Mirza Ghalib Poetry in Urdu 2 Lines, Ghazals on Life, Love

Mirza Asadullah Baig Khan was born on 27 December 1797 in All India and died on 15 February 1869. He is known as Ghalib. He is considered as one of the great poets of Urdu. Much of his poetry is about love, pain and the bitterness of life. Some of the best poetry couplets and Ghazals from Ghalib books is being presented. Readers will surely like it.

Mirza Ghalib 2 Lines Poetry on Love & Life 

Mirza Ghalib Poetry Urdu

Mirza Ghalib Poetry Urdu

قطع کیجیے نہ تعلق ہم سے
کچھ نہیں ہے، تو عداوت ہی سہی

Qita kijye na tualq ham say
Kuch nahi hay tu adawat hi sahi

♥—♥—♥—♥—♥

آئینہ دیکھ اپنا سا منہ لے کے رہ گئے
صا حب کو دل نہ دینے پہ کتنا غرور تھا

Aaina dekh apna sa munh lay kay reh gaye
Sahib ko dil na deny pay kitna gharor tha

♥—♥—♥—♥—♥

رنج اٹھانے سے بھی خوشی ہو گی
پہلے دل درد آشنا کیجیے

Ranj uthanay say bhi khushi ho gi
Pehlay dil dard ashna kijye

♥—♥—♥—♥—♥

Mirza Ghalib Love Poetry

Mirza Ghalib Love Poetry

موت آ جائے غالبؔ
دل نا آئے کِسی پہ

Maut aa jaye ghalib
Dil na aaye kisi pay

♥—♥—♥—♥—♥

جلا ہے جسم جہاں دل بھی جل گیا ہو گا
کریدتے ہو جواب، راکھ جستجو کیا ہے

Jala hay jism jahan dil bhi jal gia ho ga
Kuredty ho jawab, rakh justju kiya hay

♥—♥—♥—♥—♥

ہم وہاں ہیں جہاں سے ہم کو بھی
کچھ ہماری خبر نہیں آتی

Ham wahan han jahan say ham ko bhi
Kuch hamari khabar nahi aati

♥—♥—♥—♥—♥

Mirza Ghalib Best Poetry

Mirza Ghalib Best Poetry

نہ تھا کچھ تو خدا تھا کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈبویا مجھ کو ہونے نے نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

Na tha kuch tu khuda tha kuch na hota tu khuda hota
Daboya mujh ko honay nay, na hota main tu kiya hota

♥—♥—♥—♥—♥

جاتے ہُوئے کہتے ہو ، قیامت کو ملیں گے
کیا خوب ، قیامت کا ہے گویا کوئی دِن اور

Jatay huway kehtay ho, qiyamat ko milain gaiy
Kiya khob, kiyamat ka hai goya koi din aur

♥—♥—♥—♥—♥

پیدا ہوئی ہے کہتے ہیں ہر درد کی دوا
یوں ہو تو چارہءغم الفت ہی کیوں نہ ہو

Paida hui hai kehtay hain har dard ki dawa
Youn ho tu chara-e-gham e ulfat hi kiyoun na ho

♥—♥—♥—♥—♥

Un ke sadgi pe kon na mar jay ae khuda

اس کی سادگی پہ کون نہ مر جائے اے خُدا
لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

Uss ki sadgi pay kon na marr jaye aye khuda
Larrtay haan aur hath main talwar bhi nahi

♥—♥—♥—♥—♥

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی
دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی

Dil say teri nigah jigar tak utar gai
Dono ko ik ada main razamand kar gai

♥—♥—♥—♥—♥

دُکھ دے کر سوال کرتے ہو
تُم بھی غالب کمال کرتے ہو

Dukh day kar sawal karty ho
Tum bhi ghalib kamal karty ho

♥—♥—♥—♥—♥

Mirza Ghalib Quotes

Mirza Ghalib Quotes

حیرت ہوئی غالب تمہیں مسجد میں دیکھ کر
ایسا بھی کیا ہوا کہ خدا یاد آگیا

Herrat hui ghalib tumhain masjid main dekh kar
Aisa bhi kiya huwa key Khuda yaad aa giya

