Best Mohsin Naqvi Poetry in Urdu Sad, Romantic, Islamic

Mohsin Naqvi was born on 5 May 1947 in Dera Ghazi Khan, Punjab, Pakistan and passed away on 9 November 1996. Mohsin Naqvi belonged to a respected Syed tribe. His poetry is very popular among the youth and is considered as one of the popular poets of Urdu. Here Mohsin Naqvi’s famous sad and romantic poetry is collected which readers will surely like.

Mohsin Naqvi Sad Poetry 2 Lines

Mohsin Naqvi sad poetry

Mohsin Naqvi sad poetry

اصولِ مُحبت میں تُم خود بے وفا ہو مُحسنؔ
وہ جو بچھڑا تو تُم مَر کیوں نہیں گئے

Usool e muhabbat main tum khud bewafa ho mohsin
Wo jo bichrra to tum mar kiyun nahi gaye

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

جس کی قسمت میں لکھا ہو رونا محسن
وہ مسکرا بھی دیں تو آنسو نکل آتے ہیں

Jis ki qismat main likha ho rona mohsin
Wo muskara bhi dain tu anso nikal aatay han

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ذکرشبِ فراق سے وحشت اسے بھی تھی
میری طرح کسی سے محبت اسے بھی تھی

Zikar e shab e faraq say wehshit issay bhi thi
Meri tarha kisi say muhabbat usay bhi thi

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Mohsin Naqvi 2 lines poetry

Mohsin Naqvi 2 lines poetry

کچھ حادثوں سے گر گئے محسن زمین پر
ہم رشک آسمان تھے ابھی کل کی بات ہے

Kuch hadson say gir gaye mohsin zameen par
Ham rashk e asman thay abhi kal ki baat hay

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اُسی کی باتوں سے ہی طبیعت سنبھل سکے گی
کہیں سے محسن کو ڈھونڈ لاو اداس لوگو

Usi ki batton say hi tabiyat sanbhal sakay gi
kahin say mohsin ko dhond lao udas logo

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ہمیں اب کھو کہ کہتا ہے مُجھے تُم یادآتے ہو
کِسی کا ہو کہ کہتا ہے مُجھے تُم یادآتے ہو

Hamain abb kho kay kehta hay mujhy tum yaad aatay ho
Kisi ka ho kay kehta hay mujhay tum yaad atay ho

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

mere hathon ki lakeeron mein ye nuqas hai

میرے ہاتھوں کی لکیروں میں یہ عیب ہے محسن
میں جس شخص کو چھو لوں وہ میرا نہیں رہتا

Mere hathon ki lakeeron main ye aaib ha mohsin
Main jis shakhs ko chho loon wo mera nahi rehta

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

کچھ بتاتا ہی نہیں غم کا سبب
بس یونہی گم سم ہے محسن آجکل

Kuch btana hi nahi ghum ka sabab
Bas yonhi gum sum hai mohsin aajkal

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ہم دونوں کا دکھ تھا ایک جیسا
احساس مگر جدا جدا تھا

Hum doono ka dukh tha ek jesa
Ahsas megar juda juda tha

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

pehly khushbo mazajon ko samjh lo

پہلے خوشبو کے مزاجوں کو سمجھ لو محسن
پھر گلستان میں کسی گل سے محبت کرنا

Pehlay khushboo kay mazajon ko samajh lo mohsin
Phir gulastan main kisi gul say muhabat karna

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

تجھے اداس بھی کرنا تھا خود بھی رونا تھا
یہ حادثہ بھی میری جان ، کبھی تو ہونا تھا

Tunjhy udas bhi kerna tha khud bhi rona tha
Ye hadisa bhi meri jaan, kabhi tu hona tha

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

کیوں تیرے درد کو دیں تہمت و یرانی ِدل
زلزلوں میں تو بھرے شہر اُجڑ جاتے ہیں

Kiyun teray dard ko dain tuhmat o verani ye dil
Zalzalon main tu bharay shehar ujarr jatay han

