Ahmad Faraz Poetry in Urdu on Life Love 2 lines, Ghazals

Ahmed Faraz is one of the most popular poets of Pakistan. He worked on love, pain, life and revolutionary poetry. He was born on 12 January 1931 and died on 25 August 2008. He was jailed for government criticism and self-imposed exile. His poetry became very popular among the younger generation. Like one of his couplet became very popular Tum takaluf ko bhi ikhlaq samjhty ho Faraz, Dost hota nhi her hath milany wala. Here is a list of best Ahmad Faraz poetry in Urdu.

Ahmad Faraz 2 Lines Poetry

Ahmad Faraz Love Poetry

Ahmad Faraz Love Poetry

سنا ہے اس کے بدن کی تراش ایسی ہے
کہ پھول اپنی قبائیں کتر کے دیکھتے ہیں

Suna hay uss kay badan ki tarash aaisi hay
Kay phool apni qabain kutar kay dekhty han

♥—♥—♥—♥—♥

اس کی آنکھوں کو کبھی غور سے دیکھا ہے فراز
رونے والوں کی طرح جاگنے والوں جیسی

Iss ki aankhon ko kabhi ghor say dekha hay faraz
Rony walon ki tarah jagny walon jesi

♥—♥—♥—♥—♥

میں آنے والے زمانوں سے ڈر رہا ہوں فراز
کہ میں نے دیکھی ہیں آنکھیں اُداس لوگوں کی

Main aany waly zamano say dar raha hoon faraz
Kay main nay dekhi han aankhain udas logon ki

♥—♥—♥—♥—♥

Ahmad Faraz Sad Poetry

Ahmad Faraz Sad Poetry

چلا تھا ذکر زمانے کی بے وفائی کا
سو آ گیا ہے تمہارا خیال ویسے ہی

Chala tha zikar zamany ki bewafai ka
So aa gia hay tumhara khiyal wasy hi

♥—♥—♥—♥—♥

اب اور کیا کسی سے مراسم بڑھائیں ہم
یہ بھی بہت ہے تجھ کو اگر بھول جائیں ہم

Ab aur kiya kisi say marasam barrhain ham
Ye bhi buhat hai tujh ko agar bhool jain haam

♥—♥—♥—♥—♥

بندگی ہم نے چھوڑ دی ہے فراز
کیا کریں جب لوگ خُدا ہو جائیں

Bandagi ham nay choor di hai faraz
Kiya karain jab log khuda ho jain

♥—♥—♥—♥—♥

Deep Ahmad Faraz Poetry

Deep Ahmad Faraz Poetry

میں وہاں ہوں جہاں جہاں تم ہو
تم کروگے کہاں کہاں سے گریز

Main wahan hoon jahan jahan tum ho
Tum karo gey kahan kahan say guraiz

♥—♥—♥—♥—♥

کس کس کو بتائیں گے جُدائی کا سبب ہم
تو مُجھ سے خفا ہے تو زمانے کے لئے آ

Kis kis ko batain gain judai ka sabab ham
Tu mujh say khafa hai tu zamanay ka liye aa

♥—♥—♥—♥—♥

اُسے ہم یاد آتے ہیں فقط فُرصت کے لمحوں میں
مگر یہ بات بھی سچ ہے اُسے فُرصت نہیں مِلتی

Usay haam yaad aatay hain faqt fursat kay lamhon main
Magar ye baat bhi sach hai usay fursat nahi milti

♥—♥—♥—♥—♥

Ahmad Faraz Poetry in Urdu

Ahmad Faraz Poetry in Urdu

تُم تُکلف کو بھی اِخلاص سمجھتے ہو فرازؔ
دوست ہوتا نہیں ہر ہاتھ مِلانے والا

♥—♥—♥—♥—♥

نہ منزلوں کو نہ ہم رہ گزر کو دیکھتے ہیں
عجب سفر ہے کہ بس ہمسفر کو دیکھتے ہیں

Na manzalon ko na ham rahguzar ko dekhty hain
Ajab safar hai kay bas hamsafar ko dekhty hain

♥—♥—♥—♥—♥

ہم کو اچھا نہیں لگتا کوئی ہم نام تیرا
کوئی تُجھ سا ہو تو پھر نام بھی تُجھ سا رکھے

