sar-e-Nu

ضد ہی کام آئی نہ اصرار بہت کام آیا
صبر تھا ایک جو ہر بار بہت کام آیا

خود کو ترتیب دیا آخرِکار ازسرِ نَو
زندگی میں ترا انکار بہت کام آیا

عمر اندھیروں میں بھی ویسے تو بسر ہو جاتی
وہ چراغِ لب و رخسار بہت کام آیا

مستقل اس نے تغافل ہی رکھا اپنا شعار
یوں ہمارے وہ لگاتار بہت کام آیا

دل نے بہلائے رکھا قصہ طرازی سے ہمیں
اور، تمہارا یہ طرف دار بہت کام آیا

راستے ہو گئے ہموار ہمیشہ کے لئے
سفرِ وادئ دشوار بہت کام آیا

فائدہ کوئ مجھے تو نہیں پہنچا، لیکن
دوسروں کے، مرا معیار بہت کام آیا

دیکھتے دیکھتے غائب ہوئ خوشبو ساری
ورنہ کچھ دن گلِ گفتار بہت کام آیا

آپ بھی آ کے ظفر سے جو پکڑتے عبرت
آپ جیسوں کے یہ بیکار بہت کام آیا

♥—♥—♥—♥—♥

Khamshi Achi Nahi Ankar Hona Chahy

خامشی اچھی نہیں انکار ہونا چاہئے
یہ تماشا اب سر بازار ہونا چاہئے

خواب کی تعبیر پر اصرار ہے جن کو ابھی
پہلے ان کو خواب سے بیدار ہونا چاہئے

ڈوب کر مرنا بھی اسلوب محبت ہو تو ہو
وہ جو دریا ہے تو اس کو پار ہونا چاہئے

اب وہی کرنے لگے دیدار سے آگے کی بات
جو کبھی کہتے تھے بس دیدار ہونا چاہئے

بات پوری ہے ادھوری چاہئے اے جان جاں
کام آساں ہے اسے دشوار ہونا چاہئے

دوستی کے نام پر کیجے نہ کیونکر دشمنی
کچھ نہ کچھ آخر طریق کار ہونا چاہئے

جھوٹ بولا ہے تو قائم بھی رہو اس پر ظفرؔ
آدمی کو صاحب کردار ہونا چاہئے

♥—♥—♥—♥—♥

Nahi Kh Tere Ishary Nahi Samjhta Hon

نہیں کہ تیرے اشارے نہیں سمجھتا ہوں
سمجھ تو لیتا ہوں سارے نہیں سمجھتا ہوں

ترا چڑھا ہوا دریا سمجھ میں آتا ہے
ترے خموش کنارے نہیں سمجھتا ہوں

کدھر سے نکلا ہے یہ چاند کچھ نہیں معلوم
کہاں کے ہیں یہ ستارے نہیں سمجھتا ہوں

کہیں کہیں مجھے اپنی خبر نہیں ملتی
کہیں کہیں ترے بارے نہیں سمجھتا ہوں

جو دائیں بائیں بھی ہیں اور آگے پیچھے بھی
انہیں میں اب بھی تمہارے نہیں سمجھتا ہوں

خود اپنے دل سے یہی اختلاف ہے میرا
کہ میں غموں کو غبارے نہیں سمجھتا ہوں

کبھی تو ہوتا ہے میری سمجھ سے باہر ہی
کبھی میں شرم کے مارے نہیں سمجھتا ہوں

کہیں تو ہیں جو مرے خواب دیکھتے ہیں ظفرؔ
کوئی تو ہیں جنہیں پیارے نہیں سمجھتا ہوں

♥—♥—♥—♥—♥

Bas Aik Baar Kisi Ne Galy Lgaya Tha

بس ایک بار کسی نے گلے لگایا تھا
پھر اس کے بعد نہ میں تھا نہ میرا سایا تھا

گلی میں لوگ بھی تھے میرے اس کے دشمن لوگ
وہ سب پہ ہنستا ہوا میرے دل میں آیا تھا

اس ایک دشت میں سو شہر ہو گئے آباد
جہاں کسی نے کبھی کارواں لٹایا تھا

وہ مجھ سے اپنا پتا پوچھنے کو آ نکلے
کہ جن سے میں نے خود اپنا سراغ پایا تھا

مرے وجود سے گلزار ہو کے نکلی ہے
وہ آگ جس نے ترا پیرہن جلایا تھا

مجھی کو طعنۂ غارت گری نہ دے پیارے
یہ نقش میں نے ترے ہاتھ سے مٹایا تھا

اسی نے روپ بدل کر جگا دیا آخر
جو زہر مجھ پہ کبھی نیند بن کے چھایا تھا

ظفرؔ کی خاک میں ہے کس کی حسرت تعمیر
خیال و خواب میں کس نے یہ گھر بنایا تھا

♥—♥—♥—♥—♥

Thakna Bhi Lazmi Tha Kuch Kaam Kerty Kerty

تھکنا بھی لازمی تھا کچھ کام کرتے کرتے
کچھ اور تھک گیا ہوں آرام کرتے کرتے

اندر سب آ گیا ہے باہر کا بھی اندھیرا
خود رات ہو گیا ہوں میں شام کرتے کرتے

یہ عمر تھی ہی ایسی جیسی گزار دی ہے
بدنام ہوتے ہوتے بدنام کرتے کرتے

پھنستا نہیں پرندہ ہے بھی اسی فضا میں
تنگ آ گیا ہوں دل کو یوں دام کرتے کرتے

کچھ بے خبر نہیں تھے جو جانتے ہیں مجھ کو
میں کوچ کر رہا تھا بسرام کرتے کرتے

سر سے گزر گیا ہے پانی تو زور کرتا
سب روک رکتے رکتے سب تھام کرتے کرتے

کس کے طواف میں تھے اور یہ دن آ گئے ہیں
کیا خاک تھی کہ جس کو احرام کرتے کرتے

جس موڑ سے چلے تھے پہنچے ہیں پھر وہیں پر
اک رائیگاں سفر کو انجام کرتے کرتے

آخر ظفرؔ ہوا ہوں منظر سے خود ہی غائب
اسلوب خاص اپنا میں عام کرتے کرتے

♥—♥—♥—♥—♥

Read More: Tehzeeb Hafi Best Poetry

Add Comment