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

آنکھوں میں کوئی خواب اترنے نہیں دیتا
یہ دل کہ مجھے چین سے مرنے نہیں دیتا

Aankhon main koi khwab utarnay nahi deta
Yeh dil kay mujhay chain say marnay nahi deta

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ہر وقت کا ہنسنا تجھے برباد نہ کر دے
تنہائی کے لمحوں میں کبھی رو بھی لیا کر

Her waqt ka hansna tujy brbad na kr dy
Tanhai ky lamhon main kbi ro bhi lia kr

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

محسن وہ ساتھ لے گئے ہر منظرِ حیات
ٹوٹا ہُوا سا دِل پسِ منظر پڑا ہے

Mohsin wo sath lay gaiye har manzar e hayat
Tuta huwa sa dil pas e manzar parra hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

میں اُس شخص کو کیسے مناو ں گا محسنؔ
جو مجھ سے روٹھا ہے میری محبت کے سبب

Main uss shakhs ko kaisay manaon ga muhsin
Jo mujh say rotha hai meri muhabbat kay sabab

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

جن کے آنگن میں غریبی کا شجر ہو مُحسنؔ
اُن کی ہر بات زمانے کو بُری لگتی ہے

Jin kay aangan main ghareebi ka shajar ho mohsan
Un ki har baat zamanay ko buri lagti hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Romantic Poetry of Mohsin Naqvi 

Mohsin Naqvi romantic poetry

Mohsin Naqvi romantic poetry

مہینوں بعد ملنے کی خوشی اپنی جگہ محسنؔ
وہ ظالم جب بچھڑتا ہے تو حالت اور ہوتی ہے

Mahinon baad milnay ki khushi apni jaga mohsin
Wo zalim jab bicharta ha tu halat aur hoti ha

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اس کے میرے فاصلے محسن نہ پوچھ
رنگ سے خوشبو جدا ہے اور بس

Us ke meray faaslay Mohsin na pooch
Rung se khusbuu juda hai aur bas!

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اب ایک پل کا تغافل بھی سہہ نہیں سکتے
ہم اہل دل ، کبھی عادی تھے انتظار کے بھی

Ab aik pal ka tughafil bhi sah nahi saktay
Ham ahal e dil kabhi aadi thy intazar kay bhi

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

unhain jo naaz hai khud per

انھیں جو ناز ہے خود پر نہیں بے وجہ محسن
کہ جس کو ہم نے چاہا ہو، وہ خود کو عام کیوں سمجھے

Inhain jo naz hay khud par nahi bay waja mohsin
Kay jis ko ham nay chaha ho wo khud ko aam kiyun samjhay

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ریشم زُلفوں ، نیلم آنکھوں والے اچھے لگتے ہیں
میں شاعر ہوں مُجھ کو اُجلے چہرے اچھے لگتے ہیں

Resham zulfon neelam aankhon waly achay lagtahy han
Main shair hoon mujh ko ujlay chahray achay lagtay haan

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

بچھڑ کےمُجھ سے کبھی تو نے یہ بھی سوچا ہے
ادھورا چاند بھی کِتنا اُداس لگتا ہے

Bichar kay mujh say kabhi tu nay yeh bhi socha hay
Adhora chand bhi kitna udas lagta hay

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Mohsin Naqvi poetry in urdu

Mohsin Naqvi poetry in urdu

اتنا آساں نہیں شہرِمحبت کا پتہ محسن
خود بھٹکتے ہیں یہاں راہ بتانے والے

Itna asan nahi shehar e muhabbat ka pata mohsin
Khud bhataktay han yahan rah batanay waly

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اسکے سب جھوٹ بھی سچ ہیں محسن
شرط اتنی ہے وہ بولے تو سہی

Uskay sab jhot bhi sach haan mohsin
Shart itni hay wo bolay tu sahi

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

قریب آ شبِ تنہائ تجھ سے پیار کریں
تمام دِن کی تھکن کا علاج تُو ہی سہی

Qareeb aa shabe tanhai tujh say piyar karain
Tamam din ki thakan ka ilaj tu hi sahi