Ham ko acha nahi lagta koi ham naam tera
Koi tujh sa ho tu phir naam bhi tujh sa rakhy

♥—♥—♥—♥—♥

گٌزر گۓ کٸ موسم کٸ رٌتیں بدلیں
اٌداس تٌم بھی ہو یارو اٌداس ہم بھی ہیں

Guzar gaye kai mausam kai ruttain badlin
Udas tum bhi ho yaro udas ham bhi hain

♥—♥—♥—♥—♥

یہ سال بھی اچھا تھا کہ یاروں کی طرف سے
کٌچھ اب کے نٕۓ زخم بھی سوغات میں آۓ

Ye saal bhi acha tha key yaroon ki taraf say
Kuch ab kay naye zakhm bhi soghat main aaye

♥—♥—♥—♥—♥

Mery sabar ki inteha kia puchty ho

میرے صبر کی انتہا کیا پو چھتے ہو فراز
وہ مجھ سے لپٹ کے رویا کسی اور کے لیے

Meray sabar ki intiha kiya puchatay ho faraz
Wo mujh say lipat kay roya kisi aur ka liye

♥—♥—♥—♥—♥

ہم نہ ہوں گے تو کِسی اور کے چرچے ہوں گے
خلقتِ شہر تو کہنے کو فسانے مانگے

Ham na hoon gaay tu kisi aur kay chrchay hoon gaay
Khaqat e shehar tu kehnay ko fasanay mangay

♥—♥—♥—♥—♥

پیام آئے ہیں اُس یارِ بے وفا کے مُجھے
جِسے قرار نہ آیا کہیں بھُلا کے مُجھے

Piyam aaye haan us yaar e bewafa kay mujhay
Jisay qarar na aya kahin bhula kay mujhay

♥—♥—♥—♥—♥

نہ میرے زخم کھُلے ہیں نہ تیرا رنگِ حِنا
اَب کے موسم ہی نہیں آئے گُلابوں والے

Na mery zakham khulay haan na tera rang e hina
Ab kay mausam hi nahi aaye gulabon walay

♥—♥—♥—♥—♥

بے رُخی تو نے بھی کی ہے ، عُذرِزمانہ کر کے
ہم بھی محفل سے اُٹھ آئے ہیں بہانہ کر کے

Bay-rukhi tu nay bhi ki hai uzar-e-zamana kar kay
Ham bhi mehfil say uth aaye hain bahana kar kay

♥—♥—♥—♥—♥

Kisi ko ghar se niklty hi mil gai manzil

کِسی کو گھر سے نِکلتے ہی مِل گٸ منزل
کوئی ہماری طرح عٌمر بھر سفر میں رہا

Kisi ko ghar say nikalty hi mil gai manzil
Koi hamari tarah umer bhar safar main raha

♥—♥—♥—♥—♥

زندگی سے یہی گِلہ ہے مُجھے
تو بہت دیر سے ملا ہے مجھے

Zindagi say yahi gila hay mujhy
Tu buhat dair say mila hay mijhy

♥—♥—♥—♥—♥

ایسی تاریکیاں آنکھوں میں بسی ہیں فراز
رات تو رات ہےہم دِن کو جلاتے ہیں چراغ

Aisi tareekiyan aankhon main basi haan faraz
Raat tu raat hay ham din ko jalaty haan charagh

♥—♥—♥—♥—♥

دوست بن کر بی نہیں ساتھ نبھانے والا
وہی انداز ہے ظالم کازمانے والا

Dost ban kar bhi nahi sath nibhany wala
Wahi andaz hay zalim ka zamany wala

♥—♥—♥—♥—♥

ہُوا ہے تُجھ سے بچھڑنے کے بعد یہ معلوم
کہ تُو نہیں تھا، تیرے ساتھ ایک دُنیا تھی

Huwa hay tujh say bicharrny kay baad yeh maloom
Kay tu nahi tha tery sath aik dunya thi