♥—♥—♥—♥—♥

کبھی جو یاد بھی آتا ہوں میں، تو کہتے ہیں
کہ “آج بزم میں کُچھ فتنہ و فساد نہیں”

Kabhi jo yaad bhi aata hoon main, tu kehty han
Keh aaj bazam main kuch fitna o fasad nahi

♥—♥—♥—♥—♥

رنج سے خوگر ہوا انساں تو مٹ جاتا ہے رنج
مشکلیں مجھ پر پڑیں اتنی کہ آساں ہو گئیں

Ranj se khugar ho insaan tu mit jata ha ranj
Mushkalin mujh per parin itni kay aasan ho gain

♥—♥—♥—♥—♥

Ham ko feryad kerni aati hai

ہم کو فریاد کرنی آتی ہے
آپ سٌنتے نہیں تو کیا کیجیے

Ham ko faryad karni aati hai
Aap suntay nahi tu kiya kijye

♥—♥—♥—♥—♥

تم ان کے وعدے کا ذکر ان سے کیوں کرو غالب
یہ کیا کہ تم کہو اور وہ کہیں کہ یاد نہیں

Tum un kay wady ka zikar un say kiyun karo ghalib
Yeh kiya kay tum kaho aur wo kahin kay yaad nahi

♥—♥—♥—♥—♥

یہ ہم جو ہجر میں دیوار و در کو دیکھتے ہیں
کبھی صبا کو کبھی نامہ بر کو دیکھتے ہیں

Yeh ham jo hijr main dewar o dar ko dekhty han
Kabhi saba ko kabhi nama bar ko dekhty han

♥—♥—♥—♥—♥

Ye kahan ke dosti hai kh baney hain dost nashe

یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست نا صح
کوئی چارہ ساز ہوتا ،کوئی غم گسار ہوتا

Ye kahan ki dosti ha kay bany han dost nasey
Koi chara saz hota koi gham gusar hota

♥—♥—♥—♥—♥

ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن
دل کےخوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

Hum ko maloom hai janat ki haqeeqat lekan
Dil ke khush rakhne ko Ghalib ye khiyal acha hai

♥—♥—♥—♥—♥

وہ آئے گھر ہمارے خُدا کی قُدرت ہے
کبھی ہم اُن کو کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں

Wo aye ghar hamaray khuda ki qudrat hai
Kabhi ham un ko kabhi apnay ghar ko dekhtay hain

♥—♥—♥—♥—♥

Un ko dekhne se aati hai jo muhn pe raunak

ان کے دیکھنے سے جو آجاتی ہے منہ پر رونق
وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے

Un kay dekhay say jo aa jati ha munh par ronaq
Wo samajhty han kay bemar ka haal acha hay

♥—♥—♥—♥—♥

ہاں بھلا کر ، تیرا بھلا ہو گا
اور درویش کی صدّا کیا ہے

Haan bhalla kar, tera bhalla ho ga
Aur derwesh ki sadda kiya hai

♥—♥—♥—♥—♥

جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دِن
بیٹھے رہیں تصّورِ جاناں کیے ہوۓ

Ji dhondta hai phir wohi fursat kay raat din
Baithy huwy tasawar e janan kiye huwy

♥—♥—♥—♥—♥

تھا زندگی میں مرگ کا کھٹکا لگا ہوا
اڑنے سے پیشتر بھی، مرا رنگ زرد تھا

Tha zindagi main marg ka khatka laga hua
Urnay say peshtar bhi mera rang zard tha

♥—♥—♥—♥—♥

کھلتا کسی پہ کیوں مرے دل کا معاملہ
شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