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اَب اس کو کھو رہا ہوں بڑے اشتیاق سے
وہ جس کو ڈھونڈنے میں زمانہ لگا مجھے

Ab us ko kho raha hoon baray ishtiaq say
Wo jis ko dhondnay main zamana laga mujhay

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اسےپانا اسے کھونا اسی کے ہجر میں رونا
یہی گر عشق ہے محسن تو ہم تنہا ہی اچھے

Isy pana isy khona isi ky hijar main rona
Yahi gar ishq hai mohsin tu him tanha hi achy

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اِس شب کے مقدر میں سحر ہی نہیں محسن
دیکھا ہے کئی بار چراغوں کو بجھا کر

Iss shub ky moqdar main shr hi nahi mohsin
Dekha ha kai bar charagoon ko boja ky

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

وہ آج بھی صدیوں کی مسافت پہ کھڑا ہے
ڈھونڈا تھا جسے وقت کی دیوار گِرا کر

Wo aaj bhi saduon ki mosaft py kharra hai
Dondha tha jisy wqat ki devar gira kr

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

فضا کا حبس شگوفوں کو باس کیا دے گا
بدن دریدہ کسی کو لباس کیا دے گا

Fiza ka habs shagofon ko
Badan dareeda kisi ko libas kia de ga

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

چل پڑا ہوں میں زمانے کے اصولوں پہ محسن
میں اب اپنی ہی باتوں سے مُکر جاتا ہوں

Chal para hoon main zamany kay asolon pay mohsin
Main ab apni hi baton say mukar jata hoon

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

کس لیے محسن کسی بے مہر کو اپنا کہوں
دل کے شیشے کو کسی پتھر سے کیوں ٹکراوں میں

Kis liye mohsin kisi bay mehr ko apna kahon
Dil kay sheshay ko kisi pathar say kiyun takraon main

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

آوارہ – و- بدنام ہے مُحسن تو ہمیں کِیا
خُود ٹھوکریں کھا کھا کے سنبھل جائے گا آخر

Aawara-o-badnam hay mohsin tu hamain kiya
Khud thokarain kha kha kay sanbhal jaye ga aakhir

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ہم نے غزلوں میں تُمھیں پُکارا ایسے
جیسے تُم ہو کوئی قسمت کا ستارہ مُحسن

Ham nay ghazalon main tumhain pukara aisay
Jaisy tum ho koi qismat ka sitara mohsin

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

بھڑکائیں میری پیاس کو اکثر تیری آنکھیں
صحرا میرا چہرہ ہے سمندر تیری آنکھیں

Bharrkain meri piyas ko aksar teri aankhain
Sehra mera chehra hai samundar teri aankhain

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

وہ میرے ضبط کا اندازہ کرنے آیا تھا
میں ہنس کے زخم نہ کھاتا تو اور کیا کرتا

Wo meray zabt ka andaza karnay aya tha
Main hans kay zakhm na khata tu aur kiya karta

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

وفا کی کون سی منزل پہ اس نے چھوڑا تھا
کہ وہ تو یاد ہمیں بھول کر بھی آتا ہے

Wafa ki kon si manzil pay us nay chorra tha
Kh wo tu yaad hamain bhool kar bhi aata hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

کوئی تعویز دو ردِّ بَلّا کا
میرے پیچھے مُحبّت پڑ گئی ہے

Koi taveez du radd e balla ka
Mery peechay muhabbat parr gai hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اِتنا خائف ہوں میں اِس دور کے ہنگاموں سے
اَب ہوا سانس بھی لیتی ہے تو ڈر جاتا ہوں

Itna khaif hoon main iss daur kay hangamon say
Ab hawa sans bhi leti hai tu darr jata hoon

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

تمھیں جب روبرو دیکھا کریں گے
یہ سوچا ہے بہت سوچا کریں گے

Tumhain jab rubaru dekha karain gaiy
Ye socha hai buhat socha karain gaiy

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

ہر گھڑی رإیگاں گٌزرتی ہے
زندگی اب کہاں گٌزرتی ہے

Har gharri raigan guzarti hai
Zindagi abb kahan guzarti hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