♥—♥—♥—♥—♥

Ahmad Faraz Poetry in Hindi Urdu

Ahmad Faraz Poetry in Hindi Urdu

کون کس کے ساتھ کتنا مخلص ہے فراز
وقت ہر شخص کی اوقات بتا دیتا ہے

Kon kis kay sath kitna mukhlas ha faraz
Waqt har shahks ki auqat bata deta hay

♥—♥—♥—♥—♥

تو سامنے ہے تو پھر کیوں یقین نہیں آتا
یہ بار بار جو آنکھوں کو مل کے دیکھتے ہیں

Tu samny hay tu phir kiyun yaqeen nahi aata
Yeh bar bar jo aankon ko mal kay dethty han

♥—♥—♥—♥—♥

کچھ تو مرے پندارِمحبت کا بھرم رکھ
تُو بھی تو کبھی مجھ کو منانے کے لیے آ

Kuch tu mery pindar e muhabbat ka bharam rakh
Tu bhi tu kabhi mujh ko manany ka liye aa

♥—♥—♥—♥—♥

آنکھ سے دور نہ ہو دل سے اتر جائے گا
وقت کا کیا ہے گزرتا ہے گزر جائے گا

Aankh say dur na ho dil say utar jaye ga
Waqt ka kiya hay guzarta hay guzar jaye ga

♥—♥—♥—♥—♥

Jo chal sako to koi aisi chal chal jana

جو چل سکو تو کوئی ایسی چال چل جانا
مُجھے گُماں بھی نہ ہو اور تُم بدل جانا

Jo chal sako tu koi aisi chaal chal jana
Mujhy guman bhi na ho aur tum badl jana

♥—♥—♥—♥—♥

دل کو تیری چاہت یہ بھروسہ بھی بہت ہے
اور تجھ سے بچھڑ جانے کا ڈر بھی نہیں جاتا

Dil ko teri chahat pay bharosa bhi buhat hay
Aur tujh say bichade jane ka dar bhi nahi jata

♥—♥—♥—♥—♥

تیرے ہوتے ہوئے آجاتی تھی ساری دنیا
آج تنہا ہوں توکوئی نہیں آنے والا

Tery hoty huay aa jati thi sari duniya
Aaj tanha hoon tu koi nahi aany wala

♥—♥—♥—♥—♥

تو اپنی شیشہ گری کا ہنر نہ کر ضائع
میں آئنیہ ہوں مجھے ٹوٹنے کی عادت ہے

Tu apni sheesha gari ka hunar na kar zaya
Main aaina hoon mujhy tootny ki aadat hay

♥—♥—♥—♥—♥

خود کو ترے معیار سے گھٹ کر نہیں دیکھا
جو چھوڑ گیا اس کو پلٹ کر نہیں دیکھا

Khud ko teray mayar say ghat kar nahi dekha
Jo chorr gia us ko palat kar nahi dekha

♥—♥—♥—♥—♥

ہزار بار مرنا چاہا ، نِگاہوں میں ڈوب کر ہم نے فرازؔ
وہ نِگاہیں جُھکا لیتی ہے، ہمیں مرنے نہیں دیتی

Hazar baar marna chaha nigahon main doob kar ham nay faraz
Wo nigahain jhuka leti hay, hamain marnay nahi deti

♥—♥—♥—♥—♥

کیوں گِلہ ہم سے ہو کِسی کو فرازؔ
ہم تو اپنے بھی ہو نہیں پائے

Kiyun gila ham say ho kisi ko faraz
Ham tu apnay bhi ho nahi paye

♥—♥—♥—♥—♥

بہت دِنوں سےنہیں ہےکُچھ اُس کی خیر خبر
چلو فرازؔ کوئے یار چل کے دیکھتے ہیں

Buhat dino say nahi hai kuch us ki khair khabar
Chalo faraz kuway yaar chall kay dekhtay hain

♥—♥—♥—♥—♥

آج اِک اور برس بیت گیا اس کے بغیر
جس کے ہوتے ہُوئے ہوتے تھے زمانے میرے

Aaj ik aur baras beet giya us kay baghair
Jis kay hoty huwy hotay thay zamany mery

