Most Beautiful Poetry in Urdu, Sms, 2 Lines, Ghazals

Beautiful poetry is a means of expressing one’s feelings and love in the best possible way. Send a message to your loved ones through this beautiful poetry and show how important they are to you and without them your life is incomplete. Let’s express our inner feelings through beautiful 2 lines love poetry and ghazals.

Beautiful Poetry for Love

Beautiful poetry for love

Beautiful poetry for love

فقط ایک کا ہونے میں ہی حسن بندگی ہے غالب 
جو روزقبلہ بد لتے ہے وہ بے دین ہوتے ہیں

Faqt Aik Ka Huny Ma He Husan Bandqi Ha Ghalib
Ju Roz Kibla Badalty Ha Wu Bay Deen Huty Han

♥—♥—♥—♥—♥

ڈھانپ رہی تھی وہ خود کو آنچل سے بار بار
بتاؤ رات چھپا سکی ہے کبھی حسن اپنا

Dhaamp Rahi Thi Wu Khud Ko Anchal Say Bar Bar
Batao Raat Chupa Saki Ha Kabi Hosn Apna

♥—♥—♥—♥—♥

صرف اک بار آؤ میری آنکھوں کے رستے دل میں
پھر لوٹنے کا ارادہ تم پہ چھوڑ دیں گے ہم

Sirf Aik Bar Aao Meri Ankhon Kay Rasty Dil May
Pher Lotny Ka Aarada Tum Pa Chor Day Gay Hum

♥—♥—♥—♥—♥

فرض کرو اگر فرصت میں تم کو مل جاؤں تو
حیرت میں پڑ جاؤ گے یا سینے سے لگ جاؤ گے

Farz Karu Agr Forsat Ma Tum Ko Mil Jaon Tu
Hayrat Ma Par Jao Gay Ya Sinay Sy Lag Jao Gy

♥—♥—♥—♥—♥

WAllah ki kashish thi

واللہ کیا کشش تھی کہ مت پوچھیئے صاحب
مجھ سے یہ دل لڑ پڑا، مجھے یہ شخص چاہئیے

Wallah Kia Kashas Thi Kay Mat Pochiyay Sahib
Moj Sy Ye Dil Larr Para Mojy Ye Shaks Cheyay

♥—♥—♥—♥—♥

نہ تم کو خبر ہوئی نہ زمانہ سمجھ سکا
ہم چپکے چپکے تم پہ کئی بار مر گئے

Na Tum Ko Khabar Hoi Na Zamana Samjh Saka
Hum Chupke Chupke Tum Pe Kai Baar Mar Gay

♥—♥—♥—♥—♥

روز خواب میں آتے ہیں وہ گلے ملنے
میں جو سوتا ہوں تو جاگ اٹھتی ہے قسمت میری

Roz Khawab Ma Aaty Han Wu Galy Milny
Ma Ju Soota Hu Tu Jaag Othti Ha Kismat Meri

♥—♥—♥—♥—♥

دفن کرنے سے پہلے میرا دل— نکال لینا غالب
کہیں خاک میں نہ مل جائیں میرے دل میں رہنے والے

Dafan Karny Sy Phaly Mera Dil Nakal Layna Ghalib
Kahaiyn Khak Ma Na Mel Jay Mery Dil Ma Rany Waly

♥—♥—♥—♥—♥

Beautiful poetry in urdu sms

Beautiful poetry in urdu sms

میں تم سے کچھ نہیں کہتا فقط اتنی گزارش ہے
کہ اتنی بار مل جاؤ کہ جتنا یاد آتے ہو

Ma Tum Sy Koch Nahi Kata Fakt Atni Gozarash Ha
Kh Atni Bar Mil Jao Kay Jatna Yaad Atay Hu

♥—♥—♥—♥—♥

تیری چاہت کا اتنا سا حصہ ہے میرے وجود میں
تجھے خود سے نکالو تو باقی کچھ نہیں بچتا

Tyri Chat Ka Atna Sa Hisa Ha Mery Wajood Ma
Tujy Khud Sy Nakalo Tu Baki Koch Nahi Bachta

