Best Muharram Shayari | Muharram Poetry

2 Line Shayari of Muharram 

مجھ سے کہا کسی نے ، وفا کی مثال دو
میں نے قلم اٹھایا اور عباس لکھ دیا

Mujh se kaha kisi ne, wafa ke misal do
Mein ne qalam uthaya aur Abbas (A.S) likh deya.

میزان حشر کی مجھے کیا فکر ہو نصیر
بھاری ہمیشہ رہتا ہے پلہ حسین کا

Meezaan e hasher kei mujhey kiya fikar ho naseer,
Bhari hamaisha rehta hai palla hussain ka.

وہی پیاس ہے وہی دشت ہے وہی گھرانا ہے
مشکیزے سے تیر کا رشتہ بہت پرانا ہے

Wahi pyas hai wahi dasht hai wahi gharana hai
Mashkize se tir ka rishta bahut purana hai.

اِک فقر ہے شبیری ، اس فقر میں ہے میری
میراثِ مسلمانی ، سرمایۂ شبیری

Ik faqr hey Shabbiri is faqr mei’n hey miri
Meeras e musalmani sarmaya e Shabbiri

غریب و سادہ و رنگین ہے داستان حرم
نہایت اس کی حسین ابتدا ہے اسماعیل

Ghareeb-o-Sada-o-Rangeen Hai Dastan-e-Haram
Nahayat Iss Ki Hussain (R.A.), Ibtada Hai Ismaeel (A.S.)

کافر ہے تو شمشير پہ کرتا ہے بھروسا
مومن ہے تو بے تيغ بھی لڑتا ہے سپاہی

Kafir Hai To Shamsheer Pe Karta Hai Bharosa,
Momin Hai To Be-Taeg Bhi Larta Hai Sipahi.

حسین دیکھ رہے تھے ذرا بجھا کے چراغ
کہیں بجھے تو نہیں دشت میں وفا کے چراغ

Hussain (A.S) dekh rahay the zara bujha ke charagh
Kahin bujhe tu nahi dasht mein wafa ke charagh

رونے والا ہوں شہیدِ کربلا کے غم میں ، میں
کیا دُرِ مقصد نہ دیں گے ساقیٔ کوثر مجھے

Rone wala hon shaheed-e-karbala ke gham mein
Kia dur-e-maqsad na dain ge Saki-e-Kausar mujhy

حق کے لیے جاں دینے کی جو رسم چلی ہے
اس رسم کا بانی ہی حسینؑ ابنِ علیؑ ہے

Haq ke ley jaan dene ki jo rasam chali ha
Us rasam ka bani hi Hussain (A.S) Ibn-e-Ali (A.S) ha.

کچھ ایسا معتبر ہے حوالہ حسین کا
بخشا ہوا ہے چاہنے والا حسین کا

Koch aisa muhtabir ha hawala Hussain (A.S) ka
Bakhsha hoa ha chahne wala Hussain (A.S) ka.

تیغِ جفا کے سامنے آپ ہی ڈھال ہوگئے
ایسی مثال پیش کی، آپ مثال ہوگئے

Teegh-e-jafa ke samne aap he dhahal ho gay
Asi misal pesh ki, Aap misal ho gay

جُز حسین ابنِ علی مرد نہ نکلا کوئی
جمع ہوتی رہی دنیا سرِ مقتل کیا کیا

Juz Hussain (A.S) Abn-e-Ali (A.S) mard na nikla koi
Jama hoti rahi duniya sar-e-maqtal kia kia

تُو نے وہ کام کیا جس کی نہیں کوئی نظیر
فاتحِ کرب و بلا تجھ کو زمانوں کا سلام

Tu ne woh kam kia jis ki nahi koi nazeer
Fatih kab-o-bala tujh ko zamano ka salam

سبھی زمانوں میں اس کی اذان بولتی ہے
جہاں جہاں ہے صداقت وہاں وہاں ہے حسینؑ

Sabhi zamano mein us ki aazan bolti ha
Jahan jahan ha sadaqat wahan wahan ha Hussain (A.S)

کوئی اندازہ کر سکتا ہے اُس کے زور بازو کا
نگاہِ مردِ مومن سے بدل جاتی ہیں تقدیریں

Koi Andaza Kar Sakta Hai Uss Ke Zor-E-Bazu Ka!
Nigah-E-Mard-E-Momin Se Badal Jati Hain Taqdeerain.