♥—♥—♥—♥—♥

قربتیں لاکھ خوبصورت ہوں
دوریوں میں بھی دل کشی ہے ابھی

Qubtain lakh khubsort hon
Durion mien bhi dil kashi hai abhi

♥—♥—♥—♥—♥

Ahmad Faraz Best Ghazals 

Ranjish Hi Sahi, Dil Hi Dhukhany Ke Ley Aa

رنجش ہی سہی، دل ہی دُکھانے کے لیئے آ
آ پھر سے مجھے چھوڑ کے جانے کے لیے آ

کچھ تو میرے پندارِ محبت کا بھرم رکھ
تُو بھی تو کبھی مُجھ کو منانے کے لیے آ

پہلے سے مراسم نہ سہی، پھر بھی کبھی تو
رسم و رہِ دنیا ہی نِبھانے کے لیے آ

کس کس کو بتائیں گے جُدائی کا سبب ہم
تُو مجھ سے خفا ہے تو زمانے کے لیے آ

اِک عمر سے ہوں لذتِ گریہ سے بھی محروم
اے راحتِ جاں! مجھ کو رُلانے کے لیے آ

اب تک دل خوش فہم کو تجھ سے ہیں اُمیدیں
یہ آخری شمعیں بھی بُجھانے کے لیے آ

♥—♥—♥—♥—♥

Ye Umer Bhar Ki Musafat Hai Dil Bara Rakhna

خبر تھی گھر سے وہ نکلا ہے مینہ برستے میں
تمام شہر لئے چھتریاں تھا رستے میں

بہار آئی تو اک شخص یاد آیا بہت
کہ جس کے ہونٹوں سے جھڑتے تھے پھول ہنستے میں

کہاں کے مکتب و مُلّا، کہا ں کے درس و نصاب
بس اک کتابِ محبت رہی ہے بستے میں

ملا تھا ایک ہی گاہک تو ہم بھی کیا کرتے
سو خود کو بیچ دیا بے حساب سستے میں

یہ عمر بھر کی مسافت ہے دل بڑا رکھنا
کہ لوگ ملتے بچھڑتے رہیں گے رستے میں

ہر ایک در خورِ رنگ و نمو نہیں ورنہ
گل و گیاہ سبھی تھے صبا کے رستے میں

ہے زہرِ عشق، خمارِ شراب آگے ہے
نشہ بڑھاتا گیا ہے یہ سانپ ڈستے میں

جو سب سے پہلے ہی رزمِ وفا میں کام آئے
فراز ہم تھے انہیں عاشقوں کے دستے میں

♥—♥—♥—♥—♥

Ab Ke Bechry Han Tu Shahid Kabhi Khawabon Mein Melain

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں
جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں ملیں

ڈھونڈ اجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی
یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملیں

غم دنیا بھی غم یار میں شامل کر لو
نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

تو خدا ہے نہ مرا عشق فرشتوں جیسا
دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں

آج ہم دار پہ کھینچے گئے جن باتوں پر
کیا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں میں ملیں

اب نہ وہ میں نہ وہ تو ہے نہ وہ ماضی ہے فرازؔ
جیسے دو شخص تمنا کے سرابوں میں ملیں

♥—♥—♥—♥—♥

Teri Batain Hi Sunany Aay

تیری باتیں ہی سنانے آئے
دوست بھی دل ہی دکھانے آئے

پھول کھلتے ہیں تو ہم سوچتے ہیں
تیرے آنے کے زمانے آئے

ایسی کچھ چپ سی لگی ہے جیسے
ہم تجھے حال سنانے آئے

عشق تنہا ہے سرِ منزلِ غم
کون یہ بوجھ اٹھانے آئے

اجنبی دوست ہمیں دیکھ کہ ہم
کچھ تجھے یاد دلانے آئے

دل دھڑکتا ہے سفر کے ھنگام
کاش پھر کوئی بلانے آئے

اب تو رونے سے بھی دل دکھتا ہے
شاید اب ہوش ٹھکانے آئے

کیا کہیں پھر کوئی بستی اجڑی
لوگ کیوں جشن منانے آئے

سو رہو موت کے پہلو میں فراز
نیند کس وقت نہ جانے آئے

♥—♥—♥—♥—♥

Suna Hai Log Use Aankh Bhar Ke Dekhty Hain

سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
تو اس کے شہر میں کچھ دن ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے ربط ہے اسکو خراب حالوں سے
سو اپنے آپ کو برباد کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے درد کی گاہک ہے چشم ناز اسکی
سو ہم بھی اس کی گلی سے گزر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اسکو بھی ہے شعر و شاعری سے شغف
تو ہم بھی معجزے اپنے ہنر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بولے تو باتوں سے پھول جھڑتے ہیں
یہ بات ہے تو چلو بات کرکے دیکھتے ہیں

