Ehsan Danish Famous Ghazals – Poetry of Ehsan Danish

Ehsanul Haq known as Ehsan Danish was a famous poet, prose writer and linguist who was born in March 1914 and died in 1982. He was a famous laborer and romantic poet of his time. Some people love to read his poetry even today. Some look at his famous ghazals.

Wafa Ka Ahd Tha Dil Ko Sambhaalne Ke Liye

Ehsan Danish Famous Shayari

وفا کا عہد تھا دل کو سنبھالنے کے لئے
وہ ہنس پڑے مجھے مشکل میں ڈالنے کے لئے

بندھا ہوا ہے بہاروں کا اب وہیں تانتا
جہاں رکا تھا میں کانٹے نکالنے کے لئے

کوئی نسیم کا نغمہ کوئی شمیم کا راگ
فضا کو امن کے قالب میں ڈھالنے کے لئے

خدا نہ کردہ زمیں پاؤں سے اگر کھسکی
بڑھیں گے تند بگولے سنبھالنے کے لئے

اتر پڑے ہیں کدھر سے یہ آندھیوں کے جلوس
سمندروں سے جزیرے نکالنے کے لئے

ترے سلیقۂ ترتیب نو کا کیا کہنا
ہمیں تھے قریۂ دل سے نکالنے کے لئے

کبھی ہماری ضرورت پڑے گی دنیا کو
دلوں کی برف کو شعلوں میں ڈھالنے کے لئے

یہ شعبدے ہی سہی کچھ فسوں گردوں کو بلاؤ
نئی فضا میں ستارے اچھالنے کے لئے

ہے صرف ہم کو ترے خال و خد کا اندازہ
یہ آئنہ تو ہیں حیرت میں ڈالنے کے لئے

نہ جانے کتنی مسافت سے آئے گا سورج
نگار شب کا جنازہ نکالنے کے لئے

میں پیش رو ہوں اسی خاک سے اگیں گے چراغ
نگاہ و دل کے افق کو اجالنے کے لئے

فصیل شب سے کوئی ہاتھ بڑھنے والا ہے
فضا کی جیب سے سورج نکالنے کے لئے

کنوئیں میں پھینک کے پچھتا رہا ہوں اے دانشؔ
کمند تھی جو مناروں پر ڈالنے کے لئے

Wafa ka ahd tha dil ko sambhaalne ke liye
Wo hans paDe mujhe mushkil mein Dalne ke liye

Bandha hua hai bahaaron ka ab wahin tanta
Jahan ruka tha main kanTe nikalne ke liye

Koi nasim ka naghma koi shamim ka rag
Faza ko amn ke qalib mein Dhaalne ke liye

Khuda na karda zamin panw se agar khiski
Badhenge tund bagule sambhaalne ke liye

Utar paDe hain kidhar se ye aandhiyon ke julus
Samundaron se jazire nikalne ke liye

Tere saliqa-e-tartib-e-nau ka kya kahna
Hamin the qarya-e-dil se nikalne ke liye

Kabhi hamari zarurat paDegi duniya ko
Dilon ki barf ko shoalon mein Dhaalne ke liye

Ye shoabde hi sahi kuchh fusun-garon ko bulao
Nai faza mein sitare uchhaalne ke liye

Hai sirf hum ko tere KHal-o-KHad ka andaza
Ye aaine tu hain hairat mein Dalne ke liye

Na jaane kitni masafat se aaega suraj
Nigar-e-shab ka janaza nikalne ke liye

Main pesh-rau hun isi KHak se ugenge charagh
Nigah-o-dil ke ufuq ko ujalne ke liye

Fasil-e-shab se koi hath baDhne wala hai
Faza ki jeb se suraj nikalne ke liye

Kunen mein phenk ke pachhta raha hun ai ‘danish’
Kamand thi jo minaron par Dalne ke liye