اس کے میرے فاصلے مٌحسن نہ پوچھ
رنگ سے خوشبو جٌدا ہے اور بس

Us kay mery fasilay muhsan na puch
Rang say khushboo juda hai aur bas

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

شکل اسکی تھی دلبروں جیسی
خو تھی لیکن ستم گروں جیسی

Shakal uski thi dilbaron jesi
Khu thi lekin sitam garon jesi

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Mohsin Naqvi Poetry on Imam Hussain (R.A)

Mohsin Naqvi Poetry on Imam Hussain

Mohsin Naqvi Poetry on Imam Hussain

وہ جو مٹ گیا وہ یزید تھا
جو نہ مٹ سکا وہ حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ ہے

Wo jo mit gia woh yazeed tha
Jo na mita saka wo Hussain(R.A) hai

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

سب سے اونچا ہے جو کٹ کر وہ سَر کس کا ہے؟
لٹ کر آباد ہے جو اب تک وہ گھر کس کا ہے؟
ظلم شبیر کی ہیبت سے نہ لرزے کیونکر
کس نبی کا نواسہ ہے پسر کس کا ہے؟

Sab se uncha hai jo kat kr woh sar kis ka hai?
Lut ker aabad hai jo ab tak woh ghar kis ka hai?
Zulam Shabir ki haibat se na larzy kionker
Kis Nabi ka nawasa hia paser kis ka hai?

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

عباس کربلا میں وہ جوہر دکھا گیا
بوڑھے بہادروں کو علی یاد آگیا

Abbas karbala mein woh johar dikhaya gia
Boorhy bahadron ko Ali(A.S) yad aa gia

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Best Ghazals of Mohsin Naqvi 

Qisy Meri Ulfat Ke Jo Marqoom Hain Saary

قصے میری الفت کے جو مرقوم ہیں سارے
آ دیکھ تیرے نام سے موسوم ہیں سارے

بس اس لیے ہر کام اَدُھورا ہی پڑا ہے
خادم بھی میری قوم کے مخدوم ہیں سارے

اب کون میرے پاؤں کی زنجیر کو کھولے
حاکم میری بستی کے بھی محکوم ہیں سارے

شاید یہ ظرف ہے جو خاموش ہوں اب تک
ورنہ تو تیرے عیب بھی معلوم ہیں سارے

ہر جرم میری ذات سے منسوب ہے
کیا میرے سوا شہر میں معصوم ہیں سارے

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Mujhy Ab Dar Nahi Lagta

کسی کے دور جانے سے
تعلق ٹوٹ جانے سے

کسی کے مان جانے سے
کسی کے روٹھ جانے سے

مجھے اب ڈر نہیں لگتا
کسی کو آزمانے سے

کسی کے آزمانے سے
کسی کو یاد رکھنے سے

کسی کو بھول جانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا

کسی کو چھوڑ دینے سے
کسی کے چھوڑ جانے سے

نا شمع کو جلانے سے
نا شمع کو بجھانے سے

مجھے اب ڈر نہیں لگتا
اکیلے مسکرانے سے

کبھی آنسو بہانے سے
نا اس سارے زمانے سے

حقیقت سے فسانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا

کسی کی نارسائی سے
کسی کی پارسائی سے

کسی کی بے وفائی سے
کسی دکھ انتہائی سے

مجھے اب ڈر نہیں لگتا
نا تو اس پار رہنے سے

نا تو اس پار رہنے سے
نا اپنی زندگانی سے

نا اک دن موت آنے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Ujry Hoy Logon Se Graizan No Hoa Ker