سنا ہے رات اسے چاند تکتا رہتا ہے
ستارے بام فلک سے اتر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے دن کو اسے تتلیاں ستاتی ہیں
سنا ہے رات کو جگنو ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے چشر ہیں اس کی غزال سی آنکھیں
سنا ہے اسکو ہرن دشت بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں کاکلیں اسکی
سنا ہے شام کو سائے گزر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کی سیاہ چشمگی قیامت ہے
سو اسکو سرمہ فروش آہ بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کے لبوں سے گلاب جلتے ہیں
سو ہم بہار پہ الزام دھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے آئینہ تمثال ہے جبیں اسکی
جو سادہ دل ہیں اسے بن سنور کے دیکھتے ہیں

بس اک نگاہ سے لٹتا ہے قافلہ دل کا
سو راہ روانِ تمنا بھی ڈر کے دیکھتے ہیں

رکے تو گردشیں اسکا طواف کرتی ہیں
چلے تو اسکو زمانے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

کہانیاں ہی سہی سب مبالغے ہی سہی
اگر وہ خواب ہے تو تعبیر کر کے دیکھتے ہیں

اب اسکے شہر میں ٹھہریں کہ کوچ کرجائیں
فراز آؤ ستارے سفر کے دیکھتے ہیں

♥—♥—♥—♥—♥

Guzar Gay Kai Musam Kai Rutain Badlin

گزر گئے کئی موسم کئی رتیں بدلیں
اداس تم بھی ہو یارو اداس ہم بھی ہیں
فقط تم ہی کو نہیں رنجِ چاک دامانی
جو سچ کہیں تو دریدہ لباس ہم بھی ہیں

تمہارے بام کی شمعیں بھی تابناک نہیں
میرے فلک کے ستارے بھی زرد زرد سے ہیں
تمہارے آئینہ خانے بھی زنگ آلودہ
میرے صراحی و ساغر بھی زرد زرد سے ہیں

نہ تم کو اپنے خدو خال ہی نظر آئیں
نہ میں یہ دیکھ سکوں جام میں بھرا کیا ہے
بصارتوں پہ وہ جالے پڑے کہ دونوں کو
سمجھ میں کچھ نہیں آتا کہ ماجرا کیا ہے

نہ سرو میں وہ غرورِ کشیدہ قامتی ہے
نہ قُمریوں کی اداسی میں کوئی کمی آئی
نہ کھل سکے دونوں جانب محبتوں کے گلاب
نہ شاخِ امن لیے فاختہ کوئی آئی

تمہیں بھی ضد ہے کہ مشق ستم رہے جاری
ہمیں بھی ناز کہ جور و جفا کے عادی ہیں
تمیں بھی زعم کہ مہا بھارتاں لڑیں تم نے
ہمیں بھی فخر کہ ہم کربلا کے عادی ہیں

ستم تو یہ ہے کہ دونوں مرغزاروں سے
ہوائے فتنہ و بوئے فساد آتی ہے
الم تو یہ ہے کہ دونوں کو وہم ہے کہ بہار
عدو کے خوں میں نہانے کے بعد آتی ہے

سو یہ حال ہوا اس درندگی کا اب
شکستہ دست ہو تم بھی شکستہ پاء میں بھی
سو دیکھتا ہوں تم بھی لہو لہان ہوئے
سو دیکھتے ہو سلامت کہاں رہا میں بھی

ہمارے شہروں کی مجبور بے نوا مخلوق
دبی ہوئی ہے دکھوں کے ہزار ڈھیروں میں
اب ان کی تیرہ نصیبی چراغ چاہتی ہے
یہ لوگ نصف صدی تک رہے اندھیروں میں

بہت دنوں سے ہیں ویراں رفاقتوں کے دیار
بہت اداس ہیں دیر و حرم کی دنیائیں
چلو کہ پھر سے کریں پیار کا سفر آغاز
چلو کہ پھر سے ہم ایک دوسرے کے ہو جائیں