♥—♥—♥—♥—♥

آج پھر تم پے پیا ر آیا ہے
بے حد اور بے شمار آیا ہے

Aj Pher Tum Pay Payar Aya Ha
Bay Had Or Bay Shamar Aya Ha

♥—♥—♥—♥—♥

اس میں خطرہ ہے ڈوب جانے کا
جھانکئے مت جناب آنکھوں میں

Es Ma Khatra Ha Doob Jany Ka
Jhankiyay Mat Janb Ankhoon Ma

♥—♥—♥—♥—♥

Most beautiful poetry in urdu

Most beautiful poetry in urdu

تیری چاہت کا اتنا سا حصہ ہے میرے وجود میں
تجھے خود سے نکالو تو باقی کچھ نہیں بچتا

Teri Chaat Ka etna Sa Hisa Ha Mery Wajood Ma
Tujay Khud Say Nakalo Tu Baki Koch Nahi Bachta

♥—♥—♥—♥—♥

دھڑکنیں بے قابو ہو جاتی ہیں
و ہ اِک نظر جب اٹھا کر دیکھیں

Dharknay Bey Kabo Hu Jati Han
Wu ek Nazar Jab Otha Kar Dhakayn

♥—♥—♥—♥—♥

کوئی نظر بھی اُ ٹھائے اس پے تو دل دھڑک جاتا ہے
میں اس شخص کو چاہتا ہوں اپنی آبرو کی طرح

Koi Nazar B Oothay es Pay Tu Dil Dharak Jata Ha
Ma es Shaks Ko Chata Hu Apni Aabroo Ki Tara

♥—♥—♥—♥—♥

کتنی ظالم ہوتی ہے یہ پل دو پل کی محبت
نہ چاہتے ہوئے بھی دل کو کسی کا انتظار رہتا ہے

Katni Zalim Huti Ha Ya Pal Du Pal Ki Muhabat
Na Chatay Huway B Dil Ko Kisi Ka entaazr Rata Ha

♥—♥—♥—♥—♥

اس نے کہا کونسا تحفہ تمہیں میں دوں
میں نے کہا وہ شام جو اب تک ادھار ہے

Es Nay Kaha Konsa Tufa Tumy Ma Doon
Ma Ny Kaha Wu Sham Ju Ab Tak Odar Ha

♥—♥—♥—♥—♥

نزاکت لے کے آنکھوں میں وہ اس کا دیکھنا توبہ
الہیٰ ہم انہیں دیکھیں یا ان کا دیکھنا دیکھیں

Nazakat Lay Kay Ankhoon Ma Wu es Ka Dhakna Tuba
Elahi Hum Unay Dakhayn Ya en Ka Dakhna Dhakayn

♥—♥—♥—♥—♥

Beautiful Sad Poetry in Urdu

Beautiful sad poetry in urdu

Beautiful sad poetry in urdu

سکون اور عشق وہ بھی دونوں ایک ساتھ
رہنے دو غالبؔ کوئی عقل کی بات کرو

Shakoon Or Ishiq Wu B Duno Aik Sat
Rany Du Ghalib Kui Aakal Ki Bat Karu

♥—♥—♥—♥—♥

کانٹوں سے کیا گلہ وہ تو مجبور ہیں اپنی فطرت سے
درد تو تب ہوا جب پھول بھی زخم دینے لگے

Kanton Se Kia Gila Wu Tu Majboor Han Apni Fitrat Say
Dard Tu Tab Huwa Jab Phool Be Zakham Deny Lagy

♥—♥—♥—♥—♥

وہ مجھ سے بچھڑ کر اب تک رویا نہیں غالبؔ
کوئی تو ہے ہمدرد جو اسے رونے نہیں دیتا

Woh Moj Sy Bichra Kr Ab Tak Roya Nahi Ghalib
Kui Tu Ha Hamdard Ju esay Rony Nahi Dyta

♥—♥—♥—♥—♥

سیاہ رات میں جلتے ہیں جگنوؤں کى طرح
دلوں کے زخم بھی محسن کمال ہوتے ہیں

Seha Raat Ma Jaltay Han Jugnon Ki Tara
Dilon Ka Zakham Be Mohsin Kamal Huty Han

♥—♥—♥—♥—♥

ٹوٹ سا گیا ہے میری چاہتوں کا وجود
اب کوئی اچھا بھی لگے تو میں اظہار نہیں کرتا

Toot Sa Gaya Ha Meri Chatoon Ka Wajood
Ab Kui Acha B Lagy Tu Ma ezhaar Nahi Krta

♥—♥—♥—♥—♥

Muhbat ki duniya mein mehboob jab lahasil ho

محبت کی دنیا میں محبوب جب لا حاصل ہو
انسان مر تو جاتا ھے مگر موت نہیں آتی

Muhabat Ki Dunya Ma Mehaboob Ja La Hasil Hu
ensaan Mar Tu Jata Ha Magr Moot Nahi Aati

