Friendship Poetry Urdu | Dosti Shayari Images

Friendship Poems

Dost ban kar bhi nahin sath nibhane wala

friendship poems urdu

Friendship Poems in Urdu

Dost ban kar bhi nahin sath nibhane wala,

Wahi andaz hai zalim ka zamane wala.

دوست بن کر بھی نہیں ساتھ نبھانے والا

وہی انداز ہے ظالم کا زمانے والا

Ab use log samajhte hain giraftar mera,

SaKHt nadim hai mujhe dam mein lane wala.

اب اسے لوگ سمجھتے ہیں گرفتار مرا

سخت نادم ہے مجھے دام میں لانے والا

Subh-dam chhoD gaya nikhat-e-gul ki surat,

Raat ko ghuncha-e-dil mein simaT aane wala.

صبح دم چھوڑ گیا نکہت گل کی صورت

رات کو غنچۂ دل میں سمٹ آنے والا

Kya kahen kitne marasim the hamare us se,

Wo jo ek shaKHs hai munh pher ke jaane wala.

کیا کہیں کتنے مراسم تھے ہمارے اس سے

وہ جو اک شخص ہے منہ پھیر کے جانے والا

Tere hote hue aa jati thi sari duniya,

Aaj tanha hun to koi nahin aane wala.

تیرے ہوتے ہوئے آ جاتی تھی ساری دنیا

آج تنہا ہوں تو کوئی نہیں آنے والا

Muntazir kis ka hun TuTi hui dahliz pe main,

Kaun aaega yahan kaun hai aane wala.

منتظر کس کا ہوں ٹوٹی ہوئی دہلیز پہ میں

کون آئے گا یہاں کون ہے آنے والا

Kya KHabar thi jo meri jaan mein ghula hai itn,

Hai wahi mujh ko sar-e-dar bhi lane wala.

کیا خبر تھی جو مری جاں میں گھلا ہے اتنا

ہے وہی مجھ کو سر دار بھی لانے والا

Main ne dekha hai bahaaron mein chaman ko jalte,

Hai koi KHwab ki tabir batane wala.

میں نے دیکھا ہے بہاروں میں چمن کو جلتے

ہے کوئی خواب کی تعبیر بتانے والا

Tum takalluf ko bhi iKHlas samajhte ho ‘Faraaz’,

Dost hota nahin har hath milane wala.

تم تکلف کو بھی اخلاص سمجھتے ہو فرازؔ

دوست ہوتا نہیں ہر ہاتھ ملانے والا

————————

Awwal awwal ki dosti hai abhi

Awwal awwal ki dosti hai abhi,

Ek ghazal hai ki ho rahi hai abhi.

اول اول کی دوستی ہے ابھی

اک غزل ہے کہ ہو رہی ہے ابھی

Main bhi shahr-e-wafa mein nau-warid,

Wo bhi ruk ruk ke chal rahi hai abhi.

میں بھی شہر وفا میں نو وارد

وہ بھی رک رک کے چل رہی ہے ابھی

Main bhi aisa kahan ka zud-shanas,

Wo bhi lagta hai sochti hai abhi.

میں بھی ایسا کہاں کا زود شناس

وہ بھی لگتا ہے سوچتی ہے ابھی

Dil ki waraftagi hai apni jagah,

Phir bhi kuchh ehtiyat si hai abhi.

دل کی وارفتگی ہے اپنی جگہ

پھر بھی کچھ احتیاط سی ہے ابھی

Garche pahla sa ijtinab nahin,

Phir bhi kam kam supurdagi hai abhi.

گرچہ پہلا سا اجتناب نہیں

پھر بھی کم کم سپردگی ہے ابھی

Kaisa mausam hai kuchh nahin khulta,

Bunda-bandi bhi dhup bhi hai abhi.

کیسا موسم ہے کچھ نہیں کھلتا

بوندا باندی بھی دھوپ بھی ہے ابھی

KHud-kalami mein kab ye nashsha tha,

Jis tarah ru-ba-ru koi hai abhi.

خود کلامی میں کب یہ نشہ تھا

جس طرح روبرو کوئی ہے ابھی

Qurbaten lakh KHub-surat hon,

Duriyon mein bhi dilkashi hai abhi.

قربتیں لاکھ خوبصورت ہوں

دوریوں میں بھی دل کشی ہے ابھی

Fasl-e-gul mein bahaar pahla gulab,

Kis ki zulfon mein Tankti hai abhi.

فصل گل میں بہار پہلا گلاب

کس کی زلفوں میں ٹانکتی ہے ابھی

Muddaten ho gain ‘Faraaz’ magar,

Wo jo diwangi ki thi hai abhi.

مدتیں ہو گئیں فرازؔ مگر

وہ جو دیوانگی کہ تھی ہے ابھی

————————

Add Comment