Anwar Masood Famous Ghazals, Poems, Funny Poetry

Anwar Masood is a famous comedian poet who is very popular for his artistic poetry. Apart from funny poetry, he has also discussed various topics. Like romantic poetry, nature poetry, political poetry etc. His poetry is read and heard in various artistic and literary programs. Some of his famous poems and ghazals are presented.

Famous Ghazals

Anwar Masood Famous Poetry

Agle Din Kuchh Aise Honge

اگلے دن کچھ ایسے ہوں گے
چھلکے پھلوں سے مہنگے ہوں گے

ننھی ننھی چیونٹیوں کے بھی
ہاتھی جیسے سائے ہوں گے

بھیڑ تو ہوگی لیکن پھر بھی
سونے سونے رستے ہوں گے

پھول کھلیں گے تنہا تنہا
جھرمٹ جھرمٹ کانٹے ہوں گے

لوگ اسے بھگوان کہیں گے
جس کی جیب میں پیسے ہوں گے

ریت جلے گی دھوپ میں انورؔ
برف پہ بادل چھائے ہوں گے

Agle din kuchh aise honge
Chhilke phalon se mahnge honge

Nannhi nannhi chiyunTiyon ke bhi
Hathi jaise sae honge

Bhid to hogi lekin phir bhi
Sune sune raste honge

Phul khulenge tanha tanha
JhurmuT jhurmuT kanTe honge

Log use bhagwan kahenge
Jis ki jeb mein paise honge

Rit jalegi dhup mein ‘Anwar’
Barf pe baadal chhae honge

===========

Ab Kahan Aur Kisi Chiz Ki Ja Rakkhi Hai

اب کہاں اور کسی چیز کی جا رکھی ہے
دل میں اک تیری تمنا جو بسا رکھی ہے

سر بکف میں بھی ہوں شمشیر بکف ہے تو بھی
تو نے کس دن پہ یہ تقریب اٹھا رکھی ہے

دل سلگتا ہے ترے سرد رویے سے مرا
دیکھ اس برف نے کیا آگ لگا رکھی ہے

آئنہ دیکھ ذرا کیا میں غلط کہتا ہوں
تو نے خود سے بھی کوئی بات چھپا رکھی ہے

جیسے تو حکم کرے دل مرا ویسے دھڑکے
یہ گھڑی تیرے اشاروں سے ملا رکھی ہے

مطمئن مجھ سے نہیں ہے جو رعیت میری
یہ مرا تاج رکھا ہے یہ قبا رکھی ہے

گوہر اشک سے خالی نہیں آنکھیں انورؔ
یہی پونجی تو زمانے سے بچا رکھی ہے

Ab kahan aur kisi chiz ki ja rakkhi hai
Dil mein ek teri tamanna jo basa rakkhi hai

Sar-ba-kaf main bhi hun shamshir-ba-kaf hai tu bhi
Tu ne kis din pe ye taqrib uTha rakkhi hai

Dil sulagta hai tere sard rawayye se mera
Dekh is barf ne kya aag laga rakkhi hai

Aaina dekh zara kya main ghalat kahta hun
Tu ne KHud se bhi koi baat chhupa rakkhi hai

Jaise tu hukm kare dil mera waise dhaDke
Ye ghaDi tere ishaaron se mila rakkhi hai

Mutmain mujh se nahin hai jo raiyat meri
Ye mera taj rakha hai ye qaba rakkhi hai

Gauhar-e-ashk se KHali nahin aankhen ‘Anwar’
Yahi punji to zamane se bacha rakkhi hai