♥—♥—♥—♥—♥

چل پڑی ہے دُعائیں عرش کی جانب
تم بس میرے ہونے کی تیاری کرو

Chal Pari Duayn Arsh Ki Janib
Tum Bas Mery Huny Ki Tiyari Karu

♥—♥—♥—♥—♥

محفلِ عشق پے جما رکھا ہے امیروں نے قبضہ
غربت نہ ہوتی تو دل ہما رے پاس بھی کمال کا تھا

Mahfil Ishiq Pa Jama Rakha Ha Ameeron Nay Kabza
Gorbat Na Huti Tu Dil Hamary Pass B Kamal Ka Tha

♥—♥—♥—♥—♥

اگر نیند آجائے تو سو بھی لیا کرو
راتوں کو جا گنے سے بچھڑے لوٹا نہیں کرتے

Agr Neend Aa Jay Tu So B Liya Karu
Ratoon Ko Jaagny Sy Bichray Lota Nahi Karty

♥—♥—♥—♥—♥

مجھے منظور ہے گلیوں میں تماشا ہونا
شرط یہ کہ گلیاں میرے دلدار کی ہوں

Mojy Manzoor Ha Galiyoon Ma Tamasha Huna
Shart Ye Ha Ka Galyiaan Mery Dildaar Ki Hun

♥—♥—♥—♥—♥

Beautiful Face Poetry in Urdu

Beautiful girl face poetry

Beautiful girl face poetry

چاند آج یوں رو برو ہے میرے
جیسے وہ بے نقاب بیٹھی ہو

Chand Aj Yoon Ro Baro Ha Mery
Jasay Wu Bay Nakab Bathi Hu

♥—♥—♥—♥—♥

آنکھوں کا ہے فریب یا رعکس جمال ہے
آتی ہے کیوں نظر اسکی صورت جگہ جگہ

Ankhoon Ka Ha Farayb Ya Rakss Jamal Ha
Ati Ha Kio Nazar eski Soorat Jaga Jaga

♥—♥—♥—♥—♥

زلیخا کے عشق نے یہ راز کھولا ہے
صنم حسیں ہو تو نیت بدل ہی جاتی ہے

Zulakha Kay Ishiq Nay Ya Raaz Khola Ha
Sanam Haseen Hu Tu Niyat Badal He Jati Ha

♥—♥—♥—♥—♥

تیرے چہرے کے نقش ایسے ہیں
نظر اُ ٹھاتا ہوں بھٹک جا تا ہوں

Tery Chary Kay Naksh Asay Han
Nazar Othata Hun Bhatak Jata Hun

♥—♥—♥—♥—♥

جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کہ رات دن
بیٹھے رہیں تصور جاناں کیے ہوئے

G Dhonta Ha Pher Wuhi Forsat Ka Rat Den
Bathy Rayn Tasawar Janana Kiay Huwy

♥—♥—♥—♥—♥

Tere chehry ke naksh aisy hain

دل کی ضد ہو تم ورنہ
ان آنکھوں نے بہت لوگ دیکھے ہیں

Dil Ki Zidd Hu Tum Warna
en Ankhoon Nay Bhot Log Dhaky Han

♥—♥—♥—♥—♥

دھڑکنیں بے قابو ہو جاتی ہیں
و ہ اِک نظر جب اٹھا کر دیکھیں

Dharknay Bay Kabo Hu Jati Han
Wu ek Nazar Jab Otha Kar Dhakayn

♥—♥—♥—♥—♥

حسن ہی لے ڈوبا تھا فقط یوسفؑ کو
بھلا پیغمبر بھی بازاروں میں بکا کرتے ہیں

Hosan He Lay Duba Tha Fakt Yosaf(A) Ko
Bhala Pagambar B Bazaron Ma Bika Krty Han

♥—♥—♥—♥—♥

پھر غلط فہمیوں میں ڈال دیا
مسکرانا کوئی ضروری تھا

Pher Ghalat Fhamioon Ma Daal Diya
Moskrana Kui Zrori Tha

♥—♥—♥—♥—♥

وہ آئے بزم میں، اتنا تو میرؔ نے دیکھا
پھر اُسکے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی

Woh Aay Bazam Ma Atna Tu Mir Ne Dakha
Pher Osky Bad Charagoon Ma Roshni Na Rahi

♥—♥—♥—♥—♥

Beautiful Ghazals

Kamal Husan Hai Husan Kamal Se Bahir

کمال حسن ہے حسن کمال سے باہر
ازل کا رنگ ہے جیسے مثال سے باہر

تو پھر وہ کون ہے جو ماورا ہے ہر شے سے
نہیں ہے کچھ بھی یہاں گر خیال سے باہر

یہ کائنات سراپا جواب ہے جس کا
وہ اک سوال ہے پھر بھی سوال سے باہر

ہے یاد اہل وطن یوں کہ ریگ ساحل پر
گری ہوئی کوئی مچھلی ہو جال سے باہر

عجیب سلسلۂ رنگ ہے تمنا بھی
حد عروج سے آگے زوال ہے باہر

نہ اس کا انت ہے کوئی نہ استعارہ ہے
یہ داستان ہے ہجر و وصال سے باہر

دعا بزرگوں کی رکھتی ہے زخم الفت کو
کسی علاج کسی اندمال سے باہر

بیاں ہو کس طرح وہ کیفیت کہ ہے امجدؔ
مری طلب سے فراواں مجال سے باہر

امجد اسلام امجد

♥—♥—♥—♥—♥

Hasti Apni Habab Ki Si Hai

ہستی اپنی حباب کی سی ہے
یہ نمائش سراب کی سی ہے

نازکی اس کے لب کی کیا کہیے
پنکھڑی اک گلاب کی سی ہے

بار بار اس کے در پہ جاتا ہوں
حالت اب اضطراب کی سی ہے

میں جو بولا کہا کہ یہ آواز
اسی خانہ خراب کی سی ہے

میر ان نیم باز آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے

میر تقی میر

♥—♥—♥—♥—♥

Chehry Pe Mery Zulf Ko Phelao Kisi Din

چہرے پہ مرے زلف کو پھیلاؤ کسی دن
کیا روز گرجتے ہو برس جاؤ کسی دن

رازوں کی طرح اترو مرے دل میں کسی شب
دستک پہ مرے ہاتھ کی کھل جاؤ کسی دن

پیڑوں کی طرح حسن کی بارش میں نہا لوں
بادل کی طرح جھوم کے گھر آؤ کسی دن

خوشبو کی طرح گزرو مری دل کی گلی سے
پھولوں کی طرح مجھ پہ بکھر جاؤ کسی دن

گزریں جو میرے گھر سے تو رک جائیں ستارے
اس طرح مری رات کو چمکاؤ کسی دن

میں اپنی ہر اک سانس اسی رات کو دے دوں
سر رکھ کے مرے سینے پہ سو جاؤ کسی دن

امجد اسلام امجد

♥—♥—♥—♥—♥

Bazam Shehnshah Mein Ashaar Ka Dafter Khula

بزم شاہنشاہ میں اشعار کا دفتر کھلا
رکھیو یا رب یہ در گنجینۂ گوہر کھلا

شب ہوئی پھر انجم رخشندہ کا منظر کھلا
اس تکلف سے کہ گویا بت کدے کا در کھلا

گرچہ ہوں دیوانہ پر کیوں دوست کا کھاؤں فریب
آستیں میں دشنہ پنہاں ہاتھ میں نشتر کھلا

گو نہ سمجھوں اس کی باتیں گو نہ پاؤں اس کا بھید
پر یہ کیا کم ہے کہ مجھ سے وہ پری پیکر کھلا

ہے خیال حسن میں حسن عمل کا سا خیال
خلد کا اک در ہے میری گور کے اندر کھلا

منہ نہ کھلنے پر ہے وہ عالم کہ دیکھا ہی نہیں
زلف سے بڑھ کر نقاب اس شوخ کے منہ پر کھلا

در پہ رہنے کو کہا اور کہہ کے کیسا پھر گیا
جتنے عرصے میں مرا لپٹا ہوا بستر کھلا

کیوں اندھیری ہے شب غم ہے بلاؤں کا نزول
آج ادھر ہی کو رہے گا دیدۂ اختر کھلا

کیا رہوں غربت میں خوش جب ہو حوادث کا یہ حال
نامہ لاتا ہے وطن سے نامہ بر اکثر کھلا

اس کی امت میں ہوں میں میرے رہیں کیوں کام بند
واسطے جس شہہ کے غالبؔ گنبد بے در کھلا

غالب

♥—♥—♥—♥—♥

Read More: Love Poetry in Urdu Sms

Add Comment