==========

Yun Na Mil mujh Se KHafa Ho Jaise

یوں نہ مل مجھ سے خفا ہو جیسے
ساتھ چل موج صبا ہو جیسے

لوگ یوں دیکھ کے ہنس دیتے ہیں
تو مجھے بھول گیا ہو جیسے

عشق کو شرک کی حد تک نہ بڑھا
یوں نہ مل ہم سے خدا ہو جیسے

موت بھی آئی تو اس ناز کے ساتھ
مجھ پہ احسان کیا ہو جیسے

ایسے انجان بنے بیٹھے ہو
تم کو کچھ بھی نہ پتا ہو جیسے

ہچکیاں رات کو آتی ہی رہیں
تو نے پھر یاد کیا ہو جیسے

زندگی بیت رہی ہے دانشؔ
ایک بے جرم سزا ہو جیسے

Yun na mil mujh se KHafa ho jaise
Sath chal mauj-e-saba ho jaise

Log yun dekh ke hans dete hain
Tu mujhe bhul gaya ho jaise

Ishq ko shirk ki had tak na baDha
Yun na mil hum se KHuda ho jaise

Maut bhi aai to is naz ke sath
Mujh pe ehsan kiya ho jaise

Aise anjaan bane baiThe ho
Tum ko kuchh bhi na pata ho jaise

Hichkiyan raat ko aati hi rahin
Tu ne phir yaad kiya ho jaise

Zindagi bit rahi hai ‘danish’
Ek be-jurm saza ho jaise

==========

Ye To Nahin Ki Tum Se Mohabbat Nahin Mujhe

یہ تو نہیں کہ تم سے محبت نہیں مجھے
اتنا ضرور ہے کہ شکایت نہیں مجھے

میں ہوں کہ اشتیاق میں سر تا قدم نظر
وہ ہیں کہ اک نظر کی اجازت نہیں مجھے

آزادئ گناہ کی حسرت کے ساتھ ساتھ
آزادئ خیال کی جرأت نہیں مجھے

دوبھر ہے گرچہ جور عزیزاں سے زندگی
لیکن خدا گواہ شکایت نہیں مجھے

جس کا گریز شرط ہو تقریب دید میں
اس ہوش اس نظر کی ضرورت نہیں مجھے

جو کچھ گزر رہی ہے غنیمت ہے ہم نشیں
اب زندگی پہ غور کی فرصت نہیں مجھے

میں کیوں کسی کے عہد وفا کا یقیں کروں
اتنی شدید غم کی ضرورت نہیں مجھے

سجدے مرے خیال جزا سے ہیں ماورا
مقصود بندگی سے تجارت نہیں مجھے

میں اور دے سکوں نہ ترے غم کو زندگی
ایسی تو زندگی سے محبت نہیں مجھے

احسانؔ کون مجھ سے سوا ہے مرا عدو
اپنے سوا کسی سے شکایت نہیں مجھے

Ye to nahin kh tum se mohabbat nahin mujhe
Itna zarur hai kh shikayat nahin mujhe

Main hun kh ishtiyaq mein sar-ta-qadam nazar
Wo hain kh ek nazar ki ijazat nahin mujhe

Aazadi-e-gunah ki hasrat ke sath sath
Aazadi-e-KHayal ki jurat nahin mujhe

Dubhar hai garche jaur-e-azizan se zindagi
Lekin KHuda-gawah shikayat nahin mujhe

Jis ka gurez shart ho taqrib-e-did mein
Is hosh is nazar ki zarurat nahin mujhe

Jo kuchh guzar rahi hai ghanimat hai ham-nashin
Ab zindagi pe ghaur ki fursat nahin mujhe

Main kyun kisi ke ahd-e-wafa ka yaqin karun
Itni shadid gham ki zarurat nahin mujhe

Sajde mere KHayal-e-jaza se hain mawara
Maqsud bandagi se tijarat nahin mujhe

Main aur de sakun na tere gham ko zindagi
Aisi to zindagi se mohabbat nahin mujhe