===========

Is Ibtida Ki Saliqe Se Intiha Karte

اس ابتدا کی سلیقے سے انتہا کرتے
وہ ایک بار ملے تھے تو پھر ملا کرتے

کواڑ گرچہ مقفل تھے اس حویلی کے
مگر فقیر گزرتے رہے صدا کرتے

ہمیں قرینۂ رنجش کہاں میسر ہے
ہم اپنے بس میں جو ہوتے ترا گلا کرتے

تری جفا کا فلک سے نہ تذکرہ چھیڑا
ہنر کی بات کسی کم ہنر سے کیا کرتے

تجھے نہیں ہے ابھی فرصت کرم نہ سہی
تھکے نہیں ہیں مرے ہاتھ بھی دعا کرتے

انہیں شکایت بے ربطی سخن تھی مگر
جھجک رہا تھا میں اظہار مدعا کرتے

چقیں گری تھیں دریچوں پہ چار سو انورؔ
نظر جھکا کے نہ چلتے تو اور کیا کرتے

Is ibtida ki saliqe se intiha karte
Wo ek bar mile the to phir mila karte

KiwaD garche muqaffal the us haweli ke
Magar faqir guzarte rahe sada karte

Hamein qarina-e-ranjish kahan mayassar hai
Hum apne bas mein jo hote tera gila karte

Teri jafa ka falak se na tazkira chheDa
Hunar ki baat kisi kam-hunar se kya karte

Tujhe nahin hai abhi fursat-e-karam na sahi
Thake nahin hain mere hath bhi dua karte

Unhen shikayat-e-be-rabti-e-suKHan thi magar
Jhijak raha tha main izhaar-e-muddaa karte

Chiqen giri thin darichon pe chaar su ‘Anwar’
nazar jhuka ke na chalte to aur kya karte

===========

Kyun Kisi Aur Ko Dukh Dard Sunaun Apne

کیوں کسی اور کو دکھ درد سناؤں اپنے
اپنی آنکھوں سے بھی میں زخم چھپاؤں اپنے

میں تو قائم ہوں ترے غم کی بدولت ورنہ
یوں بکھر جاؤں کہ خود ہاتھ نہ آؤں اپنے

شعر لوگوں کے بہت یاد ہیں اوروں کے لیے
تو ملے تو میں تجھے شعر سناؤں اپنے

تیرے رستے کا جو کانٹا بھی میسر آئے
میں اسے شوق سے کالر پر سجاؤں اپنے

سوچتا ہوں کہ بجھا دوں میں یہ کمرے کا دیا
اپنے سائے کو بھی کیوں ساتھ جگاؤں اپنے

اس کی تلوار نے وہ چال چلی ہے اب کے
پاؤں کٹتے ہیں اگر ہاتھ بچاؤں اپنے

آخری بات مجھے یاد ہے اس کی انورؔ
جانے والے کو گلے سے نہ لگاؤں اپنے

Kyun kisi aur ko dukh dard sunaun apne
Apni aankhon se bhi main zaKHm chhupaun apne

Main to qaem hun tere gham ki badaulat warna
Yun bikhar jaun ki KHud hath na aaun apne

Sher logon ke bahut yaad hain auron ke liye
Tu mile to main tujhe sher sunaun apne

Tere raste ka jo kanTa bhi mayassar aae
Main use shauq se collar par sajaun apne

Sochta hun ki bujha dun mein ye kamre ka diya
Apne sae ko bhi kyun sath jagaun apne

Us ki talwar ne wo chaal chali hai ab ke
Panw kaTte hain agar hath bachaun apne

AaKHiri baat mujhe yaad hai us ki ‘Anwar’
Jaane wale ko gale se na lagaun apne

===========

Kab Talak Yun Dhup Chhanw Ka Tamasha Dekhna

کب تلک یوں دھوپ چھاؤں کا تماشا دیکھنا
دھوپ میں پھرنا گھنے پیڑوں کا سایا دیکھنا

ساتھ اس کے کوئی منظر کوئی پس منظر نہ ہو
اس طرح میں چاہتا ہوں اس کو تنہا دیکھنا

رات اپنے دیدۂ گریاں کا نظارہ کیا
کس سے پوچھیں خواب میں کیسا ہے دریا دیکھنا

اس گھڑی کچھ سوجھنے دے گی نہ یہ پاگل ہوا
اک ذرا آندھی گزر جائے تو حلیہ دیکھنا

کھل کے رو لینے کی فرصت پھر نہ اس کو مل سکی
آج پھر انورؔ ہنسے گا بے تحاشا دیکھنا

Kab talak yun dhup chhanw ka tamasha dekhna
Dhup mein phirna ghane peDon ka saya dekhna