تمہارے دیس میں آ یا ہوں اب کے دوستو
نہ ساز و نغمہ کی محفل نہ شاعری کے لئے
اگر تمہاری انا ہی کا ہے سوال تو چلو
میں ہاتھ بڑھاتا ہوں دوستی کے لئے

♥—♥—♥—♥—♥

Is Qadar Thin Shidtain Judai Ki

اس قدر مسلسل تھیں شدتیں جدائی کی
آج پہلی بار اس سے میں نے بے وفائی کی

ورنہ اب تلک یوں تھا خواہشوں کی بارش میں
یا تو ٹوٹ کر رویا یا غزل سرائی کی

تج دیا تھا کل جن کو ہم نے تیری چاہت میں
آج ان سے مجبوراً تازہ آشنائی کی

ہو چلا تھا جب مجھ کو اختلاف اپنے سے
تو نے کس گھڑی ظالم میری ہم نوائی کی

ترک کر چکے قاصد کوئے نامراداں کو
کون اب خبر لاوے شہر آشنائی کی

طنز و طعنہ و تہمت سب ہنر ہیں ناصح کے
آپ سے کوئی پوچھے ہم نے کیا برائی کی

پھر قفس میں شور اٹھا قیدیوں کا اور صیاد
دیکھنا اڑا دے گا پھر خبر رہائی کی

دکھ ہوا جب اس در پر کل فرازؔ کو دیکھا
لاکھ عیب تھے اس میں خو نہ تھی گدائی کی

♥—♥—♥—♥—♥

Ye Mein Kia Hon Use Bhol Ker Usi Ka Raha

یہ میں بھی کیا ہوں اسے بھول کر اسی کا رہا
کہ جس کے ساتھ نہ تھا ہم سفر اسی کا رہا

وہ بت کہ دشمن دیں تھا بقول ناصح کے
سوال سجدہ جب آیا تو در اسی کا رہا

ہزار چارہ گروں نے ہزار باتیں کیں
کہا جو دل نے سخن معتبر اسی کا رہا

بہت سی خواہشیں سو بارشوں میں بھیگی ہیں
میں کس طرح سے کہوں عمر بھر اسی کا رہا

کہ اپنے حرف کی توقیر جانتا تھا فرازؔ
اسی لیے کف قاتل پہ سر اسی کا رہا

♥—♥—♥—♥—♥

Shagufe Gul Ki Sada Mein Rang-e-Chaman Mein Aao

شگفت گل کی صدا میں رنگ چمن میں آؤ
کوئی بھی رت ہو بہار کے پیرہن میں آؤ

کوئی سفر ہو تمہیں کو منزل سمجھ کے جاؤں
کوئی مسافت ہو تم مری ہی لگن میں آؤ

کبھی تو ایسا بھی ہو کہ لوگوں کی بات سن کر
مری طرف تم رقابتوں کی جلن میں آؤ

وہ جس غرور اور ناز سے تم چلے گئے تھے
کبھی اسی تمکنت اسی بانکپن میں آؤ

یہ کیوں ہمیشہ مری طلب ہی تمہیں صدا دے
کبھی تو خود بھی سپردگی کی تھکن میں آؤ

ہزار مفلس سہی مگر ہم سخی بلا کے
کبھی تو تم اہل درد کی انجمن میں آؤ

ہم اہل دل ہیں ہماری اقلیم حرف کی ہے
کبھی تو جان سخن دیار سخن میں آؤ

کبھی کبھی دوریوں سے کوئی پکارتا ہے
فرازؔ جانی فرازؔ پیارے وطن میں آؤ

♥—♥—♥—♥—♥

Ik Bond Thi Laho Ki Sar Dar Tu Giri

اک بوند تھی لہو کی سر دار تو گری
یہ بھی بہت ہے خوف کی دیوار تو گری

کچھ مغبچوں کی جرأت رندانہ کے نثار
اب کے خطیب شہر کی دستار تو گری

کچھ سر بھی کٹ گرے ہیں پہ کہرام تو مچا
یوں قاتلوں کے ہاتھ سے تلوار بھی گری

♥—♥—♥—♥—♥

Read More: Faiz Ahmad Faiz Best Poetry

Add Comment