نکل کر خانقاہوں سے ادا کر رسمِ شبیّری
کہ فقرِ خانقاہی ہے فقط اندوہ و دلگیری

Nikl Kar Khanqahon Se Ada Kar Rasm-E-Shabeeri
Ke Faqr-E-Khanqahi Hai Faqat Andoh-O-Dilgeeri

مسلماں کے لہو ميں ہے سليقہ دل نوازی کا
مروت حسن عالم گير ہے مردان غازی کا

Musalman Ke Lahoo Mein Hai, Saliqa Dil Nawazi Ka
Marawwat Husn-E-Alamgeer Hai Mardan-E-Ghazi Ka

داستاں حسنِ حقیقت کی تھی رنگیں لیکن
اتنی رنگیں نہ تھی خونِ شہدا سے پہلے

Dastan husnae hakikat ke thi rangeen lekan
Itni rangeen na thi khun-e-shuhda se pehle

اے کربلا کی خاک اِس احسان کو نہ بھول
تڑپی ہے تجھ پہ لاشِ جگر گوشۂ بتولؑ

Ae karbala ke khak is ahsan ko na bhol
Tarpi ha tujh pe lash-e-jigar gosha-e-batool

اسلام کے لہو سے تری پیاس بجھ گئی
سیراب کر گیا تجھے خونِ رگِ رسول

Islam ke laho se teri piyas bujh gai
Serab ker gia tujhe khone rag-e-batool

(ظفر علی خان)

خاک میں شامل ہوئی خونِ ابو طالب کی باس
اور اس کا نام پھر خاکِ شفا رکھا گیا

Khak men shamil hoi khon-e-Abo Talib
Aur us ka naam phir shifa rakha gia

(انجم خلیق)

حُر نے شہِ مظلوم کا رستہ نہیں روکا
بھٹکا ہوا راہی تھا پتہ پوچھ رہا تھا

(اختر امام رضوی)

Hur ne shah-e-mazloom ka rasta nahi roka
Batka hoa rahi tha pata pooch raha tha

رکھو سجدے میں سر اور بھول جائو
کہ وقتِ عصر ہے اور کربلا ہے

(عبید اللہ علیم)

Rakho sajde men sar aur bhol jao
Kh waqat-e-asar ha aur karbala ha

میں سوچتا ہوں کہ حق کس طرح ادا ہوگا
غمِ حسین زیادہ ہے زندگی کم ہے

Mein sochta hon kh haq kis tarha ada ho ga
Gham-e-Hussain (A.S) zinda ha zindagi kam ha

جن کے سجدوں سے منور ہے جبینِ آفتاب
میرے حرفوں کی عبادت ان خدا والوں کے نام

Jin ke sajdon se munawar ha jabeeny aaftab
Mere harfon ke ibadat un khuda wlaon ke naam

میری شہ رگ کا لہو، نذرِ شہیدانِ وفا
میرے جذبوں کی عقیدت کربلا والوں کے نام

(محسن نقوی)

Meri sheh rag ka laho, nazar shaheedan-e-wafa
Mery jazbon ke akeedat karbala walon ke naam

حقیقت ابدی ہے مقام شبیری
بدلتے رہتے ہیں انداز کوفی و شامی

Hakeekat abdi ha mukam-e-Shabiree
Badalte rehte hain andaz kofi-o-shami

زندہ حق ازقوت شبیری است
باطل آخر داغ حسرت میری است

Zinda haq az quwat-e-Sabiree ast
Batil aakhir dagh-e-hasrat meeri ast.

————————–

Add Comment