Sath us ke koi manzar koi pas-e-manzar na ho
Is tarah main chahta hun us ko tanha dekhna

Raat apne dida-e-giryan ka nazzara kiya
Kis se puchhen KHwab mein kaisa hai dariya dekhna

Is ghadi kuchh sujhne degi na ye pagal hawa
Ek zara aandhi guzar jae to huliya dekhna

Khul ke ro lene ki fursat phir na us ko mil saki
Aaj phir ‘anwar’ hansega be-tahasha dekhna

===========

Famous Poems

Kya Bachche Suljhe Hote Hain

کیا بچے سلجھے ہوتے ہیں
جب گیند سے الجھے ہوتے ہیں

وہ اس لیے مجھ کو بھاتے ہیں
دن بیتے یاد دلاتے ہیں

وہ کتنے حسین بسیرے تھے
جب دور غموں سے ڈیرے تھے

جو کھیل میں حائل ہوتا تھا
نفرین کے قابل ہوتا تھا

ہر اک سے الجھ کر رہ جانا
رک رک کے بہت کچھ کہہ جانا

ہنس دینا باتوں باتوں پر
برسات کی کالی راتوں پر

بادل کی سبک رفتاری پر
بلبل کی آہ و زاری پر

اور شمع کی لو کی گرمی پر
پروانوں کی ہٹ دھرمی پر

دنیا کے دھندے کیا جانیں
آزاد یہ پھندے کیا جانیں

معصوم فضا میں رہتے تھے
ہم تو یہ سمجھ ہی بیٹھے تھے

خوشیوں کا الم انجام نہیں
دنیا میں خزاں کا نام نہیں

ماحول نے کھایا پھر پلٹا
ناگاہ تغیر آ جھپٹا

اور اس کی کرم فرمائی سے
حالات کی اک انگڑائی سے

آ پہنچے ایسے بیڑوں میں
جو لے گئے ہمیں تھپیڑوں میں

بچپن کے سہانے سائے تھے
سائے میں ذرا سستائے تھے

وہ دور مقدس بیت گیا
یہ وقت ہی بازی جیت گیا

اب ویسے مرے حالات نہیں
وہ چیز نہیں وہ بات نہیں

جینے کا سفر اب دوبھر ہے
ہر گام پہ سو سو ٹھوکر ہے

وہ دل جو روح قرینہ تھا
آشاؤں کا ایک خزینہ تھا

اس دل میں نہاں اب نالے ہیں
تاروں سے زیادہ چھالے ہیں

جو ہنسنا ہنسانا ہوتا ہے
رونے کو چھپانا ہوتا ہے

کوئی غنچہ دل میں کھلتا ہے
تھوڑا سا سکوں جب ملتا ہے

غم تیز قدم پھر بھرتا ہے
خوشیوں کا تعاقب کرتا ہے

میں سوچتا رہتا ہوں یوں ہی
آخر یہ تفاوت کیا معنی

یہ سوچ عجب تڑپاتی ہے
آنکھوں میں نمی بھر جاتی ہے

پھر مجھ سے دل یہ کہتا ہے
ماضی کو تو روتا رہتا ہے

کچھ آہیں دبی سی رہنے دے
کچھ آنسو باقی رہنے دے

یہ حال بھی ماضی ہونا ہے
اس پر بھی تجھے کچھ رونا ہے

Kya bachche suljhe hote hain
Jab gend se uljhe hote hain

Wo is liye mujh ko bhate hain
Din bite yaad dilate hain

Wo kitne hasin basere the
Jab dur ghamon se Dere the

Jo khel mein hail hota tha
Nafrin ke qabil hota tha

Har ek se ulajh kar rah jaana
Ruk ruk ke bahut kuchh kah jaana

Hans dena baaton baaton par
Barsat ki kali raaton par

Baadal ki subuk-raftari par
Bulbul ki aah-o-zari par

Aur shama ki lau ki garmi par
Parwanon ki haT-dharmi par

Duniya ke dhande kya jaanen