‘Ehsan’ kaun mujh se siwa hai mera adu
Apne siwa kisi se shikayat nahin mujhe

==========

Tauba Ki Nazishon Pe Sitam Dha Ke Pi Gaya

توبہ کی نازشوں پہ ستم ڈھا کے پی گیا
پی! اس نے جب کہا تو میں گھبرا کے پی گیا

دل ہی تو ہے اٹھائے کہاں تک غم و الم
میں روز کے ملال سے اکتا کے پی گیا

تھیں لاکھ گرچہ محشر و مرقد کی الجھنیں
گتھی کو ضبط شوق کی سلجھا کے پی گیا

مے خانۂ بہار میں مدت کا تشنہ لب
ساقی خطا معاف! خطا کھا کے پی گیا

نیت نہیں خراب نہ عادی ہوں اے ندیم
آلام روزگار سے تنگ آ کے پی گیا

ساقی کے حسن دیدۂ میگوں کے سامنے
میں جلوۂ بہشت کو ٹھکرا کے پی گیا

اٹھا جو ابر دل کی امنگیں چمک اٹھیں
لہرائیں بجلیاں تو میں لہرا کے پی گیا

دل کچھ ثبوت حفظ شریعت نہ دے سکا
ساقی کے لطف خاص پہ اترا کے پی گیا

Tauba ki nazishon pe sitam Dha ke pi gaya
Pi! us ne jab kaha to main ghabra ke pi gaya

Dil hi to hai uThae kahan tak gham-o-alam
Main roz ke malal se ukta ke pi gaya

Thin lakh garche mahshar o marqad ki uljhanen
Gutthi ko zabt-e-shauq ki suljha ke pi gaya

Mai-KHana-e-bahaar mein muddat ka tishna-lab
Saqi KHata-muaf! KHata kha ke pi gaya

Niyyat nahin KHarab na aadi hun ai nadim!
Aalam-e-rozgar se tang aa ke pi gaya!

Saqi ke husn-e-dida-e-mai-gun ke samne
Main jalwa-e-bahisht ko Thukra ke pi gaya

Uttha jo abr dil ki umangen chamak uThin
Lahrain bijliyan to main lahra ke pi gaya

Dil kuchh subut-e-hifz-e-shariat na de saka
Saqi ke lutf-e-KHas pe itra ke pi gaya

==========

Pursish-e-Gham Ka Shukriya Kya Tujhe Aagahi Nahin

پرسش غم کا شکریہ کیا تجھے آگہی نہیں
تیرے بغیر زندگی درد ہے زندگی نہیں

دیکھ کے خشک و زرد پھول دل ہے کچھ اس طرح ملول
جیسے مری خزاں کے بعد دور بہار ہی نہیں

دور تھا اک گزر چکا نشہ تھا اک اتر چکا
اب وہ مقام ہے جہاں شکوۂ بے رخی نہیں

عشرت خلد کے لیے زاہد کج نظر جھکے
مشرب عشق میں تو یہ جرم ہے بندگی نہیں

تیرے سوا کروں پسند کیا تری کائنات میں
دونوں جہاں کی نعمتیں قیمت بندگی نہیں

لاکھ زمانہ ظلم ڈھائے وقت نہ وہ خدا دکھائے
جب مجھے ہو یقیں کہ تو حاصل زندگی نہیں

دل کی شگفتگی کے ساتھ راحت مے کدہ گئی
فرصت مے کشی تو ہے حسرت مے کشی نہیں

اشک رواں کی آب و تاب کر نہ عوام میں خراب
عظمت عشق کو سمجھ گریۂ غم ہنسی نہیں

عرصۂ فرقت و فراق ایسا طویل تو نہ تھا
بھول رہے ہو تم مجھے میں کوئی اجنبی نہیں

زخم پہ زخم کھا کے جی اپنے لہو کے گھونٹ پی
آہ نہ کر لبوں کو سی عشق ہے دل لگی نہیں

ایک وہ رات تھی کہ جب تھا مرے گھر وہ ماہتاب
ایک یہ رات ہے کہ اب چاند ہے چاندنی نہیں