اجڑے ہوئے لوگوں سے گریزاں نہ ہوا کر
حالات کی قبروں کے یہ کتبے بھی پڑھا کر

کیا جانئے کیوں تیز ہوا سوچ میں گم ہے
خوابیدہ پرندوں کو درختوں سے اڑا کر

اس شخص کے تم سے بھی مراسم ہیں تو ہوں گے
وہ جھوٹ نہ بولے گا مرے سامنے آ کر

ہر وقت کا ہنسنا تجھے برباد نہ کر دے
تنہائی کے لمحوں میں کبھی رو بھی لیا کر

وہ آج بھی صدیوں کی مسافت پہ کھڑا ہے
ڈھونڈا تھا جسے وقت کی دیوار گرا کر

اے دل تجھے دشمن کی بھی پہچان کہاں ہے
تو حلقۂ یاراں میں بھی محتاط رہا کر

اس شب کے مقدر میں سحر ہی نہیں محسنؔ
دیکھا ہے کئی بار چراغوں کو بجھا کر

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Tujhy Ab Kis Ke ley Shikwa Hai Bachy Ghar Nahi Rehty

تجھے اب کس لئے شکوہ ہے بچے گھر نہیں رہتے
جو پتے زرد ہو جائیں وہ شاخوں پر نہیں رہتے

تو کیوں بے دخل کرتا ہے مکانوں سے مکینوں کو
وہ دہشت گرد بن جاتے ہیں جن کے گھر نہیں رہتے

جھکا دے گا تیری گردن کو یہ خیرات کا پتھر
جہاں میں مانگنے والوں کے اونچے سر نہیں رہتے

یقیناً یہ رعایا بادشاہ کو قتل کر دے گی
مسلسل جبر سے محسن دلوں میں ڈر نہیں رہتے

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Barkain Meri Piyas Ko Aksar Teri Aankhain

بھڑکائیں میری پیاس کو اکثر تیری آنکھیں
صحرا میرا چہرہ ہے تو سمندر تیری آنکھیں

پھر کون بھلا دادِ تبسم انھیں دے گا
روئیں گی بہت مجھ سے بچھڑ کر تیری آنکھیں

بوجھل نظر آتی ہیں بظاہر مجھے لیکن
کھلتی ہیں بہت دل میں اُتر کر تیری آنکھیں

اب تک میری یادوں سے مٹائے نہیں مٹتا
بھیگی ہوئی اک شام کا منظر تیری آنکھیں

ممکن ہو تو اک تازہ غزل اور بھی کہہ لوں
پھر اوڑھ نہ لیں خواب کی چادر تیری آنکھیں

یوں دیکھتے رہنا اسے اچھا نہیں محسن
وہ کانچ کا پیکر ہے تو پتھر تیری آنکھیں

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Fankar Hai Tu Haath Pe Suraj Saja Ke La

فنکار ہے تو ہاتھہ پہ سورج سجا کے لا
بجھتا ہوا دیا نہ مقابل ہوا کے لا

دریا کا انتقام ڈبو دے نہ گھر تیرا
ساحل سے روز روز نہ کنکر اٹھا کے لا

اب اختتام کو ہے سخی حرف التماس
کچھہ ہے تو اب وہ سامنے دست دعا کے لا

پیماں وفا کے باندھ مگر سوچ سوچ کر
اس ابتدا میں یوں نہ سخن انتہا کے لا

آرائش جراحت یاراں کی بزم میں
جو زخم دل میں ہیں سبھی تن پر سجا کے لا

تھوڑی سی اور موج میں آ اے ہوائے گل
تھوڑی سی اس کے جسم کی چرا کے لا

گر سوچنا ہیں اہل مشیت کے حوصلے
میداں سے گھر میں ایک تو میت اٹھا کے لا

محسن اب اس کا نام ہے سب کی زبان پر
کس نے کہا کہ اس کو غزل میں سجا لا

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Ye Raunqain Te Log Ye Ghar Chor Jaon Ga