Aazad ye phande kya jaanen

Masum faza mein rahte the
Hum to ye samajh hi baiThe the

Khushiyon ka alam anjam nahin
Duniya mein KHizan ka nam nahin

Mahaul ne khaya phir palTa
Nagah taghayyur aa jhapTa

Aur us ki karam-farmai se
Haalat ki ek angDai se

Aa pahunche aise beDon mein
Jo le gae hamein thapeDon mein

Bachpan ke suhane sae the
Sae mein zara sustae the

Wo daur-e-muqaddas bit gaya
Ye waqt hi bazi jit gaya

Ab waise mere haalat nahin
Wo chiz nahin wo baat nahin

Jine ka safar ab dubhar hai
Har gam pe sau sau Thokar hai

Wo dil jo ruh-e-qarina tha
Aashaon ka ek KHazina tha

Is dil mein nihan ab nale hain
Taron se ziyaada chhaale hain

Jo hansna hansana hota hai
Rone ko chhupana hota hai

Koi ghuncha dil mein khilta hai
Rhoda sa sukun jab milta hai

Gham tez qadam phir bharta hai
Khushiyon ka taaqub karta hai

Main sochta rahta hun yunhi
Aakhir ye tafawut kya mani

Ye soch ajab tadpati hai
Aaankhon mein nami bhar jati hai

Phir mujh se dil ye kahta hai
Mazi ko tu rota rahta hai

Kuchh aahen dabi si rahne de
Kuchh aansu baqi rahne de

Ye haal bhi mazi hona hai
Is par bhi tujhe kuchh rona hai

===========

Chhupe Hain Ashk Darwazon Ke Pichhe

چھپے ہیں اشک دروازوں کے پیچھے
چھتوں نے سسکیاں ڈھانپی ہوئی ہیں

دکھوں کے گرد دیواریں چنی ہیں
بظاہر مختلف شکلیں ہیں سب کی

مگر اندر کے منظر ایک سے ہیں
بنی آدم کے سب گھر ایک سے ہیں

Chhupe hain ashk darwazon ke pichhe
Chhaton ne siskiyan Dhanpi hui hain

Dukhon ke gird diwaren chuni hain
Ba-zahir muKHtalif shaklen hain sab ki

Magar andar ke manzar ek se hain
Bani-adam ke sab ghar ek se hain

===========

Funny Poems

Apni Zoja Ke Ta’aruf Mai Kaha Ik Shakhs Ne

اپنی زوجہ كے تعارف میں کہا اک شخص نے
دِل سے ان کا معترف ہوں میں زبانی ہی نہیں

چائے بھی اچھی بناتی ہے میری بیگم مگر
منه بنانے میں تو ان کا کوئی ثانی ہی نہیں

Apni Zoja Ke Ta’aruf Mai Kaha Ik Shakhs Ne
Dil Se Un Ka Mo’taraf Hun Main Zabani Hi Nahi

Chaye Bi Achi Banati Hai Mri Begham Mgr
Munh Bnane Mein Tu Un Ka Koi Saani Hi Nahi

===========

Yahi To Dosto Le De Ke Mera Business Hai

یہی تو دوستو لے دے کے میرا بزنس ہے
تمہیں کہو کہ میں کیوں اس سے توڑ لوں ناطہ

کروں گا کیا جو کرپشن بھی چھوڑ دی میں نے
مجھے تو اور کوئی کام بھی نہیں آتا

Yahi to dosto le de ke mera business hai
Tumhin kaho ki main kyun is se toD lun nata