مژدہ کہ نا مراد عشق تیری غزل کا ہے وہ رنگ
وہ بھی پکار اٹھے کہ یہ سحر ہے شاعری نہیں

Pursish-e-gham ka shukriya kya tujhe aagahi nahin
Tere baghair zindagi dard hai zindagi nahin

Dekh ke KHushk o zard phul dil hai kuchh is tarah malul
Jaise meri KHizan ke baad daur-e-bahaar hi nahin

Daur tha ek guzar chuka nasha tha ek utar chuka
Ab wo maqam hai jahan shikwa-e-be-ruKHi nahin

Ishrat-e-KHuld ke liye zahid-e-kaj-nazar jhuke
Mashrab-e-ishq mein to ye jurm hai bandagi nahin

Tere siwa karun pasand kya teri kaenat mein
Donon jahan ki nematen qimat-e-bandagi nahin

Lakh zamana zulm Dhae waqt na wo KHuda dikhae
Jab mujhe ho yaqin ki tu hasil-e-zindagi nahin

Dil ki shaguftagi ke sath rahat-e-mai-kada gai
Fursat-e-mai-kashi to hai hasrat-e-mai-kashi nahin

Ashk-e-rawan ki aab-o-tab kar na awam mein KHarab
Azmat-e-ishq ko samajh girya-e-gham hansi nahin

Arsa-e-furqat-o-firaq aisa tawil to na tha
Bhul rahe ho tum mujhe main koi ajnabi nahin

ZaKHm pe zaKHm kha ke ji apne lahu ke ghunT pi
Aah na kar labon ko si ishq hai dil-lagi nahin

Ek wo raat thi ki jab tha mere ghar wo mahtab
Ek ye raat hai ki ab chand hai chandni nahin

Muzhda ki na-murad-e-ishq teri ghazal ka hai wo rang
Wo bhi pukar uThe ki ye sehr hai shairi nahin

==========

Na Siyo Hont Na Khwabon Mein Sada Do Hum Ko

نہ سیو ہونٹ نہ خوابوں میں صدا دو ہم کو
مصلحت کا یہ تقاضا ہے بھلا دو ہم کو

جرم سقراط سے ہٹ کر نہ سزا دو ہم کو
زہر رکھا ہے تو یہ آب بقا دو ہم کو

بستیاں آگ میں بہہ جائیں کہ پتھر برسیں
ہم اگر سوئے ہوئے ہیں تو جگا دو ہم کو

ہم حقیقت ہیں تو تسلیم نہ کرنے کا سبب
ہاں اگر حرف غلط ہیں تو مٹا دو ہم کو

خضر مشہور ہو الیاس بنے پھرتے ہو
کب سے ہم گم ہیں ہمارا تو پتا دو ہم کو

زیست ہے اس سحر و شام سے بیزار و زبوں
لالہ و گل کی طرح رنگ قبا دو ہم کو

شورش عشق میں ہے حسن برابر کا شریک
سوچ کر جرم تمنا کی سزا دو ہم کو

جرأت لمس بھی امکان طلب میں ہے مگر
یہ نہ ہو اور گناہ گار بنا دو ہم کو

کیوں نہ اس شب سے نئے دور کا آغاز کریں
بزم خوباں سے کوئی نغمہ سنا دو ہم کو

مقصد زیست غم عشق ہے صحرا ہو کہ شہر
بیٹھ جائیں گے جہاں چاہو بٹھا دو ہم کو

ہم چٹانیں ہیں کوئی ریت کے ساحل تو نہیں
شوق سے شہر پناہوں میں لگا دو ہم کو

بھیڑ بازار سماعت میں ہے نغموں کی بہت
جس سے تم سامنے ابھرو وہ صدا دو ہم کو

کون دیتا ہے محبت کو پرستش کا مقام
تم یہ انصاف سے سوچو تو دعا دو ہم کو

آج ماحول کو آرائش جاں سے ہے گریز
کوئی دانشؔ کی غزل لا کے سنا دو ہم کو

Na siyo honT na KHwabon mein sada do hum ko
Maslahat ka ye taqaza hai bhula do hum ko