Khulta kisi pay kiyun mere dil ka muamla
Sheron kay intkhab nay ruswa kiya mujhey

♥—♥—♥—♥—♥

درد ہو دل میں تو دوا کیجے
دل ہی جب درد ہو تو کیا کیجے

Dard ho dil main tu dawa kijye
Dil hi jab dard ho tu kiya kijye

♥—♥—♥—♥—♥

رونے سے اور عشق میں بے باک ہو گئے
دھوئے گئے ہم اتنے کہ بس پاک ہو گئے

Rony sy aur ishq main be bak ho gaey
Dhoey gae ham itne ky bas pak ho gaey

♥—♥—♥—♥—♥

عِشق سے طبیعت نے زیست کا مزہ پایا
درد کی دوا پائی ، درد بے دوا پایا

Ishq say tabeyat nay zeest ka maza paya
Dard ki dawa paai, dard bay dawa paya

♥—♥—♥—♥—♥

گرمی سہی کلام میں مگر نا اتنی سہی
کی جس سے بات اسنے شکایت ضرور کی

Garmi sahi kalam mein magar na itni sahi
Ki jis se baat usne shikait zaroor ki

♥—♥—♥—♥—♥

عشرت قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا
درد کا حد سے گُزرنا اور دوا ہو جانا

Ishrat qatra hai darya main fana ho jana
Dard ka hadd say guzarna aur dawa ho jana

♥—♥—♥—♥—♥

دام ہر موج میں ہے حلقہٕ صد کام نہنگ
دیکھیں کیا گُزرے ہے قطرے پہ گہر ہوتے تک

Daam har mauj main hai halqa e kaam nahang
Dekhain kiya guzray hai qatray pay guhr hotay tak

♥—♥—♥—♥—♥

بٹھا کر یار کو پہلو میں رات بھر غالب
جو لوگ کچھ نہیں کرتے، کمال کرتے ھیں

Bitha kay pehloo main yaar ko raat bhar Galib
jo kuch nahin kartay hain woh kamal kartay hain

♥—♥—♥—♥—♥

بیٹھا کر یار کو پہلو میں رات بھر غالِب
جو لوگ کچھ نہیں کرتے، کمال کرتے ہیں

Bitha kar yaar ko pehlu mein raat bhar Ghalib
Jo log kuch nahi kartey, kamal kartey hein

♥—♥—♥—♥—♥

Best Ghazals of Mirza Ghalib

Koi Umeed Bar Nahi Aati

کوئی امید بر نہیں آتی
کوئی صورت نظر نہیں آتی

موت کا ایک دن معین ہے
نیند کیوں رات بھر نہیں آتی

آگے آتی تھی حال دل پہ ہنسی
اب کسی بات پر نہیں آتی

جانتا ہوں ثواب طاعت و زہد
پر طبیعت ادھر نہیں آتی

ہے کچھ ایسی ہی بات جو چپ ہوں
ورنہ کیا بات کر نہیں آتی

کیوں نہ چیخوں کہ یاد کرتے ہیں
میری آواز گر نہیں آتی

داغ دل گر نظر نہیں آتا
بو بھی اے چارہ گر نہیں آتی

ہم وہاں ہیں جہاں سے ہم کو بھی
کچھ ہماری خبر نہیں آتی

مرتے ہیں آرزو میں مرنے کی
موت آتی ہے پر نہیں آتی

کعبہ کس منہ سے جاوگے غالبؔ
شرم تم کو مگر نہیں آتی

♥—♥—♥—♥—♥

Her Aik Baat Pe Kehte Ho Tum Kia Ho

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تمہیں کہو کہ یہ انداز گفتگو کیا ہے

نہ شعلہ میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
وگرنہ خوف بد آموزی عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
ہمارے جیب کو اب حاجت رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں دل بھی جل گیا ہوگا
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز
سوائے بادۂ گلفام مشک بو کیا ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقت گفتار اور اگر ہو بھی
تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے

