Full Attitude Poetry in Urdu 2 Lines for Boys, Girls Images

میری محبت میں اور تیری فطرت میں فرق صرف اتنا ہے
تیرا غرور نہیں جاتا ، اور مجھے جھکنا نہیں آتا

Meri Muhabat Mein Aur Teri Fitrat Mein Faraq Sirf Itna Hai
Tera Groor Nahi Jaat, Aur Mujhy Chukna Nhi Aata

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

حقیقتوں سے سب کی واقف ہوں میں
بس جھوٹ سننے کے لیے خاموش رہتا ہوں

Haqiton Se Sab Ki Waqif Hon Mein
Bas Ghoot Sunne Ke Ley Khamoosh Rehta Hon

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

بہت ہی منفرد ہے یہ محبت سارے کھیلوں میں
جو ہارا پھر نہیں کھیلا جو جیتا اس نے توبہ کی

Bahot Hi Mujfarid Hai Ye Muhabat Sary Khilon Mein
Jo Haara Phir Nahi Khila Jo Jeeta Us Ne Tuba Ki

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

دل کہتا ہے، بے وفا ہی تو تھا، معاف کر دو
دماغ کہتا ہے، تیری بربادی کا تماشا چاہیے

Dil Kehta Ha, Bewafa Hi Tu Tha, Muaf Ker Do
Dimagh Kehta Ha, Teri Barbadi Ka Tamash Chahy

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

اتنا حیران نہ ہو میری انا پر پیارے
عشق میں بھی کئی خوددار نکل آتے ہیں

Itna Heran Na Ho Meri Ana Per Piyary
Ishq Mein Bhi Kain Khudar Nikal Aaty Hain

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

مجھے دشمن سے بھی خودداری کی امید رہتی ہے
کسی کا بھی ہو قدموں میں سر اچھا نہیں لگتا

Mujhy Doshman Se Bhi Khudari Ki Umeed Rehti Hai
Kisi Ka Bhi Ho Qadmon Mein Sar Acha Nahi Lagta

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

ہماری پہچان ہمارے تلخ لہجے سے ہوتی ہے
جھوٹ موٹ کی ڈرامے بازیاں ہم نہیں کرتے

Hamari Pehchan Hamary Talakh Lehjy Se Hoti Hai
Ghot Moot Ki Daramy Bazian Ham Nahi Kerty

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

تھوڑا مختلف ہی سہی لیکن اتنا بھی پیچیدہ نہیں مزاج ہمارا
جو سمجھ گیا پُرخلوص ٹھہرے جو نہ سمجھے تو مغرور ٹھہرے

Tura Mukhtlif Hi Sahi Lekan Itna Bhi Pacheeda Nahi Mizaj Hamara
Jo Samjh Gia Purkhlus Thery Ju Na Samjhy Tu Maghroor Thery

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

جتنا زوال سہنا تھا ، سہ لیا
اب تاریخ لکھی جائے گی اپنے عُروج کی

Jitna Zawal Sehna Tha Seh Leya
Ab Tareekh Likhi Jay Gi Apny Urooj Ki

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

لفظوں کی بناوٹ ہمیں نہیں آتی
ہم ان کے لیے انمول ہیں جو ہمیں سمجھتے ہیں

Lafzon Ki Banawat Hamain Nahi Aati
Ham Un Ke Ley Anmool Hain Jo Hamin Samjhty Hain

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

چُپ غلط فیصلہ کرا دے گی
بولیے ورنہ مسئلہ ہوگا

Chup Ghalat Faisla Kera De Gi
Buley Warna Masla Ho Ga

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

عشق ایک کھیل ہے شطرنج سے ملتا جلتا
مات ہو سکتی ہے اگر ذہن میں چال آجائے

Ishq Ik Khel Hain Shatranj Se Milta Julta
Maat Ho Sakti Hai Agr Zehan Mein Chaal Aa Jay

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

ہماری پہچان تو آگ کی طرح ہے
جہاں سے گُزرتے ہیں لوگ جل جاتے ہیں

Hamari Pehchan Tu Aag Ki Tarha Hai
Jahan Se Guzrty Hain Log Jal Jate Hain

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

میں اور التجائے غم آپ سے کروں
یہ بھیک اس کو دیجئے جس کا خدا نہ ہو

Mein Aur Iltaja-e-Gham App Se Keron
Ye Bhik Us Ko Deejy Jis Ka Khuda Na Ho

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

یہ سارے پارسا چہرے میری تسبیح کے دانے ہیں
نظر سے گرتے رہتے ہیں عبادت ہوتی رہتی ہے

Ye Sare Parsa Chehry Meri Tasbih Ke Dany Hain
Nazar Se Guzraty Rehty Hain Ibadat Hoti Rehti Hai

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

گنہگار تو شاید مانگ لیں معافی
حساب پارساؤں کا مشکل ہوگا

Ghunahgar Tu Shahi Mang Lain Maufi
Hisam Parsaon Ka Mushkil Ho Ga

∗∗—–∗∗∗∗∗—–∗∗

5 Comments

  1. jawad
  2. Sana Arshad
    • Muhammad usman
    • Hafiz Haroon
  3. Waseem Mustafa

Add Comment