Jurm-e-suqraat se haT kar na saza do hum ko
Zahr rakkha hai to ye aab-e-baqa do hum ko

Bastiyan aag mein bah jaen ki patthar barsen
Hum agar soe hue hain to jaga do hum ko

Hum haqiqat hain to taslim na karne ka sabab
Han agar harf-e-ghalat hain to miTa do hum ko

Khizr mashhur ho ilyas bane phirte ho
Kab se hum gum hain hamara to pata do hum ko

Zist hai is sahar-o-sham se bezar o zubun
Lala-o-gul ki tarah rang-e-qaba do hum ko

Shorish-e-ishq mein hai husn barabar ka sharik
Soch kar jurm-e-tamanna ki saza do hum ko

Jurat-e-lams bhi imkan-e-talab mein hai magar
Ye na ho aur gunahgar bana do hum ko

Kyun na us shab se nae daur ka aaghaz karen
Bazm-e-KHuban se koi naghma suna do hum ko

Maqsad-e-zist gham-e-ishq hai sahra ho ki shahr
Baith jaenge jahan chaho biTha do hum ko

Hum chaTanen hain koi ret ke sahil to nahi
Shauq se shahr-panahon mein laga do hum ko

Bhid bazar-e-samaat mein hai naghmon ki bahut
jis se tum samne ubhro wo sada do hum ko

Kaun deta hai mohabbat ko parastish ka maqam
Tum ye insaf se socho to dua do hum ko

Aaj mahaul ko aaraish-e-jaan se hai gurez
Koi ‘Danish’ ki ghazal la ke suna do hum ko