♥—♥—♥—♥—♥

Hazaron Khawaishain Aisi Kh Her Khawaish Pe Dam Nikle

ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

ڈرے کیوں میرا قاتل کیا رہے گا اس کی گردن پر
وہ خوں جو چشم تر سے عمر بھر یوں دم بدم نکلے

نکلنا خلد سے آدم کا سنتے آئے ہیں لیکن
بہت بے آبرو ہو کر ترے کوچے سے ہم نکلے

بھرم کھل جائے ظالم تیرے قامت کی درازی کا
اگر اس طرۂ پر پیچ و خم کا پیچ و خم نکلے

مگر لکھوائے کوئی اس کو خط تو ہم سے لکھوائے
ہوئی صبح اور گھر سے کان پر رکھ کر قلم نکلے

ہوئی اس دور میں منسوب مجھ سے بادہ آشامی
پھر آیا وہ زمانہ جو جہاں میں جام جم نکلے

ہوئی جن سے توقع خستگی کی داد پانے کی
وہ ہم سے بھی زیادہ خستۂ تیغ ستم نکلے

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا
اسی کو دیکھ کر جیتے ہیں جس کافر پہ دم نکلے

کہاں مے خانہ کا دروازہ غالبؔ اور کہاں واعظ
پر اتنا جانتے ہیں کل وہ جاتا تھا کہ ہم نکلے

♥—♥—♥—♥—♥

Dil Se Teri Nighah Jigar Tak Uter Gai

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی
دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی

شق ہو گیا ہے سینہ خوشا لذت فراغ
تکلیف پردہ داری زخم جگر گئی

وہ بادۂ شبانہ کی سرمستیاں کہاں
اٹھیے بس اب کہ لذت خواب سحر گئی

اڑتی پھرے ہے خاک مری کوئے یار میں
بارے اب اے ہوا ہوس بال و پر گئی

دیکھو تو دل فریبی انداز نقش پا
موج خرام یار بھی کیا گل کتر گئی

ہر بوالہوس نے حسن پرستی شعار کی
اب آبروئے شیوۂ اہل نظر گئی

نظارہ نے بھی کام کیا واں نقاب کا
مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی

فردا و دی کا تفرقہ یک بار مٹ گیا
کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی

مارا زمانہ نے اسداللہ خاں تمہیں
وہ ولولے کہاں وہ جوانی کدھر گئی

♥—♥—♥—♥—♥

Mein Aur Bazam-e-Me Se Yun Tishna Kaam Aaon

میں اور بزم مے سے یوں تشنہ کام آؤں
گر میں نے کی تھی توبہ ساقی کو کیا ہوا تھا

ہے ایک تیر جس میں دونوں چھدے پڑے ہیں
وہ دن گئے کہ اپنا دل سے جگر جدا تھا

درماندگی میں غالبؔ کچھ بن پڑے تو جانوں
جب رشتہ بے گرہ تھا ناخن گرہ کشا تھا

♥—♥—♥—♥—♥

Kabhi Jal Gia Na Taab-e-Rukh Yaar Dekh Ker

کیوں جل گیا نہ تاب رخ یار دیکھ کر
جلتا ہوں اپنی طاقت دیدار دیکھ کر

آتش پرست کہتے ہیں اہل جہاں مجھے
سرگرم نالہ ہائے شرربار دیکھ کر

کیا آبروئے عشق جہاں عام ہو جفا
رکتا ہوں تم کو بے سبب آزار دیکھ کر

آتا ہے میرے قتل کو پر جوش رشک سے
مرتا ہوں اس کے ہاتھ میں تلوار دیکھ کر

ثابت ہوا ہے گردن مینا پہ خون خلق
لرزے ہے موج مے تری رفتار دیکھ کر

واحسرتا کہ یار نے کھینچا ستم سے ہاتھ
ہم کو حریص لذت آزار دیکھ کر

بک جاتے ہیں ہم آپ متاع سخن کے ساتھ
لیکن عیار طبع خریدار دیکھ کر

زنار باندھ سبحۂ صد دانہ توڑ ڈال
رہ رو چلے ہے راہ کو ہموار دیکھ کر

ان آبلوں سے پاؤں کے گھبرا گیا تھا میں
جی خوش ہوا ہے راہ کو پر خار دیکھ کر

کیا بد گماں ہے مجھ سے کہ آئینے میں مرے
طوطی کا عکس سمجھے ہے زنگار دیکھ کر

گرنی تھی ہم پہ برق تجلی نہ طور پر
دیتے ہیں بادہ ظرف قدح خوار دیکھ کر

سر پھوڑنا وہ غالبؔ شوریدہ حال کا
یاد آ گیا مجھے تری دیوار دیکھ کر

♥—♥—♥—♥—♥

Mehrban Ho Ke Bula Lo Mujhy Chaho Jis Waqat

مہرباں ہو کے بلا لو مجھے چاہو جس وقت
میں گیا وقت نہیں ہوں کہ پھر آ بھی نہ سکوں

ضعف میں طعنہ اغیار کا شکوہ کیا ہے
بات کچھ سر تو نہیں ہے کہ اٹھا بھی نہ سکوں

زہر ملتا ہی نہیں مجھ کو ستم گر ورنہ
کیا قسم ہے ترے ملنے کی کہ کھا بھی نہ سکوں

اس قدر ضبط کہاں ہے کبھی آ بھی نہ سکوں
ستم اتنا تو نہ کیجے کہ اٹھا بھی نہ سکوں

لگ گئی آگ اگر گھر کو تو اندیشہ کیا
شعلۂ دل تو نہیں ہے کہ بجھا بھی نہ سکوں

تم نہ آؤ گے تو مرنے کی ہیں سو تدبیریں
موت کچھ تم تو نہیں ہو کہ بلا بھی نہ سکوں

ہنس کے بلوائیے مٹ جائے گا سب دل کا گلہ
کیا تصور ہے تمہارا کہ مٹا بھی نہ سکوں

♥—♥—♥—♥—♥

Milti Hai Kho-e-Yaar Se Naar Altbab Mein

ملتی ہے خوئے یار سے نار التہاب میں
کافر ہوں گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں

کب سے ہوں کیا بتاؤں جہان خراب میں
شب ہائے ہجر کو بھی رکھوں گر حساب میں

تا پھر نہ انتظار میں نیند آئے عمر بھر
آنے کا عہد کر گئے آئے جو خواب میں

قاصد کے آتے آتے خط اک اور لکھ رکھوں
میں جانتا ہوں جو وہ لکھیں گے جواب میں

مجھ تک کب ان کی بزم میں آتا تھا دور جام
ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں

جو منکر وفا ہو فریب اس پہ کیا چلے
کیوں بد گماں ہوں دوست سے دشمن کے باب میں

میں مضطرب ہوں وصل میں خوف رقیب سے
ڈالا ہے تم کو وہم نے کس پیچ و تاب میں

میں اور حظ وصل خدا ساز بات ہے
جاں نذر دینی بھول گیا اضطراب میں

ہے تیوری چڑھی ہوئی اندر نقاب کے
ہے اک شکن پڑی ہوئی طرف نقاب میں

لاکھوں لگاؤ ایک چرانا نگاہ کا
لاکھوں بناؤ ایک بگڑنا عتاب میں

وہ نالہ دل میں خس کے برابر جگہ نہ پائے
جس نالہ سے شگاف پڑے آفتاب میں

وہ سحر مدعا طلبی میں نہ کام آئے
جس سحر سے سفینہ رواں ہو سراب میں

غالبؔ چھٹی شراب پر اب بھی کبھی کبھی
پیتا ہوں روز ابر و شب ماہتاب میں

♥—♥—♥—♥—♥

Abne Maryam Hoa Kery Koi

ابن مریم ہوا کرے کوئی
میرے دکھ کی دوا کرے کوئی

شرع و آئین پر مدار سہی
ایسے قاتل کا کیا کرے کوئی

چال جیسے کڑی کمان کا تیر
دل میں ایسے کے جا کرے کوئی

بات پر واں زبان کٹتی ہے
وہ کہیں اور سنا کرے کوئی

بک رہا ہوں جنوں میں کیا کیا کچھ
کچھ نہ سمجھے خدا کرے کوئی

نہ سنو گر برا کہے کوئی
نہ کہو گر برا کرے کوئی

روک لو گر غلط چلے کوئی
بخش دو گر خطا کرے کوئی

کون ہے جو نہیں ہے حاجت مند
کس کی حاجت روا کرے کوئی

کیا کیا خضر نے سکندر سے
اب کسے رہنما کرے کوئی

جب توقع ہی اٹھ گئی غالبؔ
کیوں کسی کا گلہ کرے کوئی

♥—♥—♥—♥—♥

Ham Per Jafa Se Terak-e-Wafa Ka Guman Nahi

ہم پر جفا سے ترک وفا کا گماں نہیں
اک چھیڑ ہے وگرنہ مراد امتحاں نہیں

کس منہ سے شکر کیجئے اس لطف خاص کا
پرسش ہے اور پاے سخن درمیاں نہیں

ہم کو ستم عزیز ستم گر کو ہم عزیز
نا مہرباں نہیں ہے اگر مہرباں نہیں

بوسہ نہیں نہ دیجیے دشنام ہی سہی
آخر زباں تو رکھتے ہو تم گر دہاں نہیں

ہر چند جاں گدازی قہر و عتاب ہے
ہر چند پشت گرمی تاب و تواں نہیں

جاں مطرب ترانۂ ہل من مزید ہے
لب پردہ سنج زمزمۂ الاماں نہیں

خنجر سے چیر سینہ اگر دل نہ ہو دو نیم
دل میں چھری چبھو مژہ گر خونچکاں نہیں

ہے ننگ سینہ دل اگر آتش کدہ نہ ہو
ہے عار دل نفس اگر آذر فشاں نہیں

نقصاں نہیں جنوں میں بلا سے ہو گھر خراب
سو گز زمیں کے بدلے بیاباں گراں نہیں

کہتے ہو کیا لکھا ہے تری سر نوشت میں
گویا جبیں پہ سجدۂ بت کا نشاں نہیں

پاتا ہوں اس سے داد کچھ اپنے کلام کی
روح القدس اگرچہ مرا ہم زباں نہیں

جاں ہے بہائے بوسہ ولے کیوں کہے ابھی
غالبؔ کو جانتا ہے کہ وہ نیم جاں نہیں

جس جا کہ پائے سیل بلا درمیاں نہیں
دیوانگاں کو واں ہوس خانماں نہیں

گل غنچگی میں غرقۂ دریائے رنگ ہے
اے آگہی فریب تماشا کہاں نہیں

کس جرم سے ہے چشم تجھے حسرت قبول
برگ حنا مگر مژۂ خوں فشاں نہیں

ہر رنگ گردش آئنہ ایجاد درد ہے
اشک سحاب جز بہ وداع خزاں نہیں

جز عجز کیا کروں بہ تمنائے بے خودی
طاقت حریف سختیٔ خواب گراں نہیں

عبرت سے پوچھ درد پریشانیٔ نگاہ
یہ گرد وہم جز بسر امتحاں نہیں

برق بجان حوصلہ آتش فگن اسدؔ
اے دل فسردہ طاقت ضبط فغاں نہیں

♥—♥—♥—♥—♥

Read More: Mohsin Naqvi Best Poetry

Add Comment