Karunga kya jo corruption bhi chhoD di main ne
Mujhe to aur koi kaam bhi nahin aata

===========

Un Ke Baghair Fasl-e-Bahaaran Bhi Bargriz

ان کے بغیر فصل بہاراں بھی برگ ریز
وہ ساتھ بیٹھ جائیں تو رکشا بھی مرسڈیز

یہ باہمی کشش کا کرشمہ ہے دوستو
رشوت ہمیں عزیز ہے رشوت کو ہم عزیز

Un ke baghair fasl-e-bahaaran bhi bargriz
Wo sath baiTh jaen to rickshaw bhi mercedes

Ye bahami kashish ka karishma hai dosto
Rishwat hamein aziz hai rishwat ko hum aziz

===========

Main Ne Kaha Kh Aap Ne Rok Liya Hai Kyun Hamein

میں نے کہا کہ آپ نے روک لیا ہے کیوں ہمیں
اس نے کہا تم ایسی بات اپنی زباں پہ لائے کیوں

تم تو ہو صرف آدمی ہم ہیں پولس کے آدمی
بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم کوئی گزر کے جائے کیوں

Main ne kaha kh aap ne rok liya hai kyun hamein
Us ne kaha tum aisi baat apni zaban pe lae kyun

Tum to ho sirf aadmi hum hain police ke aadmi
BaiThe hain rahguzar pe hum koi guzar ke jae kyun

===========

Sar Dard Mein Goli Ye Badi Zud Asar Hai

سر درد میں گولی یہ بڑی زود اثر ہے
پر تھوڑا سا نقصان بھی ہو سکتا ہے اس سے

ہو سکتی ہے پیدا کوئی تبخیر کی صورت
دل تنگ و پریشان بھی ہو سکتا ہے اس سے

ہو سکتی ہے کچھ ثقل سماعت کی شکایت
بیکار کوئی کان بھی ہو سکتا ہے اس سے

ممکن ہے خرابی کوئی ہو جائے جگر میں
ہاں آپ کو یرقان بھی ہو سکتا ہے اس سے

پڑ سکتی ہے کچھ جلد خراشی کی ضرورت
خارش کا کچھ امکان بھی ہو سکتا ہے اس سے

ہو سکتی ہیں یادیں بھی ذرا سی متائثر
معمولی سا نسیان بھی ہو سکتا ہے اس سے

بینائی کے حق میں بھی یہ گولی نہیں اچھی
دیدہ کوئی حیران بھی ہو سکتا ہے اس سے

ہو سکتا ہے لاحق کوئی پیچیدہ مرض بھی
گردہ کوئی ویران بھی ہو سکتا ہے اس سے

ممکن ہے کہ ہو جائے نشہ اس سے ذرا سا
پھر آپ کا چالان بھی ہو سکتا ہے اس سے

Sar-dard mein goli ye badi zud-asar hai
Par thoDa sa nuqsan bhi ho sakta hai is se

Ho sakti hai paida koi tabKHir ki surat
Dil tang-o-pareshan bhi ho sakta hai is se

Ho sakti hai kuchh saql-e-samaat ki shikayat
Be-kar koi kan bhi ho sakta hai is se

Mumkin hai KHarabi koi ho jae jigar mein
Han aap ko yarqan bhi ho sakta hai is se

Pad sakti hai kuchh jild-KHarashi ki zarurat
Kharish ka kuchh imkan bhi ho sakta hai is se

Ho sakti hain yaaden bhi zara si mutaassir
Mamuli sa nisyan bhi ho sakta hai is se

Binai ke haq mein bhi ye goli nahin achchhi
Dida koi hairan bhi ho sakta hai is se

Ho sakta hai lahaq koi pechida maraz bhi
Gurda koi viran bhi ho sakta hai is se

Mumkin hai ki ho jae nasha is se zara sa
Phir aap ka chaalan bhi ho sakta hai is se

===========

Read More: Funny Poetry in Urdu

Add Comment