==========

Ishq Ko Taqlid Se Aazad Kar

عشق کو تقلید سے آزاد کر
دل سے گریہ آنکھ سے فریاد کر

باز آ اے بندۂ حسن مجاز
یوں نہ اپنی زندگی برباد کر

اے خیالوں کے مکیں نظروں سے دور
میری ویراں خلوتیں آباد کر

نزع میں ہچکی نہیں آئی مجھے
بھولنے والے خدارا یاد کر

حسن کو دنیا کی آنکھوں سے نہ دیکھ
اپنی اک طرز نظر ایجاد کر

عشرت دنیا ہے اک خواب بہار
کعبۂ دل درد سے آباد کر

اب کہاں احسانؔ دنیا میں وفا
توبہ کر ناداں خدا کو یاد کر

Ishq ko taqlid se aazad kar
Dil se girya aankh se fariyaad kar

Baz aa ai banda-e-husn-e-majaz
Yun na apni zindagi barbaad kar

Ai KHayalon ke makin nazron se dur
Meri viran KHalwaten aabaad kar

Naza mein hichki nahin aai mujhe
Bhulne wale KHuda-ra yaad kar

Husn ko duniya ki aankhon se na dekh
Apni ek tarz-e-nazar ijad kar

Ishrat-e-duniya hai ek KHwab-e-bahaar
Kaba-e-dil dard se aabaad kar

Ab kahan ‘ehsan’ duniya mein wafa
Tauba kar nadan KHuda ko yaad kar

==========

Hum Se Ulfat Jatai Jati Hai

ہم سے الفت جتائی جاتی ہے
بے قراری بڑھائی جاتی ہے

دیکھ کر ان کے لب پہ خندۂ نور
نیند سی غم کو آئی جاتی ہے

غم الفت کے کارخانے میں
زندگی جگمگائی جاتی ہے

ان کی چشم کرم پہ ناز نہ کر
یوں بھی ہستی مٹائی جاتی ہے

بزم میں دیکھ رنگ آمد دوست
روشنی تھرتھرائی جاتی ہے

دیکھ اے دل وہ اٹھ رہی ہے نقاب
اب نظر آزمائی جاتی ہے

ان کے جاتے ہی کیا ہوا دل کو
شمع سی جھلملائی جاتی ہے

تیری ہر ایک بات میں احسانؔ
اک نہ اک بات پائی جاتی ہے

Hum se ulfat jatai jati hai
Be-qarari baDhai jati hai

Dekh kar un ke lab pe KHanda-e-nur
Nind si gham ko aai jati hai

Gham-e-ulfat ke kar-KHane mein
Zindagi jagmagai jati hai

Un ki chashm-e-karam pe naz na kar
Yun bhi hasti miTai jati hai

Bazm mein dekh rang-e-amad-e-dost
Raushni thartharai jati hai

Dekh ai dil wo uTh rahi hai naqab
Ab nazar aazmai jati hai

Un ke jate hi kya hua dil ko
Shama si jhilmilai jati hai

Teri har ek baat mein ‘ehsan’
Ek na ek baat pai jati hai

==========

Mil Mil Ke Doston Ne Wo Di Hai Dagha Mujhe

مل مل کے دوستوں نے وہ دی ہے دغا مجھے
اب خود پہ بھی نہیں ہے گمان وفا مجھے

اف ابتدائے شوق کی معصوم جستجو
ہر پھول تھا چمن میں ترا نقش پا مجھے

اے کھنچنے والے دیکھ مری بے پناہیاں
آتی ہے دشمنوں سے بھی بوئے وفا مجھے

دنیا تمہیں عزیز ہے میرے سوا مگر
عالم ہے نا پسند تمہارے سوا مجھے

کرتی نہیں عبور تمہیں میری جستجو
کیا کر دیا ہے تم نے یہ کیا ہو گیا مجھے

وضعاً بھی ہنس پڑا ہوں تو پھر دل سے مدتوں
آئی کراہنے کی صدا پر صدا مجھے

پھر بات بات میں ہے لچک التفات کی
کیا پھر دکھاؤ گے کوئی خواب وفا مجھے

یہ ہے فغاں کا زور تو پھر وہ چکا قفس
کر دے گی میری شعلہ نوائی رہا مجھے

کوتاہیٔ نظر سے احاطہ نہ ہو سکا
ملنے کو یوں ملا ہے بتوں میں خدا مجھے

میری وفا پہ آپ ہی چیں بر جبیں نہیں
میں خود بھی سوچتا ہوں یہ کیا ہو گیا مجھے

جس مدعائے شوق کی دریافت ہیں حضور
مایوس کر رہا ہے وہی مدعا مجھے

اک ضیق اک عذاب اک اندوہ اک تڑپ
تم نے یہ دل کے نام سے کیا دے دیا مجھے

ان کو گنوا کے حال رہا ہے یہ مدتوں
آیا خیال بھی تو بڑا غم ہوا مجھے

افلاس کے شباب مقدس میں بارہا
آیا ہے پوچھنے مرے گھر پر خدا مجھے

احسانؔ اپنے وقت پہ موت آئے گی مگر
جینے کا مشورہ نہیں دیتی فضا مجھے

Mil mil ke doston ne wo di hai dagha mujhe
Ab KHud pe bhi nahin hai guman-e-wafa mujhe

Uf ibtida-e-shauq ki masum justuju
Har phul tha chaman mein tera naqsh-e-pa mujhe

Ai khinchne wale dekh meri be-panahiyan
Aati hai dushmanon se bhi bu-e-wafa mujhe