یہ رونقیں یہ لوگ یہ گھر چھوڑ جاؤنگا
اک دن میں روشنی کا نگر چھوڑ جاؤ نگا

مرنے سے پیشتر میری آواز مت چرا
میں اپنی جاۂیداد ادھر چھوڑ جاؤں گا

قاتل مرا نشان مٹانے پہ ہے بضد
میں بھی سناں کی نوک پہ سرَ چھوڑ جاؤنگا

تْو نے مجھے چراغ سمجھ کر بجھا دیا
لیکن تیرے لۓ میں سحر چھوڑ جاؤنگا

آۂندہ نسل مجھ کو پڑھے گی غزل غزل
میں حرف حرف اپنا ہنر چھوڑ جاؤنگا

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Meri Siwa Sar-e-Maqtal Muqam Kis Ka Hai

میرے سِوا سرِ مقتل مقام کس کا ہے
کہو کہ اب لبِ قاتل پہ نام کس کا ہے

یہ تخت و تاج و قبا سب انہیں مبارک ہوں
مگر بہ نوکِ سِناں احترام کس کا ہے

تمہاری بات نہیں تم تو چارہ گر تھے مگر
یہ جشنِ فتح، پسِ قتلِ عام کس کا ہے

ہماری لاش پہ ڈھونڈو نہ اُنگلیوں کے نشاں
ہمیں خبر ہے عزیزو یہ کام کس کا ہے

فنا کے ہانپتے جھونکے ہوا سے پوچھتے ہیں
جبینِ وقت پہ نقشِ دوام کس کا ہے

تمہاری بات تو حرفِ غلط تھی مِٹ بھی گئی
اُتر گیا جو دلوں میں کلام کس کا ہے

وہ مطمئن تھے بہت قتل کر کے محسنؔ کو
مگر یہ ذکرِ وفا صبح و شام کس کا ہے

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Kizan Ki Dhop Se Shikwa Fazool Hai Mohsin

خزاں کی دھوپ سے شکوہ فضول ہے محسن
میں یوں بھی پھول تھا آخر مجھے بکھرنا تھا

وہ کون لوگ تھے ، ان کا پتہ تو کرنا تھا
مرے لہو میں نہا کر جنہیں نکھرنا تھا

یہ کیا کہ لوٹ بھی آئے سراب دیکھ کے لوگ
وہ تشنگی تھی کہ پاتال تک اترنا تھا

گلی کا شور ڈرائے گا دیر تک مجھ کو
میں سوچتا ہوں دریچوں کو وا نہ کرنا تھا

یہ تم نے انگلیاں کیسے فگار کر لی ہیں ؟
مجھے تو خیر لکیروں میں رنگ بھرنا تھا

وہ ہونٹ تھے کہ شفق میں نہائی کرنیں تھیں ؟
وہ آنکھ تھی کہ خنک پانیوں کا جھرنا تھا ؟

گلوں کی بات کبھی راز رہ نہ سکتی تھی
کہ نکہتوں کو تو ہر راہ سے گزرنا تھا

خزاں کی دھوپ سے شکوہ فضول ہے محسن
میں یوں بھی پھول تھا آخر مجھے بکھرنا تھا

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Ye Dil Ye Pagal Dil Mera Kion Bujh Gia Aawargi

یہ دل یہ پاگل دل میرا کیوں بجھ گیا آوارگی
اس دشت میں اک شہر تها وہ کیا ہوا آوارگی

کل شب مجهے بے شکل کی آواز نے چونکا دیا
میں نے کہا تو کون ہے؟ اس نے کہا آوارگی

اک تو کہ صدیوں سے مرے ہمراہ بهی ہمراز بهی
اک میں کہ ترے نام سے نا آشنا آوارگی

اک اجنبی جھونکے نے جب پوچها مرے غم کا سبب
صحرا کی بھیگی ریت پر میں نے لکها آوارگی

یہ درد کی تنہایاں یہ دشت کا ویراں سفر
ہم لوگ تو اکتا گئے اپنی سنا آوارگی

لوگو بهلا اس شہر میں کیسے جیئں گے ہم جہاں
ہو جرم تنہا سوچنا لیکن سزا آوارگی

کل رات تنہا چاند کو دیکها تها میں خواب میں
محسن مجهے راس آئیگی شاید سدا آوارگی

♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥⇐⇒♥

Read More: Sad Poetry in Urdu

Add Comment