Duniya tumhein aziz hai mere siwa magar
Aalam hai na-pasand tumhaare siwa mujhe

Karti nahin ubur tumhein meri justuju
Kya kar diya hai tum ne ye kya ho gaya mujhe

Wazan bhi hans paDa hun to phir dil se muddaton
Aai karahne ki sada par sada mujhe

Phir baat baat mein hai lachak iltifat ki
Kya phir dikhaoge koi KHwab-e-wafa mujhe

Ye hai fughan ka zor to phir wo chuka qafas
Kar degi meri shoala-nawai riha mujhe

Kotahi-e-nazar se ahata na ho saka
Milne ko yun mila hai buton mein KHuda mujhe

Meri wafa pe aap hi chin-bar-jabin nahin
Main KHud bhi sochta hun ye kya ho gaya mujhe

Jis muddaa-e-shauq ki daryaft hain huzur
Mayus kar raha hai wahi muddaa mujhe

Ek ziq ek azab ek andoh ek taDap
Tum ne ye dil ke nam se kya de diya mujhe

Un ko ganwa ke haal raha hai ye muddaton
Aaya KHayal bhi to baDa gham hua mujhe

Iflas ke shabab-e-muqaddas mein barha
Aaya hai puchhne mere ghar par KHuda mujhe

‘Ehsan’ apne waqt pe maut aaegi magar
jine ka mashwara nahin deti faza mujhe

==========

Nazar Fareb-e-Qaza Kha Gai To Kya Hoga

نظر فریب قضا کھا گئی تو کیا ہوگا
حیات موت سے ٹکرا گئی تو کیا ہوگا

بزعم ہوش تجلی کی جستجو بے سود
جنوں کی زد پہ خرد آ گئی تو کیا ہوگا

نئی سحر کے بہت لوگ منتظر ہیں مگر
نئی سحر بھی جو کجلا گئی تو کیا ہوگا

نہ رہنماؤں کی مجلس میں لے چلو مجھ کو
میں بے ادب ہوں ہنسی آ گئی تو کیا ہوگا

شباب لالہ و گل کو پکارنے والو
خزاں سرشت بہار آ گئی تو کیا ہوگا

خوشی چھنی ہے تو غم کا بھی اعتماد نہ کر
جو روح غم سے بھی اکتا گئی تو کیا ہوگا

یہ فکر کر کہ ان آسودگی کے دھوکوں میں
تری خودی کو بھی موت آ گئی تو کیا ہوگا

لرز رہے ہیں جگر جس سے کوہساروں کے
اگر وہ لہر یہاں آ گئی تو کیا ہوگا

وہ موت جس کی ہم احسانؔ سن رہے ہیں خبر
رموز زیست بھی سمجھا گئی تو کیا ہوگا

Nazar fareb-e-qaza kha gai to kya hoga
Hayat maut se Takra gai to kya hoga

Ba-zom-e-hosh tajalli ki justuju be-sud
Junun ki zad pe KHirad aa gai to kya hoga

Nai sahar ke bahut log muntazir hain magar
Nai sahar bhi jo kajla gai to kya hoga

Na rahnumaon ki majlis mein le chalo mujh ko
Main be-adab hun hansi aa gai to kya hoga

Shabab-e-lal-o-gul ko pukarne walo
Khizan-sarisht bahaar aa gai to kya hoga

KHushi chhani hai to gham ka bhi e’timad na kar
Jo ruh gham se bhi ukta gai to kya hoga

Ye fikr kar ki in aasudgi ke dhokon mein
Teri KHudi ko bhi maut aa gai to kya hoga

Laraz rahe hain jigar jis se kohsaron ke
Agar wo lahr yahan aa gai to kya hoga

Wo maut jis ki hum ‘Ehsan’ sun rahe hain KHabar
Rumuz-e-zist bhi samjha gai to kya hoga

==========

Add Comment